Wo Kamal e Husne Huzoor Hai

0
71
Syed Owais Raza Qadri Naats

Listen another wonderful naat Wo kamale husne huzur hai , keh guman ne naqs jahan nahin. These words are self-explanatory, saying it is the beauty of Huzoor e Pak (Sallallaho Alaihe Wasallam) which has no defect, at all. Listen naat audio online, downlad mp3 and study lyrics in Urdu.

 

Woh Kamal Husn Huzoor Hai Mp3 Download

Download This Naat (Right Click and Choose Save Link As)

 

 
 

 

Naat Lyrics in Roman:

Voh Kamal e Husan e Huzoor Hey Key Guman-e-Naqs Jahan Nahin
Yey-hi Phool Khar Sey Door Hey Yey-hi Sham’a He Kay Dhu-an Nahin

Do Jahan Kee Bahtariyan Nahe Ke Amaniye Dilo Jan Nahe
Kahu Kiya Hen Vo Jo Yaha Nahe Mager Ek Nahe Ki vo Han Nahe

Bakhuda Khuda Ka Yey-hi Hey Darr Nahen Or Koi Maffar Makkar
Jo Vahan Sey Ho Yahin Aakey Ho Jo Yahan Nahin Tou Vahan Nahin

Men Nisar Taire Kalam Per Mili Yoon To Kisi Ko Zuban Nahe
Vo Sikhan He Jisme Sukhan Na Ho vo Bayan Hen Jiska Bayan Nahe

Hen Unhe Ky Noor Sey Sub Ayan Hen Unhe Ke Jalwo Me Sub Nihaan
Baney Subha Tabishy Mehar Sy Rahe Paishe Mehar Yeh Jan Nahe

Vahi Noor e Haq Vahi Jille Rub Hen Unhi Sy Sub Hen Unhi Ka Sub
Nahe Unki Milk Main Aasman Ki Jamin Nahe Ki Jaman Nahe

Tairey Aagey Yoon Hain Dabbey Lachey Fu-saha A’rab Key Bare Bare
Koi Janey Muh Main Zuban Nahin Nahin Bulkey Jism Main Jan Nahin

Vo-hi Noor-e-Haq Vo-hi Zilley Rab Hey Unhi Sey Sab He Unhi Ka Sab
Nahin Unki Milk Main Aasman Ke Zamin Nahin Ke Zaman Nahin

Vo-hi Laa Makan Key Makin Huey Sar-e-‘Arsh Takht Nashin Huey
Vo Nabi He Jiss Key Hen Yey Makan Vo Khuda He Jiss Ka Makan Nahin

Sar-e-‘Arsh Par He Tere Guzar Dil-e-Farsh Par He Tere Nazar
Malakoot-o-Mulk Main Ko-i Shey Nahin Vo Tujh Pey A’yan Nahin

Karun Teray Nam Pey Jaan Fida Na Bas Ek Jan Do Jahan Fida
Do Jahan Sey Bhi Nahin Ji Bhara Karoon Keya Karoon Jahan Nahin

Karoon Madhey Ehle-e-Doel Raza Parrey Iss Bala Main Maire Bala
Main Gada Hun Apney Karim Ka Maira Deen Paara-e-Naan Nahin

 

Lyrics in Urdu Written:

وہ کمال حسن حضور ہے کہ گمان نقص جہاں نہیں
یہی پھول خار سے دور ہے یہی شمع ہے کہ دھواں نہیں

دو جہاں کی بہتریاں نہیں کہ امانی ٴ دل و جاں نہیں
کہو کیا ہے وہ جو یہاں نہیں مگر اک نہیں کہ وہ ہاں نہیں

میں نثار تیرے کلام پر ملی یوں تو کس کو زباں نہیں
وہ سخن ہے جس میں سخن نہ ہو وہ بیاں ہے جس کا بیاں نہیں

بخدا خدا کا یہی در ہے نہیں اور کوئی مفر مقر
جو وہاں سے ہو یہی آ کے ہو جو یہاں نہیں تو وہاں نہیں

کرے مصطفی کی اہانتیں کھلے بندوں اس پہ یہ جراتیں
کہ میں کیا نہیں ہوں محمدی ارے ہاں نہیں ارے ہاں نہیں

ترے آگے یوں ہیں دبے لچے فصحا عرب کے بڑے بڑے
کوئی جانے منہ میں زباں نہیں نہیں بلکہ جسم میں جاں نہیں

وہ شرف کہ قطع ہیں نسبتیں وہ کرم کہ سب سے قریب ہیں
کوئی کہہ دو یاس و امید سے وہ کہیں نہیں وہ کہاں نہیں

یہ نہیں کہ خلد نہ ہو وہ نکو وہ نکوئی کی بھی ہے آبرو
مگر اے مدینہ کی آرزو جسے چاہے تو وہ سماں نہیں

ہے انہیں کے نور سے سب عیاں ہے انہیں کے جلوہ میں سب نہاں
بنے صبح تابش مہر سے رہے پیش مہر یہ جاں نہیں

وہی نور حق وہی ظل رب ہے انہیں سے سب ہے انہیں کا سب
نہیں ان کی ملک میں آسماں کہ زمیں نہیں کہ زماں نہیں

وہی لامکاں کے مکیں ہوئے سر عرش تخت نشیں ہوئے
وہ نبی ہے جس کے ہیں یہ مکاں وہ خدا ہے جس کا مکاں نہیں

سر عرش پر ہے تری گزر دل فرش پر ہے تری نظر
ملکوت و ملک میں کوئی شے نہیں وہ جو تجھ پہ عیاں نہیں

کروں تیرے نام پہ جاں فدا نہ بس ایک جاں دو جہاں فدا
دو جہاں سے بھی نہیں جی بھرا کروں کیا کروڑوں جہاں نہیں

ترا قد تو نادر دہر ہے کوئی مثل ہوتو مثال دے
نہیں گل کے پودوں میں ڈالیاں کہ چمن میں سرو چماں نہیں

نہیں جس کے رنگ کا دوسرا نہ تو ہو کوئی نہ کبھی ہوا
کہو اس کو گل کہے کیا کوئی کہ گلوں کا ڈھیر کہاں نہیں

کروں مدح اہل دول رضا پڑے اس بلا میں میری بلا
میں گدا ہوں اپنے کریم کا میرا دین پارہٴ ناں نہیں

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)