Arz o samaa banay he

0
67

Arz o sama bane hain isi noor ke tufail
tarey chamak rhe hain isi noor ke tufail
gulshan hare bhare hain isi noor ke tufail
dono jahan saje hain isi noor ke tufail
is noor ka azal se abad tak he silsala
ye noor wo he jiska tarafdar he khuda
aya ke rah e rast dikhane k wastey
bandon ko unke rab se milane k wastey
bunyad but kadon ki girane k wastey
rasam o riwaj kufar mitaney k wastey
insan ko bandagi ka saleeqa sikhy ga
ye noor zulmaton ko ujale banay ga.

peygham e haq ye sare jahano ko sunay ga
keena zadon ko rashk e gulistan banay ga
her gam rehmaton ke khazane lutay ga
insan ko ye dars e akhuwat sikhay ga
de ga kuch is ada se paigham e dosti
zehnon se door ker dega sadyoun ki dushmani

guftar la jawab he kirdar be nazeer
hami sitam zadon ka yatemo ka dastageer
halka bagosh is ke hain kiya shah kiya faqeer
insan reh sakega na insan ka aseer
bhoka rahega khud wo jaha khilayga
wo apne dushmano ko gale se lagay ga

ye sahab jamal he ye sahib e kamal
khush dil he khush pasand khush khalq khush khisal
khallaq e do jahan ki he takhleeq be misal
mumkin nahin he isko kisi dor me zawal
roshan krega rashad o hidayat ke wo diye
ban jainge sabaq jo her dor ke lye

be shak yhi he ba,iss e takhleq e kainat
chamke ga iske husun se her gosha hayat
rasikh he iska qoul to sachi he her ik bat
dil me he iske reham nazar me he altifat
iske karam ki had he na koi hisab he
jis per nigah dal de wo aaftab he

aya he muflison ki himayat lye huey
mazloom o be kason ki muhabbat lye huey
ahl e gunah ke haq main shifa.at lye huey
sare jaha ke lye rehmat lye huey
hoga unki zat per quran ka nazool
wo aakhri kitab he ye aakhri Rasool. S.A.W.W
ارض و سماء بنے ہیں اسی نُور کے طُفیل
تارے چمک رہے ہیں اسی نُور کے طُفیل
گُلشن ہرے بھرے ہیں اسی نُور کے طُفیل
دونوں جہاں سجے ہیں اسی نُور کے طُفیل
اس نور کا اذل سے ابد تک ہے سِلسِلہ
یہ نور وہ ہے جس کا طرفدار ہے خُدا
آیا کہ راہِ راست دکھانے کے واسطے
بندوں کو اُن کے رب سے مِلانے کے واسطے
بنیاد بُت کدوں کی گِرانے کے واسطے
رسم و رواج کُفر مِٹانے کے واسطے
انسانوں کو بندگی کا سلیقہ سِکھائے گا
یہ نُور ظُلمتوں کو اُجالے بنائے گا
پیغام حق یہ سارے جہانوں کو سناۓ گا
کینہ ذدوں کو رشک گلستان بناۓ گا
ہر گام رحمتوں کے خزانے لٹاۓ گا
انسان کو یہ درس اخوت سکھاۓ گا
دے گا کچھ اس ادا سے پیغام دوستی
ذہنوں سے دور کردے گا صدیوں کی دشمنی
گفتار لا جواب ہے، کردار بے نظیر
ہامی ستم زدوں کا، یتیموں کا دستگیر
حلقہ بگوش اس کے کیا شاہ کیا فقیر
انسان رہ سکے گا نہ انسان کا اسیر
بھوکا رہے گا خود وہ جہاں کھلاۓ گا
وہ اپنے دشمنوں کو گلے سے لگاۓ گا
یہ صاحب جمال ہے یہ صاحب کمال
خوش دل ہے خوش پسند، خوش خلق خوش خیال
خالق دو جہاں کی تخلیق بے مثال
ممکن نہیں ہے اس کو کسی دور میں زوال
روشن کرےگا رشد و ھدایت کے وہ ديے
بن جایں گے سبق جو ہر دور کے لیۓ
بے شک یہی ہے باعث تخلیق کائنات
چمکے گا اس کے حسن سے ہر گوشۂ حیات
راسخ ہے اس کا قول تو سچی ہے ہر اک بات
دل میں ہے اس کے رحم نظر میں ہے التفات
اس کے کرم کی حد ہے نہ کوئ حساب ہے
جس پر نگاہ ڈال دے وہ آفتاب ہے
آیا ہے مفلسوں کی حمایت لیۓ ہوۓ
مظلوم و بے کسوں کی محبت لیۓ ہوۓ
اہل گناہ کے حق میں شفایت لیۓ ہوۓ
سارے جہاں کے لیۓ رحمت لیۓ ہوۓ
ہوگا ان کی ذات پر قرآن کا نزول
وہ آخری کتاب ہے یہ آخری رسول صلی للہ علیہ وسلم

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)