Naqadri e Zamana Humen Maloom Hai Magar

0
248

Na Qadri e Zamana Humen Maloom Hai Magar

 

[adsense_inserter id=”5423″]

 

پامال ہوگئے تیرے در پہ پڑے ہوئے
جیسے شجر سے ٹوٹ کے پتے گرے ہوئے

نا قدریِ زمانہ ہمیں معلوم ہے مگر
یاروں سے پھر فضول کے شکوے گلے ہوئے

محرومیوں کے بوجھ سے گردن جھکی ہوئی
ناکامیوں کی گرد سے چہرے اٹے ہوئے

شاید تمہیں خبر ہوبتائو وہ قافلے
ٹھہرے کہاں تھے بے سرو ساماں چلے ہوئے

جانے کدھر چلے گئے سارے وہ ہمسفر
ہم راہ گزر میں رہ گئے تنہا کھڑے ہوئے

Pamaal Ho Gae Tere Dar Pe Parey Huye
Jaise Shajar Se TooT Ke Pattey Gire Huye

Naqadri e Zamana Humen Maloom Hai Magar
Yaaron Se Phir Fuzool Ke Shikwe Gile Huye

MehroomioN Ke Bojh Se GardaN Jhukie Hui
NakaamioN Ki Gard Se Chehre Attey Huye

Shayad Tumhe Khabar Ho Batao Wo Qaafile
Thehrey Kahan They Besar o Saman Chale Huye

Janey Kidhar Chale Gaye Saarey Wo Hum Safar
Hum Raah Guzar Mei Reh Gaye Tanhaa Khare Huye

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

Posted in Urdu Ghazals

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)