Aks e Khushboo Hoon Bikharne Se Na Roke Koi

0
268
parveen shakir poetry

Aks e Khushbu Parveen Shakir

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

aks e khushboo hoon bikharne se na roke koi
or bikhar jaun to mujh ko na sametey koi

kanp uthti hun main ye soch ke tanhai me
meray chehrey pe tera nam na parh le koi

jis tarha khawab meray ho gae reza reza
is tarha se na kabhi toot ke bikhre koi

main to us din se harasan hun ke jab hukm miley
khushk phoolon ko kitabon me na rakhe koi

ab to is rah se wo shakhs guzarta bhi nahi
ab kis umeed pe darwaze se jhanke koi

koi aahat, koi awaz, koi chap nahi
dil ki gallian bari sunsan hen aye koi

 

Aks e Khushboo Hoon Parveen Shakir:

عکسِ خوشبو ہوں،بکھرنے سے نہ روکے کوئی
اور بِکھر جاؤں تو مجھ کو نہ سمیٹے کوئی
کانپ اُٹھتی ہوں مَیں یہ سوچ کے تنہائی میں
میرے چہرے پہ ترا نام نہ پڑھ لے کوئی
جس طرح خواب مرے ہوگئے ریزہ ریزہ
اِس طرح سے نہ کبھی ٹُوٹ کے بکھرے کوئی
میں تو اُس دِن سے ہراساں ہوں کہ جب حُکم ملے
خشک پُھولوں کی کتابوں میں نہ رکھے کوئی
اب تو اس راہ سے شخص گزرتا بھی نہیں
اب کس اُمید پہ دروازے سے جھانکے کوئی
کوئی آہٹ ،کوئی آواز ،کوئی چاپ نہیں
دل کی گلیاں بڑی سنسان ہیں__آئے کوئی

 
[adsense_inserter id=”3100″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)