Marne Se Bhi Pehle Mar Gaye The

0
211
parveen shakir poetry

Marne Se Bhi Pehle Mar Gaye The Ghazal by Parveen Shakir

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

MARNE SE BHI PAHLE MAR GAYE THE
JEENE SE KUCHH AISE DAR GAYE THE
RASTE ME JAHAAN TALAK DIYAY THE
SAARE MERE HUM-SAFAR GAYE THE
AANKHEN ABHI KHUL NAHI SAKI THIN
AUR KHAAB MERE BIKHAR GAYE THE
JAB TAK NA KHILA THA US KA WAADA
MAUSAM MERE BE SAMAR GAYE THE
GARDAAB SE BACHNE WAALON KI SAMT
SAAHIL SE KAYI BHANVAR GAYE THE
“Q”
AB TAK WOHI NASHSHA E PAZIRAAYI
KAL KHAAB MEN US KE GHAR GAYE THE
MILTA NA THA WAAPASI KA RASTA
KYA JAANIYE HUM KIDHAR GAYE THE

 

Marne Se Bhi Pehle Mar Gaye The Ghazal in Urdu

مرنے سے بھی پہلے مر گۓ تھے.
جینے سے کچھ ایسے ڈر گۓ تھے
راستے میں جہاں تلک دیے تھے
سارے میرے ہمسفر گیے تھے
آنکھیں ابھی کھل نہیں سکی تھیں
اور خواب میرے بکھر گیے تھے
جب تک نہ کھلا تھا اس کا وعدہ
موسم میرے بے ثمر گیے تھے
گرداب سے بچنے والوں کی سمت
ساحل سے کئ بھنور گیۓ تھے
‘کیوں’
اب تک وہی نشۂ پزیرائ
کل خواب میں اس کے گھر گیۓ تھے
ملتا نہ تھا واپسی کا راستہ
کیا جانیے ہم کدھر گیۓ تھے

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)