Aankhon Mein Sawaal The Hazaron

0
117
parveen shakir poetry

Aankhon Mein Sawaal The Hazaron by Parveen Shakir

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

IK UMAR KE BAAD US KO DEKHA
AANKHON MEIN SAWAAL THEY HAZARON
HONTON PE MAGAR WOHI TABASUM
CHEHREY PE LIKHI HUYI UDAASI
LEHJEY MEIN MAGAR BALAA KA THEHRAO
AWAZ MAIN GOONJTI JUDAI
BAANHEN THI MAGAR WISAAL-E-SAMAAN
SIMTTI HUYI BAAZUYON MEIN
TAA DER MEIN SOCHTI RAHI THI
KIS ABR-E-GUREZ PAA KI TARAH
MAIN KIS SHAJAR SE KATT GAYI THI
KIS CHAAON KO TARK KAR DIYA THA
MAIN US KE GALEY LAGI HUYI THI
WOH PONCHH RAHA THA MERE AANSU
LEKIN BARRI DAIR HO CHUKI THI………!

Aankhon Mein Sawaal The Hazaron in Urdu

ایک عمر کے بعد اس کو دیکھا !
آنکھوں میں سوال تھے ہزاروں
ہونٹوں پے مگر وہی تبسم !
چہرے پے لکھی ہوئی اداسی
آواز میں گونجتی جدائی
بانہیں تھیں مگر وصل سماں !
سمٹی ہوئ بازوؤں میں
تا دیر میں سوچتی رہی تھی
کس ابر گریز پا کی طرح
میں کس شجر سے کٹ گئ تھی
کس چھاؤں کو ترک کر دیا تھا
میں اس کے گلے لگی ہوئ تھی
وہ پونچھ رہا تھا میرے آنسو
لیکن بڑی دیر ہو چکی تھی

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)