Bheeni Suhani Subhu Mein Thankdak Jigar Ki

0
51

 

 

Bheeni Suhani Suba’h Main Thandak Jigar Ki He
Kaliyaa.N Khilin Dilon Ki Hawa Ye Kidher Ki He.

Khubti Hui Nazar Mai Adaa Kis Saher Ki He
Chubhti Hui Jigar mei Sadaa Kis Gajar Ki He.

Daley Hari Hari He To Baley Bhari Bhari
Kishte Umal Pari He Ye Barish Kidher Ki He.

Ham Jaye Aur Qadam Se Lipat Ker Haram Kahe
Sonpaa Khuda Ko Ye Azmat Kis Safar Ki He.

Ham Girdey Kaba Phirte They Kal Tak Aur Aaj Woh
Ham Par Nisar Hai Ye Iradat Kidh’ar Ki He.

Kalik Jabee.N Ki Sajdaye Dar Se Churhauo gey
Mujh Ko Bhee Le Chalo Ye Tamanna Hajar Ki He.

Doba Huwa Hai Shooq Mei Zam Zam Aur Aankh se
Jhaale Baras Rahey Hai Ye Hasrat Kidher Ki He.

Barsa Ke Jane Walon Pe Ghouhar Karun Nisar
Abrey Karam Se Arz Ye Mizaabey Zar Ki He.

Aagoshe Shouq Kholey He Jin Ke Liye Hatem
Woh Phir Ke Dekhtey Nahi Ye Dhun Kidher Ki He.

Haa’n Haa’n Rahe Madina Hai Ghafil Zara Tu Jaag
Wo Paav Rakhne Waley Ye Jaa Chashmo Sar Ki He.

Waru Qadam Qadam Pa Kay Har Dam He Janey Nao
Ye Raahey Jaa.N Fiza Meere Moula Ke Dar Ki He.

Ghariya Gini Hen Barso Ke Ye Shubh Ghadi Phiri
Mar Mar Ke Phir Ye Sil Mere Seene Se Sar Ki He.

Allaho Akbar Apne Qadam Aur Ye Khake Pak
Hasrat Malai’ka Ko Jahaan Waz’ye Sar Ki He.

Me’raj Ka Sama He Kaha Pahonchey Zae’roo
Kursi Se Onchi Kursi Usi Pak Ghar Ki He.

Ushhaq Rouza Sajde Mai Suye Haram Jhuke
Allah Janta Hai Ke Niyyat Kidher Ki He.

Ye Ghar Ye Dar He Uska Jo Ghar Dar Se Pak He
Muzhdah Ho Be-Gharo Kay Salaa Achchey Ghar Ki He.

Mehbobe Rabbe Arsh He is Sabz Qubba Mein
Pehlu Mei Jalwa Gah Ateeqo Umar Ki He.

Chaye Malaika He Lagataar He Duroud
Badley Hen Pahre Badli Mei Barish Durar Ki He

Sa’dayn Ka Qiran He Pahluy Maah Main
Jhurmat Kiye Hai Taarey Tajalli Qamar Ki He.

Sattar Hazar Subah Mein Sattar Hazaar Shaam
Yun Bandagiye Zulfo Rukh Aatho Pahar Ki He.

Jo Ek Baar Aye Dobara Na Ayenge
Rukhsat Hi Bargah Se Bas Is Qadar Ki He.

Tarpa Karey Badal Ke Phir Aana Kaha Naseeb
Bey Hukm Kab Majaal Parinde ko Par ki He.

Ay Waye Bekasiy Tamanna Ke Ab Umeed
Din Ko Na Shaam Ki Hai Na Shab Ko Saher Ki He

Ye Badliya.N Na ho To Karooro.N ki Aas Jaye
Aur Bargahe Marhamate Aaam Tar Ki He.

Masoom Ko He Umar Main Sirf Ek Bar Bar
Aasi Parey Rahe To Sila Umr Bhar Ki He.

Zinda Rahe To Hazriye Baargaah Naseeb
Mar Jaye To Hayatey Abad Aysh Ghar Ki He.

Moflis Aur Aesey Dar Se Phirey Be-Ghani Huve
Chandi Har Ek Tarah To Yaha Gadiya Gar Ki He.

Jana Pe Takiya Khak Nihali He Dil Nihal
Han Be-Nawa’o Khoob Ye Sorat Guzar Ki H.

He Chatro Takht Saya-e Dewaaro Khaake Dar
Shaho Ko Kab Naseeb Ye Dhaj Karro Far Ki He.

Iss Pak Ku Mei Khak Ye Basar Sar-Ba-Khaak He,
Samjhe Hai Kuch Yahi Jo Haqiqat Basar Ki He.

Kyo Tajdaro! Khwuab Mei Dheki Kabi Ye Shai
Jo Aaj Jholiyo mei Gadhayaane Dar Ki He.

Jaaru-kasho Main Chehre Likhey Hai Mulook Ke
Wo Bhi Kaha Naseeb Faqat Naam Bhar Ki He.

Taiba Main Mar Ke Thande Chaley Jaav Aankhey Bandh
Seedhi Sadak Ye Shahre Shafa’at Nagar Ki He.

Aesi Bhi Hai Chahitey Ye Taiba Hai Zahido!
Makkah Nahi Ke Jaanch Jaha Khair O Shar Ki He.

Shaane Jamal Taiba Jana Hai Naf’a Mahaz
Wus’at Jalale Makka Mei Soodo Zar Ki He.

Kaba H Beshak Anjum-Aara Dulhan Magar
Saari Bahar Dhulhano Mei Dulha Ke Ghar Ki He.

Kaba Dhulhan He Turbate At-har Nayi Dulhan
Ye Rashk E Aftaab Wo Gairat Qamar Ki He.

Dono Bani Sajeeli Aneeli Bani Magar,
Jo Pe’ Ke Pas Hai Wo Suhagan Kun’war Ki He.

Sar Sabze Wasl Ye He Siya Poshey Hijar Wo
Chamki Dupaton Se He Jo Haalat Jigar Ki He.

Men Wo Shuma To Kya Ke Khaleel-e-Jaleel Ko
Kal Dhekna Ki Unse Tamanna Nazar Ki He.

Apna Sharaf Dua Se Hai Baki Raha Kabool
Ye Jane Unke Haath Mei Kunji Asar Ki He.

Jo Chahey Unse Maang Ki Dono Jaha’n Ki Khair
Zar Na Khareda Ek Kaneez Unke Ghar Ki He.

Roomi Ghulam Din Habshi Bandiya.N Shab’e
Ginti Kaneez Zaado Mei Shaamo Sahar Ki he.

itna Ajab Bulandiye Jannat Pe Kisliye
Dekha Nahi Ke Bheek Ye Kis Unchey Ghar Ki He.

Arshe Bari Pe Kyo Na Ho Firdous Ka Dimagh
Utri Huvi Shabeeh Tere Baamo Dar Ki He.

Wo Khuld Jismain Utregi Abrar Ki Baraat
Adna Nichawar Uss Mere Dulha Ke Sar Ki He.

Amber Zamee.N, Abeer Huwa Mashke-Tar Gubaar
Adna Si Ye Shanaakhat Teri Rahguzar Ki He.

Sarkar Hum Gawaro Main Tarze Adab Kaha
Humko To Bas Tameez Yahi Bheek Bhar Ki He.

Mangen ge Mangen Jayenge Muh Mangi Payenge
Sarkar Main Na LAA Hai Na Hajat Agar Ki He.

Uff Be-Hayayi’aa Ke Ye Muh Aur Tere Huzoor
Ha Tu Kareem He Teri Khu’ Dar Guzar Ki He.

Tujh Se Chupaun Muh To Karu Kiske Samne
Kya Aur Bhi Kisi Se Tawaqqo Nazar Ki He.

Jaavu Kaha Pukaru Kisey Kiska Muh Taku
Kia Pursish Aur Ja’ Bhi Sagey Be-Hunar Ki Hai.

Bab -e-At’a To Ye Hai Jo Bahka Idhar Udhar
Kaisi Kharaabi Uss Nagharey Dar-Ba-Dar Ki He.

Aabad Ek Dar Hai Tera Aur Tere Siwa
Jo Bargah Dekhiye Ghairat Khandar ki He.

Lab Wa Hai Aankhey Bandh Hai Phayle He Jholiyan
Kitne Mazey Ki Bheek Tere Paak Dar Ki He.

Gheraa Andheriyon Ne Duh’ee Hai Chand Ki
Tanha Hu Kaali Raat Hai Manzil Khatar Ki He.

Kismat Mei Laakh Pech Ho Sau Bal Hazaar Kaj
Ye Sari Ghutthi Ik Teri Seedhi Nazar Ki He.

Aisi Bandhi Naseb Khuley Mushkiley Khuli
Dono Jahan Main Dhoom Tumhari Kamar Ki He.

Jannat Na Dey Na Dey Teri Ruyat Ho Khair Se,
Is Ghul Ke Aagey Kisko Hawas Bargho Bar Ki He.

Sharbat Na Dey Na Dey Tu Karey Baat Lutf Se
Ye Shahad Ho To Phir Kisey Parwa Shakar Ki He.

Men khana-Zaad Kohna Hu Surat Likhi Huwi
Bando Kanezo Main Mere Madar Pedar Ki He.

Mangta Ka Haath Uth-te Hi Daata Ki Dayn Thi
Doori Qubool O Arz Main Bas Haath Bhar Ki He.

Sanki Wo, Dekh Baad’e Shafat Ki De Hawa,
Ye Aabru Raza Terey Daman-e-Tar ki He

بھینی سہانی صبح میں ٹھنڈک جگر کی ہے
کلیاں کھلیں دلوں کی ہوا یہ کدھر کی ہے
کھبتی ہوئی نظر میں ادا کی سحر کی ہے
چبھتی ہوئی جگر میں صدا کس گجر کی ہے
ڈالیں ہری ہری ہیں تو بالیں بھری بھری
کشت امل پری ہے یہ بارش کدھر کی ہے
ہم جائیں اور قدم سے لپٹ کر حرم کہے
سونپا خدا کو تجھ کو یہ عظمت سفر کی ہے
ہم گرد کعبہ پھرتے تھے کل تک اور آج وہ
ہم پر نثار ہے یہ ارادت کدھر کی ہے
کالک جبیں کی سجدہئ در سے چھڑاؤ گے
مجھ کو بھی لے چلو یہ تمنا حجر کی ہے
ڈوبا ہوا ہے شوق میں زمزم اور آنکھ سے
جھالے برس رہے ہیں یہ حسرت کدھر کی ہے
برسا کے جانے والوں پہ گوہر کروں نثار
ابر کرم سے عرض یہ میزاب زر کی ہے
آغوش شوق کھولے ہے جن کے لئے حطیم
وہ پھر کے دیکھتے نہیں یہ دھن کدھر کی ہے
ہاں ہاں رہ مدینہ ہے غافل ذرا تو جاگ
او پاؤں رکھنے والے یہ جاء چشم و سر کی ہے
واروں قدم قدم پہ کہ ہر دم ہے جان نو
یہ راہ جانفزاء میرے مولیٰ کے در کی ہے
گھڑیاں گنی ہیں برسوں کی یہ شب گھڑی پھری
مر مر کے یہ سل میرے سینے سے سر کی ہے
اﷲ اکبر اپنے قدم اور یہ خاک پاک
حسرت ملائکہ کو جہاں وضع سر کی ہے
معراج کا سماں ہے کہاں پہنچے ہو زائرو !
کرسی سے اونچی کرسی اسی پاک در کی ہے
عشاق روضہ سجدہ میں سوئے حرم جھکے
اﷲ جانتا ہے کہ نیت کدھر کی ہے
یہ گھر یہ در ہے اس کا جو گھر در سے پاک ہے
مژدہ ہو بے گھرو کہ صلا اچھے گھر کی ہے
محبوب رب عرش ہے اس سبز قبہ میں
پہلو میں جلوہ گاہ عتیق و عمر کی ہے
چھائے ملائکہ ہیں لگاتار ہے درود
بدلے میں پہرے بدلی میں بارش دورر کی ہے
سعدین کا قران ہے پہلوئے ماہ میں
جھرمٹ کیے ہیں تارے تجلی قمر کی ہے
ستر ہزار صبح ہیں ستر ہزار شام
یوں بندگیء زلف و رخ آٹھوں پہر کی ہے
جو ایک بار آئے دوبارہ نہ آسکے
رخصت ہی بارگاہ سے بس اس قدر کی ہے
تڑپا کریں بدل کے پھر آنا کہاں نصیب
بے حکم کب مجال پرندے کو پر کی ہے
اے وائے بےکسی تمنا کہ اب امید
دن کو نہ شام کی ہے نہ شب کو سحر کی ہے
یہ بدلیاں نہ ہوں تو کروڑوں کی آس جائے
اور بارگاہ مرحمت عام تر کی ہے
معصوموں کو ہے عمر میں صرف ایک بار بار
عاصی پڑے رہیں تو صلاء عمر بھر کی ہے
زندہ رہیں تو حاضری بارگاہ نصیب
مر جائیں تو حیات ابد عیش گھر کی ہے
مفلس اور ایسے در سے پھرے بے غنی ہوئے
چاندی ہر اک طرح تو یہاں گدایان در کی ہے
جاناں یہ تکیہ خاک نہالی ہے دل نہال
ہاں بینواؤ خون یہ صورت گذر کی ہے
ہیں چتر و تحت سایہئ دیوار و خاک در
شاہوں کو کب نصیب یہ دھج کروفر کی ہے
اس پاک کو میں خاک بسر سر بخاک ہیں
سمجھے ہیں کچھ یہی جو حقیقت بسر کی ہے
کیوں تاجدارو خواب میں دیکھی کبھی یہ شے
جو آج جھولیوں میں گدایان در کی ہے
جروکشوں میں چہرے لکھے ہیں ملوک کے
وہ بھی کہاں نصیب فقط نام بھر کی ہے
طیبہ میں مر کے ٹھنڈے چلے جاؤ آنکھیں بند
سیدھی سڑک یہ شہر شفاعت نگر کی ہے
عاصی بھی ہیں چہیتے یہ طیبہ ہے زاہدو
مکہ نہیں کہ جانچ جہاں خیر و شر کی ہے
شان جمال طیبہ جاناں ہے نفع محض
وسعت جلال مکہ میں سود و ضرر کی ہے
کعبہ ہے بےشک انجمن آرا دلہن مگر
ساری بہار دلہنوں میں دولہا کے گھر کی ہے
کعبہ دلہن ہے تربت اطہر نئی دلہن
یہ رشک آفتاب ہے وہ غیرت قمر کی ہے
دونوں بنیں سجیلی انیلی بنیں مگر
جو پی کے پاس ہے وہ سہاگن کنور کی ہے
سر سبز وصل یہ ہے سیہ پوش ہجر وہ
چمکی دوپٹوں سے ہے جو حالت جگر کی ہے
ماؤ شما تو کیا کہ خلیل جلیل کو
کل دیکھنا کہ اُن سے تمنا نظر کی ہے
اپنا شرف دعا سے ہے باقی رہا قبول
یہ جانیں ان کے ہاتھ میں کنجی اثر کی ہے
جو چاہے ان سے مانگ کہ دونوں جہاں کی خیر
زرنا خریدہ ایک کنیز ان کے گھر کی ہے
رومی غلام دن حبشی باندیاں شبیں
گنتی کنیز زادوں میں شام و سحر کی ہے
اتنا عجب بلندیئ جنت پہ کس لئے
دیکھا نہیں کہ بھیک یہ کس اونچے گھر کی ہے
عرش بریں پہ کیوں نہ ہو فردوس کا دماغ
اتری شبیہ تیرے بام و در کی ہے
وہ خلد جس میں اترے کی ابرار کی بارات
ادنیٰ نچھاور اس میرے دولہا کے سر کی ہے
عنبر زمین عبیر ہوا مشک تر غبار
ادنیٰ سی یہ شناخت تیری رہ گزر کی ہے
سرکار ہم گنواروں میں طرز ادب کہاں
ہم کو تو بس تمیز یہی بھیک بھر کی ہے
مانگیں گے مانگے جائیں گے منہ مانگی پائیں گے
سرکار میں نہ لا ہے نہ حاجت اگر کی ہے
اف بے حیائیاں کہ یہ منہ اور تیرے حضور
ہاں تو کریم ہے تیری خو در گزر کی ہے
تجھ سے چھپاؤں منہ تو کروں کس کے سامنے
کیا اور بھی کسی سے توقع نظر کی ہے
جاؤں کہاں پکاروں کسے کس کا منہ تکوں
کیا پرسش اور جاء بھی سگ بے ہنر کی ہے
باب عطاء تو یہ ہے جو بہکا ادھر ادھر
کیسی خرابی اس نگھرے در بدر کی ہے
آباد ایک در ہے تیرا اور تیرے سوا
جو بارگاہ دیکھئے غیرت کھنڈر کی ہے
لب وا ہیں آنکھیں بند ہیں پھیلی ہیں جھولیاں
کتنے مزے کی بھیک تیرے پاک در کی ہے
گھیرا اندھیریوں نے دہائی ہے چاند کی
تنہا ہوں کالی رات ہے منزل خطر کی ہے
قسمت میں لاکھ پیچ ہوں سو بل ہزار کج
یہ ساری گتھی اک تیری سیدھی نظر کی ہے
ایسی بندھی ، نصیب کھلے ، مشکلیں کھلیں
دونوں جہاں میں دھوم تمہاری کمر کی ہے
جنت دیں نہ دیں تیری رؤیت ہو خیر سے
اس گل کے آگے کس کو ہوس برگ و بر کی ہے
شربت دےں نہ دیں تو کرے بات لطف سے
یہ شہد ہو تو پھر کسے پروا شکر کی ہے
میں خانہ زاد کہنہ ہوں صورت لکھی ہوئی
بندوں کنیزوں میں میرے مادر پدر کی ہے
منگتا کا ہاتھ اٹھتے ہی داتا کی دین تھی
دوری قبول و عرض میں بس ہاتھ بھر کی ہے
سنکی وہ دیکھ باد شفاعت کہ دے ہوا
یہ آبرو رضاؔ تیرے دامان تر کی ہے
 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)