Ik Main Hi Nahi Un Par Qurban Zamana Hai

0
65

Aik men hee nahe un per qurbaan zamana hey,
Aik men hee nahen un per qurbaan zamana hey,
Joo Rub e do aalam kaa mehboob yagana hey.

Aik Men Hee Nahe Un Par Qurban Zamana Hey
Kal pul sey hamain jis ney khud per lagana hey,
Zuhra ka woh baba he Hasnain ka nana hey.

Aik men hee nahe un per qurbaan zamana hey,
iss hashmee doolha par koneen ko men waroon,
Jo hosn o shumeel main yaktaa e zamana hey.

Aik men hee nahe un per qurbaan zamana hey,
Izzat sey na marjaein Qiun naam e Muhammad per,
Youn bhee kisi din ham ne duneya sey tu janaa hey.

Aik men hee nahe un per qurbaan zamana he,
Yun Shahey Madeena ke main pusht panahee main,
Keya isky mujhey perwah dushman jo zamana hey.
Aik men hee nahe un per qurbaan zamana he,
So bar ager touba tooti bhee to keya herat,
Bakhshish ke rewayet main touba to bahana hey.

Aik men hee nahe un per qurbaan zamana he,
Maihroom e karam isko rakheye na sar e maihsher,
Jesa hey Naseer aakher, saahil toh purana hey.
Aik men hee nahe un per qurbaan zamana he,
Purr Noor see raahain hen, gunbad pey negahain hey,
Jalvay bhee anukhey hen, manzer bhee suhana hey.
Ye keh key der e haque sey lee mout main kuch mohlat,
Melad kee aamad hey mahfil ko sajana hey.
Aao dar e Zuhra per phalay huey daaman,
Ye nasal karimon ki lajpal gharana hey.
Qurbaan us aaqa par kal hashar key din jisney,
iss ummat e aasy ko kamli main chupana hey.
Her waqt wo hen mairi duneya e tasawur men,
Aiey shok kaheen ab tou aana he na jana hey.
Ham Qiun na kahain unsey rodad e alam apni,
Jub unka kaha khud bhee Allah ney mana hey.
اک میں ہی نہیں ان پر قربان زمانہ ہے
اک میں ہی نہیں ان پر قربان زمانہ ہے
جو ربِ دوعالم کا محبوب یگانہ ہے
اک میں ہی نہیں ان پر قربان زمانہ ہے
کل جس نے ہمیں پُل سے خود پار لگانا ہے
زہرہ کا وہ بابا ہے ، سبطین کا نانا ہے
اک میں ہی نہیں ان پر قربان زمانہ ہے
اس ہاشمی دولہا پر کونین کو میں واروں
جو حسن و شمائل میں یکتائے زمانہ ہے
اک میں ہی نہیں ان پر قربان زمانہ ہے
عزت سے نہ مر جائیں کیوں نام محمد پر
ہم نے کسی دن یوں بھی دنیا سے تو جانا ہے
اک میں ہی نہیں ان پر قربان زمانہ ہے
ہوں شاہِ مدینہ کی میں پشت پناہی میں
کیا اس کی مجھے پروا دشمن جو زمانہ ہے
اک میں ہی نہیں ان پر قربان زمانہ ہے
سو بار اگر توبہ ٹوٹی بھی تو کیا حیرت
بخشش کی روایت میں توبہ تو بہانہ ہے
بخشش کی روایت میں توبہ تو بہانہ ہے
اک میں ہی نہیں ان پر قربان زمانہ ہے

محرومِ کرم اس کو رکھئے نہ سرِ محشر
جیسا ہے “نصیر” آخر سائل تو پرانا ہے
اک میں ہی نہیں ان پر قربان زمانہ ہے
پُر نور سی راہیں ہیں گنبد پہ نگاہیں ہیں
جلوے بھی انوکھے ہیں منظر بھی سہانا ہے
یہ کہ کے در حق سے لی موت میں کچھ مہلت
میلاد کی آمد ہے محفل کو سجانا ہے
آو در زہرہ پر پھیلائے ہوئے دامن
ہے نسل کریموں کی لجپال گھرانہ ہے
قربان اُس آقا پر کل حشر کے دن جس نے
اَس اُمت عاصی کو کملی میں چھپانا ہے
ہر وقت وہ ہیں میری دُنیائے تصور میں
اے شوق کہیں اب تو آنا ہے نہ جانا ہے
ہم کیوں نہ کہیں اُن سے رُو داد الم اپنی
جب اُن کا کہا خود بھی اللہ نے مانا ہے

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)