Aisi Hi Sard Shaam Thi Wo Bhi (Baz Gasht)

0
247
amjad islam amjad

Baz Gasht Ghazal by Amjad Islam Amjad

[adsense_inserter id=”6236″]

 

Aisi Hi Sard Shaam Thi Wo Bhi
Jab Wo Mahandi Rachaaye Haatho Me
Apani Aahat Ke Khauf Se Larazaa
Surkh Aanchal Me Muunh Chupaaye Hue
Apne Khat Mujh Se Lene Aai Thi
Us Ki Sahmi Hui Nigaaho Me
Kitni Khaamosh Iltijaaye Thi
Us Ke Chehre Ki Zard Rangat Me
Kitni Majabooriyo Ke Saaye The
Mere Haatho Se Khat Pakarte Hi
Jaane Kyaa Soch Kar Achaanak Wo
Mera Shaana Pakar Kar Roi Thi
Us Ke Yaqoot Rang Honto Ke
Kap_Kapaate Hue Kinaaro Par
Saikaro Ankahe Fasaane The
Sard Shaamo Me Der Tak Aksar
Jab Ye Manzar Dikhai Deta Hai
Ek Lamhaa Hinaai Hatho Se
Mujh Ko Apani Taraf Bulata Hai
Ham_Nashii Rooth Kar Na Ja Mujh Se
Aisi Hi Sard Shaam Thi Wo Bhi

ایسی ہی سرد شام تھی وہ بھی
جب وہ مہندی رچاۓ ہاتھو میں
اپنی آہٹ کے خوف سے لرزاں
سرخ آنچل میں منہ چھپاۓ ہوۓ
اپنے خط مجھ سےلینےآئ تھی
اس کی سہمی ہوئ نگاہوں میں
کتنی خاموش التجائیں تھیں
اس کے چہرے کی زرد رنگت میں
کتنی مجبوریوں کے ساۓ تھے
میرے ہاتھوں سے خط پکڑتے ہی
جانے کیا سوچ کر اچانک وہ
میرا شانہ پکڑ کر روئ تھی
اس کے یاقوت رنگ ہونٹوں کے
کپکپاتے ہوۓ کناروں پر
سینکڑوں ان کہے فسانے تھے
سرد شاموں میں دیر تک اکثر
جب یہ منظر دکھائ دیتا ہے
اک لمحہ حنائ ہاتھوں سے
مجھ کو اپنی طرف بلاتا ہے
ہم نشیں روٹھ کر نہ جا مجھ سے
ایسی ہی سرد شام تھی وہ بھی

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)