Zara Si Baat Poetry

0
85
amjad islam amjad

Zara Si Baat Poetry by Amjad Islam Amjad

Zindagi Key Meley Me
Khuwahisho Key Reley Me
Tum Se Kiya Kahai Janaa
Is Qadar Jhameley Me
Waqt Ki Rawaani He
Bakht Ki Giraani He
Sakht Bey-Zameeni He
Sakht La-makani Hai
Hijr Key Samander Me
Takht Aur Takhtey Ki
Ek Hi Kahaani He
Tum Ko Jo Sunani He
Baat Go Zara Si He
Baat Umar Bhar Ki He
Umar Bhar Ki Baatai Kab
Do Ghardi Me Hoti Hei
Dard Kay Samander Me
Un-Ginat Jazeerey He
Beshumaar Moti Hei
Aankh Key Dareechey Me
Tum Ne Jo Sajaaya Tha
Baat Us Diyey Ki He
Baat Us Giley Ki He
Jo Lahoo Ki Khilwat Me
Choor Ban Key Aata He
Lafz Ki Faseelo Per
Toot Toot Jaata He
Zindagi Se Lambi He
Baat Rat Jage Ki He
Raaste Me Kese Ho
Baat Takhliyai Ki He
Takhliyai Ki Baato Me
Guftagoo Izaafi He
Piyaar Karney Waloo Ko
Ik Nigah Hi Kaafi He
Ho Sakey To Sun Jao
Ik Din Akailey Me
Tum Se Kiya Kahai Janaa
Is Qadar Jamailey Me!

 

ذرا سی بات
زندگی کے میلے میں، خواہشوں کے ریلے میں
تم سے کیا کہیں جاناں، اس قدر جھمیلے میں
وقت کی روانی ہے، بخت کی گرانی ہے
سخت بے زمینی ہے، سخت لا مکانی ہے
ہجر کے سمندر میں
تخت اور تختے کی، ایک ہی کہانی ہے
تم کو جو سنانی ہے
بات گو ‍ذرا سی ہے
بات عمر بھر کی ہے
عمر بھر کی باتیں کب، دو گھڑی میں ہوتی ہیں
درد کے سمندر میں
ان گنت جزیرے ہیں، بے شمار موتی ہیں
آنکھ کے دریچے میں، تم نے جو سجایا تھا
بات اس دۓ کی ہے
بات اس گلے کی ہے
جو لہو کی خلوت میں چور بن کے آتا ہے
لفظ کی فصیلوں پر ٹوٹ ٹوٹ جاتا ہے
زندگی سے لمبی ہے، بات رت جگے کی ہے
راستے میں کیسے ہو
بات تخلیۓ کی ہے
تخلیۓ کی باتوں میں گفتگو اضافی ہے
پیار کرنے والوں کو اک نگاہ کافی ہے
ہو سکے تو سن جاؤ اک دن اکیلے میں
تم سے کیا کہیں جاناں، اس قدر جھمیلے میں

امجد اسلام امجد

 

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)