Judai Ki Paanchvin Salgirah

0
204
amjad islam amjad

Judaai Ki Paanchvin Salgiraah by Amjad Islam Amjad

Jee Me He Aaj Ki Shab Us Key Liyey Jaag Key Kaati Jaaiy
Wo Jo Aankho Sey Parey
Ajnabi Deis Ki Gumnaam Hawao Me Bethi He
Kiaa Mohabbat Key Liyey Ye Bhi Zaroori He Key Me
Us Key Chahrey Ko Khad-O-Khaal Me Laa Ker Daikhoo?
Sach To Ye He Key Mujhey Yaad Nahi, Key Uski Jabeen Keisi Thee?
Hont Kaisey They, Baden Kaisa Thaa, Aankhein Keisi Thee?
Bas Ye Yaad He Key Wo Jeisi Nazar Aati Thee
Us Sey Kaheen Achi Thee.

(Ye Mah-O-Saal Ka Toofaan Bohat Zaalim He
Wo Agar Paas Bhi Hoti To Kisey Khabar He Keisi Hoti?)

Yoo To Har Raat Meirey Dil Per Giraan Guzarti He
Phir Bhi Aiy Bhooley Howey, Too Hi Bataa
Gham Ki Zanjir Bhalaa
Jagtey, Sochtey Rahney Sey Kahaan Katti He
Ye Jo Aahat Si Abhi Nikhat-E-Gul Ki Taraah Pheili He
Terey Qadamo Ki Sadaa Lagti He
Jab Kabhi Koi Jahaaz Yaad Ki Shammaa Liyey Gham Ki Be-chein Hawaao Sey Guzartaa He To Dil
Shaam-E-Furqat Key Tasawur Sey Laraz Uthta He
Shaam-E-Furqat! Jo Haqeeqat He Magar Khuwaab Numaa Lagti He
Chaand Jab Abar Key Tukro Per Safar Kartaa He To Yu Lagtaa He
Me Bhi Ik Abar Kaa Tukraa Hoon Jisey Teiraa Wisaal
Tera Ik Lamhaa-E-Wisaal
Daaimi Hijar Key Undooh-E-Musalsal Key Ewaz Baar Nahi!
Aiy Mujhey Abar Key Tukrey Ki Tarhaa Chor Key Jaaney Waaley
Terey Bakhshey Houey Lamhey Key Ewaz
Kia Mujhey Deina Paraa, Is Sey Sarokaar Nahi
Paanchwvee Salgirah Judai Ki Aaj Manaoo Shab Bher
Shaam-E-Furqat Ki Taraah, Ashk Bahaoo Shab Bher
Phir Airport Ki Reeling Per Tika Key Kohni
Teri Rukhsat Ka Samaa Dehaan Me Laoo Shab Bher
Too Jo Roti Hui Aankhoo Sey Parey
Ajnabi Deis Ki Gumnaam Hawaaoo Me Kahee Beithi He

Amjad Islam Amjad

 

[adsense_inserter id=”6280″]

 

جُدائی کی پانچویں سالگرہ
جی میں ہے آج کی شب اس کے لیۓ جاگ کے کیٹی جاۓ
وہ جو گنکھوں سے پرے
اجنبی دیس کی گمنام ہواؤں میں کہیں بیٹھی ہے
کیا محبت کے لیۓ یہ بھی ضروری ہے کہ میں
اس کے چہرے کو خدوخال میں لا کر دیکھوں
سچ تو یہ ہے کہ مجھے یاد نہیں، اس کی جبیں کیسی تھی؟
ہونٹ کیسے تھے، بدن کیسی تھا، آنکھیں کیا تھیں؟
بس یہی یاد ہے وہ جیسی نظر آتی تھی
اس سے کہیں اچھی تھی
(یہ مہ و سال کا طوفان بہت ظالم ہے وہ اگر پاس بھی ہوتی تو کسے علم ہے کیسی ہوتی!)
یوں تو ہر رات دل پہ گراں کٹتی ہے!
پھر بھی اے بھولے ہوۓ تو ہی بتا
غم کی زنجیر بھلا
جاگنے، سوچتے رہنے سے کہاں کٹتی ہے!
یہ جو آہٹ سی ابھی نکہت گل کی طرج پھیلی ہے
تیرے قدموں کی صدا لگتی ہے
حب کبھی کو‎ئ جہاز یاد کی شمع لیۓ غم کی بے چین ہواؤں سے گزرتا ہے تو دل
شام فرقت کے تصور سے لرز اٹھتا ہے
شام فرقت! جو حقیقت ہے مگر خواب نما لگتی ہے
چاند جب ابر کے ٹکڑوں میں سفر کرتا ہے تو یوں لگتا ہے
میں بھی اک ابر کا ٹکڑا ہوں جسے ترا وصال
تیرا ایک لمحہ وصال
دائمی ہجر کے اندوہ مسلسل کے عوض بار نہیں!
اے مجھے ابر کے ٹکڑے کی طرج چھوڑ کے جانے والے
تیرے بخشے ہوۓ لمحے کے عوض
کیا مجھے دینا پڑا، اس سے سروکار نہیں۔
پانچویں سالگرہ آج جدائ کی مناؤں شب بھر
شام فرقت کی طرح، اشک بہاؤں شب بھر
پھر ائر پورٹ کی ریلنگ پر ٹکا کر کہنی
تیری رخصت کا سماں، دھیان میں لاؤں شب بھر
تو جو روتی ہوئ گنکھوں سے پرے
اجنبی دیس کی گمنام ہواؤں میں کہیں بیٹھی ہے

امجد اسلام امجد

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)