Mohabbat Aisa Naghma Hai Poetry

0
375
amjad islam amjad

Muhabbat Aesa Naghma Hai by Amjad Islam Amjad

 

[adsense_inserter id=”6236″]

 

Mohabbat Aisa Naghma Hai
Zaraa Bhi Jholl Ho Lai Main
To Sur Qaaim Nahi Hotaa

Muhabbat Aisa Shuala He
Hawaa Jesi Bhi Chalti Ho
Kabhi Madham Naheen Hota

Muhabbat Aisa Rishtaa He
K Jis Me Bandhaney Walo K
Dilo Me Gham Nahi Hota

Muhabat Aisa Poda He
Jo Tab Bhi Sabz Rehta He
K Jab Mosam Nahi Hota

Muhabbat Aisa Raasta He
Agar Pero Me Lerzish Ho
To Ye Mehram Nahi Rehtaa

Muhabbat Aisa Darya He
K Baarish Rooth Bhi Jaaye
To Paani Kam Nahi Hota

Amjad Islam Amjad

 

Mohabbat Aisa Naghma Hai in Urdu Written:

محبت ایسا نغمہ ہے
ذرا بھی جھول ہے لَے میں
تو سُر قائم نہیں ہو تا
محبت ایسا شعلہ ہے
ہوا جیسی بھی چلتی ہو
کبھی مدھم نہیں ہوتا
محبت ایسا رشتہ ہے
کہ جس میں بندھنے والوں کے
دلوں میں غم نہیں ہوتا
محبت ایسا پودا ہے
جو تب بھی سبز رہتا ہے
کہ جب موسم نہیں ہوتا
محبت ایسا دریا ہے
کہ بارش روٹھ بھی جائے
تو پانی کم نہیں ہوتا

امجد اسلام امجد

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)