December Mujh Se Bola Tha

0
107

December Mujh Se Bolaa Tha
Ab Ke Jb Mai Aaon Ga

Tujhe Phir Se Pukaron Ga
Usey Mai Sath Laon Ga

Jo Tujh Ko Bhool Baitha Hy
Ke Jis Ke Hijr Ka Laawa

Tera Tan Man Jalata Hy
Ke Jis Ki Yaad Ki JheeloN Mei

Akser Doob Jatey Ho
Ke Jis Ke Waastey Bethey
Yaahan Tum Geet Gaatey Ho!

December Mujh Se Bolaa Tha
Suno Tum Bhool Na Jana

Jo Yaadein Us Ne Sonpi Han
Jo Lamhay Us Ne Bakhshey Han

Chaahe Ye Zakhm Saary
Rooh Ka Naasoor Ban Jaaen

Inhen Bharney Nahi Dena
Inhen Marney Nahi Dena…

December Mujh Se Bola Tha in Urdu:

دسمبر مجھ سے بولا تھا
اب کے جب میں آئوں گا
تجھے پھر سے پکاروں گا
اُسے میں ساتھ لائوں گا
جو تجھ کو بھول بیٹھا ہے
کہ جس کے ہجر کا لاوا
تیرا تن من جلاتا ہے
کہ جس کی یاد کی جھیلوں میں
اکثر ڈوب جاتے ہو
کہ جس کے واسطے بیٹھیے
یہاں تم گیت گاتے ہو
دسمبر مجھ سے بولا تھا
سنو تم بھول نہ جانا
جو یادیں اُس نے سونپی ہیں
جو لمحے اُس نے بخشے ہیں
چاہے یہ زخم سارے
روح کا ناسور بن جائیں
اِنہیں بھرنے نہیں دینا
اِنہیں مرنے نہیں دینا

 

Posted in December Poetry

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)