Daur e Falak Jab Dohrata Hai Mosam e Gul Ki Raaton Ko

0
199
nasir kazmi

daur e falak jab dohrata he mosam e gul ki raaton ko
kunj e qafas me sun lete hen bholi bisri baton ko

reg e rawan ki naram tahon ko cherti he jab koi hawa
sooney sehra cheekh uthte hen adhi adhi raton ko

aatish e gham ke sel e rawan me neenden jal kar rakh huen
patthar ban kar dekh raha hun aati jati raton ko

bethak ka soona soona maahol to yunhi rehna hai
khushk labon ki khair manao kuch na kaho barsaaton ko

nasir meray mun ki baten yun to suche moti hen
lekin un ki baten sun kar bhool gae sab baton ko

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

دورِ فلک جب دہراتا ہے موسمِ گل کی راتوں کو
کنجِ قفس میں سن لیتے ہیں بھولی بسری باتوں کو

ریگِ رواں کی نرم تہوں کو چھیڑتی ہے جب کوئی ہوا
سونے صحرا چیخ اٹھتے ہیں آدھی آدھی راتوں کو

آتشِ غم کے سیلِ رواں میں نیندیں جل کر راکھ ہویئں
پتھر بن کر دیکھ رہا ہوں آتی جاتی راتوں کو

مئے خانے کا افسردہ ماحول تو یوں ہی رہنا ہے
خشک لبوں کی خیر منائو کچھ نہ کہو برساتوں کو

ناصِر میرے منہ کی باتیں یوں تو سچے موتی ہیں
لیکن ان کی باتیں سن کر بھول گئے سب باتوں کو۔۔۔

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)