Hawas Naseeb E Nazar Ko Kahin Qarar Nahin

0
64
sahir ludhiyanvi poetry

 

 

Hawas naseeb E nazar ko kahien qarar nahin,
Main muntazir hun magar tera intizar nahin,
Hami se rang E gulistaan hami se rang E bahar,
Hami ko nazm E gulistan pe ikhtayar nahin,
Abhi na chair mohabbat ke geet ay matrab,
Abhi hayat ka mahol khushgawar nahin,
Tumharay ehad e wafa ko main ehad kia samjhoon,
Mujhay khud apni mohabbat ka aitbaar nahin,
Na janey kitnay gilay is me muztarib hain nadeem,
Wo aik dil kisi ka gila guzar nahin,
Guraiz ka nahi qail hayat se laikin,
Jo sach kahon to mujhey maot nagwaar nahin,
Ye kis muqaam pay pohancha dia zamanay nay,
Kay ab hayat pay tera bhi ikhtayar nahin.

Sahir Ludhyanvi

 

 

حوس نصیب نظر کو کہیں قرار نہیں
میں منتظر ہوں مگر ترا انتظار نہیں
ہمیں سے رنگ گلستاں ہمیں سے رنگ بہار
ہمیں کو نظم گلستاں پہ اختیار نہیں
ابھی نہ چھیڑ محبت کے گیت اے مطرب
ابھی حیات کا ماحول خوشگوار نہیں
تمہارے عہد وفا کو میں عہد کیا سمجھوں
مجھے خود اپنی محبت کا اعتبار نہیں
نہ جانے کتنے گلے اس میں مظطوب ہیں ندیم
وہ ایک دل کسی کا گلہ گذر نہیں
گریز کا نہیں قائل حیات سے لیکن
جو سچ کہوں تو مجھے موت ناگوار نہیں
یہ کس مقام پہ پہنچا دیا زمانے نے
کہ حیات پہ تیرا بھی اختیار نہیں
ساحر لدھیانوی

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)