Aik Makra Aur Makhi Poem by Allama Iqbal

2
205
Allama Iqbal Poems

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

Aik Din Kisi Makhee Sy Ye Kaihne Laga Makra
is Rah Sy Hota Hey Guzer Roz Tomhara

Lekin Mairi Kuteya Kee Na Jagee Kabhi Qismat
Bhulay Sy Kabhee Tumne Yahan Paun Na Rakha

Gheroun Sy Na Mileye Tou Koi Baat Naheen Hey
Apno Sy Mager Chaheye Yoon Khinch Ky Na Raihna

Aao Jo Maire Ghar Main To Izzat Hey Ye Mairi
Voh Samny Seerhi Hey Jo Manzoor Ho Ana

Makhee Ny Suni Bat Jo Makre Ki To Boli
Hazrat! Kisi Nadaan Ko Dejiye Ga Yeh Dhoka

Iss Jaal Main Makhee Kabhi Aany Ki Naheen Hey
Jo Aapki Seerhi Pey Charha, Pher Naheen Utra

Makre Ne Kaha Vah! Faraibi Mujhey Samjhy
Tum Sa Koi Nadaan Zamany Main Na Hoga

Manzoor Tumhari Mojhe Khatir Thee Vagerna
Kuch Fayda Apna To Maira is Main Naheen Tha

Urti Huvi Aayi Ho Khuda Jany Kahan Sy
Thehro Jo Maire Ghar Main To Hey is Main Bura Kiya!

is Ghar Main Khaai Tumko Dekhany Kee Hen Chizain
Bahir Sey Nazer Ata Hey Chotti Si Ye Kutiya

Latky Hoay Darvazun Pey Bareek Hen Pardey
Dewaron Ko Aayno Sey Hey Main Ney Sajaya

Mehmanun Key Aaram Ko Hazir Hen Bichony
Har Shaks Ko Saman Ye Mayassar Naheen Hota

Makhee Ny Kaha Kher, Ye Sab Theek Hey Lekin
Main Aap Ky Ghar Aaon, Ye Ummid Na Rakhna

In Naram Bichonon Sy Khuda Mujhko Bachaey
So Jaye Koi in Pey To Pher Uth Naheen Sakta

Makre Ne Kaha Dil Main, Suni Baat Jo Uski
Phansaon isey Kis Tarha Ye Kambakht Hey Dana

So Kam Khushamud Sy Nekalty Hen Jahan Main
Daikho Jisey Duniya Main Khushamud Ka Hey Banda

Ye Soch Ky Makhee Se Kaha Usne Bari Bee !
ALLAH Ny Bakhsha Hey Bara Aapko Rutba

Hoti Hey Usey Aapki Surat Sy Muhhabat
Ho Jisne Kabhee Ek Nazar Aapko Daikha

Aankhen Hen Ky Heeray Ki Chamakti Huvi Kaniyan
Sar Aap Ka ALLAH Ney Kalgi Sey Sajaya

Ye Husan, Ye Poshak, Ye Khoobi, Ye Safai
Pher is Py Qayamat Hey Ye Urtey Huay Gana

Makhee Ne Suni Jab Ye Khushamud To Pasiji
Boli Kay Naheen Aapse Mujhko Koi Khatka

Inkaar Ki Aadat Ko Samajhti Hoon Bura Main
Such Ye Hey Kay Dil Torna Acha Naheen Hota

Ye Bat Kahee Or Urri Apnee Jaga Sey
Paas Aayi To Makre Nay Uchhal Kar Ussey Pakra

Bhooka Tha Kai Roz Sey, Ub Hath Jo Aayi
Aaram Sey Ghar Baith Ke Makhee Ko Uraaya

اک دن کسی مکّھی سے يہ کہنے لگا مکڑا
اِس راہ سے ہوتا ہے گزر روز تمھارا
ليکن مری کٹيا کی نہ جاگی کبھی قسمت
!بھولے سے کبھی تم نے يہاں پاؤں نہ رکھّا
غيروں سے نہ مليے تو کوئی بات نہيں ہے
اپنوں سے مگر چاہيے يُوں کھنچ کے نہ رہنا
آؤ جو مرے گھر ميں تو عزّت ہے يہ ميری
وہ سامنے سيڑھی ہے جو منظور ہو آنا
مکھی نے سُنی بات جو مکڑے کی تو بولی
!حضرت! کسی نادان کو ديجے گا يہ دھوکا

اس جال ميں مکّھی کبھی آنے کی نہيں ہے
جو آپ کی سيڑھی پہ چڑھا ، پھر نہيں اُترا

مکڑے نے کہا واہ! فريبی مجھے سمجھے
تم سا کوئی نادان زمانے ميں نہ ہو گا
منظور تمھاری مجھے خاطر تھی وگرنہ
کچھ فائدہ اپنا تو مرا اس ميں نہيں تھا
اُڑتی ہوئی آئی ہو خدا جانے کہاں سے
ٹھہرو جو مرے گھر ميں تو ہے اس ميں بُرا کيا؟
اِس گھر ميں کئی تم کو دکھانے کی ہيں چيزيں
باہر سے نظر آتا ہے چھوٹی سی يہ کٹيا
لٹکے ہوئے دروازوں پہ باريک ہيں پردے
ديواروں کو آئينوں سے ہے ميں نے سجايا
مہمانوں کے آرام کو حاضر ہيں بچھونے
ہر شخص کو ساماں يہ ميّسر نہيں ہوتا
مکّھی نے کہا خير ! يہ سب ٹھيک ہے ليکن
!ميں آپ کے گھر آؤں ، يہ اُميد نہ رکھنا

اِن نرم بچھونوں سے خدا مجھ کو بچائے
!سو جائے کوئی اِن پہ تو پھر اُٹھ نہيں سکتا

مکڑے نے کہا دل ميں سُنی بات جو اُس کی
پھانسوں اسے کِس طرح يہ کم بخت ہے دانا
سو کام خوشامد سے نکلتے ہيں جہاں ميں
ديکھو جسے دنيا ميں خوشامد کا ہے بندا
!يہ سوچ کے مکھی سے کہا اس نے بڑی بی
!اللہ نے بخشا ہے بڑا آپ کو رُتبا
ہوتی ہے اُسے آپ کی صورت سے محبت
ہو جس نے کبھی ايک نظر آپ کو ديکھا
آنکھيں ہيں کہ ہيرے کی چمکتی ہوئی کنياں
سر آپ کا اللہ نے کلغی سے سجايا
!يہ حُسن ، يہ پوشاک ، يہ خوبی ، يہ صفائی
پھر اس پہ قيامت ہے، يہ اُڑتے ہوئے گانا
مکھی نے سُنی جب يہ خوشامد تو پسيجی
بولی کہ نہيں آپ سے مجھ کو کوئی کھٹکا
انکار کی عادت کو سمجھتی ہوں برا ميں
سچ يہ ہے کہ دل توڑنا اچھا نہيں ہوتا
يہ بات کہی اور اُڑی اپنی جگہ سے
پاس آئی تو مکڑے نے اُچھل کر اُسے پکڑا

بھوکا تھا کئی روز سے اب ہاتھ جو آئی
آرام سے گھر بيٹھ کے مکّھی کو اُڑايا

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

2 COMMENTS

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)