Aik Gaye Aur Bakri by Allama Iqbal

3
73
Allama Iqbal Poems

Ek Gaye or Bakri Poem by Allama Iqbal in Urdu

 

 

Aik Charagah Hari Bhari Thee Kaheen
Thee Sarapa Bahar Jis Kee Zamin

Kiya Saman Us Bahar Ka Ho Biyan
Har Taraf Saf Nadeyan Theen Ravan

They Anarun Kay Bay-Shumar Darakht
Or Peepal Kay Saaya daar Darakht

Thandee Thandee Havayen Aati Thin
Taayron Kee Sadaeyn Aati Thin

Kisi Nadi Kay Pas AIk Bakri
Charte Charte Kaheen Say Aa Nekli

Jub Thehar Kar idhar Udher Daikha
Pas Aik Gaaye Ko Khare Paya

Paihle Jhuk Kar Ussey Salam Kiya
Pher Salike Se Yon Kalam Kiya

Kyun Bari Bi! Mazaj Kese Hen
Gaaye Boli Ke Kher Achhe Hen

Kat Rahee Hey Buri Bhali Apni
Hey Musibat Main Zindagi Apni

Jaan Per Aa Bani Hey, Kiya Kahiye
Apni Qismat Buri Hey, Kiya Kahiye

Dekhti Hoon Khuda Kee Shaan Ko main
Ro Rahee Hoon Buron Kay Jan Ko Main

Zor Chalta Naheen Gharibon Ka
Paish Aaya Lekha Nasibon Ka

Aadmi Say Koi Bhala Na Karey
Us se Pala Parey, Khuda Na Karey

Doodh Kam Doon To Barbarata Hey
Hoon Jo Dubli Tou Bechh Khata Hey

Hathkandun Say Ghulam Kerta Hey
Kin Faraibon Say Ram Kerta Hey

Us Ke Bachon Ko Paalti Hoon Main
Doodh Sey Jan Dalti Hoon Main

Badley Neki Ke Ye Buraai Hey
Maire ALLAH! Tairi Duhayi Hey

Sun Key Bakri Ye Maajra Sara
Boli, Aeysa Gila Naheen Achha

Bat Sachi Hey Bay-Maza Lagti
Main Kahun Gi Mager Khuda Lagti

Ye Charagah, Ye Thandee Thandee Hava
Ye Hari Ghas Or Ye Saaya

Aeysi Khushiyaan Hamen Nasib Kahan
Ye Kahan, Bey-Zuban Gharib Kahan!

Ye Maze Aadmi Key Dam Sey Hen
Lutf Sarey Ussi Key Dam Sey Hen

Uss Key Dam Se Hey Apni Aabadi
Qaid Ham Ko Bhali Key Azadi!

So Tarha Kay Hey Banon Main Hey Khatka
Van Ki Guzaran Sey Bachay Khuda

Ham Pey Ehsan Hey Bara Uss Ka
Ham Ko Zeba Naheen Gila Uss Ka

Kadar Aaram Kee Agar Samjho
Aadmi Ka Kabhee Gila Na Karo

Gaaye Sun Kar Ye Baat Sharmayi
Aadmi Key Giley Se Pachtai

Dil Main Parkha Bhala Bura Uss Nay
Or Kuch Soch Kar Kaha Uss Nay

Yun To Chotti Hey Zaat Bakri Kee
Dil Ko Lagti Hey Baat Bakri Kee

اک چراگاہ ہری بھری تھی کہيں
تھی سراپا بہار جس کی زميں
کيا سماں اس بہار کا ہو بياں
ہر طرف صاف ندياں تھيں رواں
تھے اناروں کے بے شمار درخت
اور پيپل کے سايہ دار درخت
ٹھنڈی ٹھنڈی ہوائيں آتی تھيں
طائروں کی صدائيں آتی تھيں
کسی ندی کے پاس اک بکری
چرتے چرتے کہيں سے آ نکلی
جب ٹھہر کر ادھر ادھر ديکھا
پاس اک گائے کو کھڑے پايا
پہلے جھک کر اسے سلام کيا
پھر سليقے سے يوں کلام کيا
کيوں بڑی بی! مزاج کيسے ہيں
گائے بولی کہ خير اچھے ہيں
کٹ رہی ہے بری بھلی اپنی
ہے مصيبت ميں زندگی اپنی
جان پر آ بنی ہے ، کيا کہيے
اپني قسمت بري ہے ، کيا کہيے
ديکھتی ہوں خدا کی شان کو ميں
رو رہی ہُوں بُروں کی جان کو ميں
زور چلتا نہيں غريبوں کا
پيش آيا لکھا نصيبوں کا
آدمی سے کوئی بھلا نہ کرے
اس سے پالا پڑے ، خدا نہ کرے
دودھ کم دوں تو بُڑبُڑاتا ہے
ہوں جو دُبلی تو بيچ کھاتا ہے
ہتھکنڈوں سے غلام کرتا ہے
کن فريبوں سے رام کرتا ہے
اس کے بچوں کو پالتی ہوں ميں
دودھ سے جان ڈالتی ہوں ميں
بدلے نيکی کے يہ برائی ہے
ميرے اللہ! تري دہائی ہے
سن کے بکری يہ ماجرا سارا
بولی ، ايسا گلہ نہيں اچھا
بات سچی ہے بے مزا لگتی
ميں کہوں گی مگر خدا لگتی
يہ چراگہ ، يہ ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا
يہ ہری گھاس اور يہ سايا
ايسی خوشياں ہميں نصيب کہاں
يہ کہاں ، بے زباں غريب کہاں!
يہ مزے آدمی کے دم سے ہيں
لطف سارے اسی کے دم سے ہيں
اس کے دم سے ہے اپنی آبادی
قيد ہم کو بھلی ، کہ آزادی
سو طرح کا بنوں ميں ہے کھٹکا
واں کی گزران سے بچائے خدا
ہم پہ احسان ہے بڑا اس کا
ہم کو زيبا نہيں گلا اس کا
قدر آرام کی اگر سمجھو
آدمی کا کبھی گلہ نہ کرو
گائے سن کر يہ بات شرمائی
آدمی کے گلے سے پچھتائی
دل ميں پرکھا بھلا برا اس نے
اور کچھ سوچ کر کہا اس نے

يوں تو چھوٹی ہے ذات بکری کی
دل کو لگتی ہے بات بکری کی

 

 

3 COMMENTS

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)