Khuftagan e Khak Se Istafsar

1
230
Allama Iqbal Poems

 

[adsense_inserter id=”5423″]

 

Mehar-e-Roshan Chhup Gaya, Uthee Naqab-e-Roey Shaam
Shan-e-Hasti Pey Hay Bikhra hova Gaisuey Shaam

Yeh Seyah Poshi Ki Tayyari Kisi Kay Gham Men Hay
Mehfil-e-Qudrat Magar Khursheed Kay Matam Main Hay

Kar Raha Hey Aasman Jadu Lub-e-Guftar Par
Sehar-e-Shub Kee Nazar Hey Dedah-e-Beydar Par
Ghouta Zun Daryae Khamoshi Main Hey Mouj-e-Hava
Haan, Mager Aik Door Say Aati Hey Avaz e Dra

Dil Kay Hey Baytabi-e-Ulfat Main Duniya Say Nafoor
Kheinch Laya Hey Mojhe Hangama e Aalum Say Door

Manzer-e-Harman Naseebi Ka Tamashaai Hoon Men
Ham Nasheen-e-Khuftagan-e-Kanj Tanhaai Hoon Men

Thaam Zara Baytaabi-e-Dil! Beyth Janey De Mujhe
Or is Basti Pay Char Aansoo Gerany Day Mojhe

Aey May Ghaflat Ksy Sermasto! Kahan Rsihte Ho Tum?
Kuch Kahu Uss Dais Kee Aakhir, Jahan Raihte Ho Tum

Voh Bhee Heyrat Khana-e-Amroz o Ferda Hey Koi
Or Paykar-e-Anasir Ka Tamasha Hey Koi

Aadmi Van Bhee Hasar-e-Ghum Main Hey Mehsoor Keya
Uss Valayat Main Bhee Hey Insan Ka Dil Majboor Keya

Van Bhee Jal Marta Hey Soz-e-Shama Par Pervana Keya
Uss Chaman Main Bhee Gull-o-Bulbul Ka Hey Afsana Keya

Yan To aik Misre Main Pehlu Say Nekal Jata Hey Dil
Shair Ki Garmi Say Kiya Van Bhi Phigalta Jata Hey Dil

Rishta-o-Pewandiyan Ke Jaan Ka Azaar Hain
Uss Gulistan Main Bhee Kiya Aeyse Nukile Khar Hain

Iss Jahan Main aik Maeeshat Or So Uftad Hey
Rooh Kiya Uss Dais Main iss Fikar Say Azaad Hey

Kiya Vahan Bijli Bhee Hey, Dehqan Bhee Hai, Kherman Bhee Hey
Kafle Wale Bhee Hen, Andesha Rehzan Bhee Hey

Tinke Chuntey Hen vahan Bhee Aashiyan Ke Wastay
Khishat-e-Gill Kee Fikar Hoti Hey Makan Ke Wastay

Van Bhee Insan Apni Asliyat Sey Begane Hen Kiya
imtiaz-e-Millat-o-Aaeen Key Diwaane Hen Kiya

Van Bhee Kiya Faryad-e-Bulbul Par Chaman Rota Naheen
Iss Jahan Kee Terah Van Bhee Durd-e-Dil Hota Naheen

Bagh Hey Firdous Ya aik Manzil-e-Aramhai
Ye Rukh e Bay Parwa Husan-e-Azul Ka Nam Hey

Kiya Jahannum Maseeyat Sozi Kee aik Tarkib Hey
Aag Kay Shoulon Main Pinhan Maksad-e-Tadeeb Hey
Kiya Ewaz Raftar Kay Us Des Main Perwaz Hey
Maut Kaihte Hen Jisey Ahle Zamin, Kiya Raz Hey

eztarab-e-Dil Ka Saman Yan Kee Hast-o-Bood Hey
elm e insan Us Valayat Main Bhee Kiya Mehdud Hey

Deed Sey Taskin Pata Hey Dil-e-Mahjoor Bhee
‘Lan Tarani’ Kah Rahi Hen Ya Wahan Ky Toor Bhee

Justujoo Main Hey Vahan Bhee Rooh Ko Aram Kiya
van Bhee Insan Hey Qateel-e-Zouq-e-Istafham Kiya?

Aah! wo Kishwer Bhee Tareeki Say Kiya Mamoor Hey
Ye Muhabbat Kee Tajalli Say Sarapa Noor Hey

Tum Bata Do, Raaz Jo Iss Gunbad-e-Gardaan Main Hey
Maut Aik Chubh,ta Hova qanta Dil-e-insan Main Hey

مہر روشن چھپ گيا ، اٹھی نقاب روئے شام
شانہ ہستی پہ ہے بکھرا ہوا گيسوئے شام
يہ سيہ پوشی کي تياری کس کے غم ميں ہے
محفل قدرت مگر خورشيد کے ماتم ميں ہے
کر رہا ہے آسماں جادو لب گفتار پر
ساحر شب کی نظر ہے ديدہ بيدار پر
غوطہ زن درياے خاموشی ميں ہے موج ہوا
ہاں ، مگر اک دور سے آتی ہے آواز درا
دل کہ ہے بے تابی الفت ميں دنيا سے نفور
کھنچ لايا ہے مجھے ہنگامہ عالم سے دور
منظر حرماں نصيبی کا تماشائی ہوں ميں
ہم نشين خفتگان کنج تنہائی ہوں ميں
تھم ذرا بے تابی دل! بيٹھ جانے دے مجھے
اور اس بستی پہ چار آ نسو گرانے دے مجھے
اے مے غفلت کے سر مستو ، کہاں رہتے ہو تم
کچھ کہو اس ديس کی آ خر ، جہاں رہتے ہو تم
وہ بھی حيرت خانہ امروز و فردا ہے کوئی؟
اور پيکار عناصر کا تماشا ہے کوئی؟
آدمی واں بھی حصار غم ميں ہے محصور کيا؟
اس ولا يت ميں بھی ہے انساں کا دل مجبور کيا؟
واں بھی جل مرتا ہے سوز شمع پر پروانہ کيا؟
اس چمن ميں بھی گل و بلبل کا ہے افسانہ کيا؟
ياں تو اک مصرع ميں پہلو سے نکل جاتا ہے دل
شعر کی گرمی سے کيا واں بھی پگل جاتا ہے دل؟
رشتہ و پيوندياں کے جان کا آزار ہيں
اس گلستاں ميں بھی کيا ايسے نکيلے خار ہيں؟
اس جہاں ميں اک معيشت اور سو افتاد ہے
روح کيا اس ديس ميں اس فکر سے آزاد ہے؟
کيا وہاں بجلی بھی ہے ، دہقاں بھی ہے ، خرمن بھی ہے؟
قافلے والے بھی ہيں ، انديشہ رہزن بھی ہے؟
تنکے چنتے ہيں و ہاں بھی آ شياں کے واسطے؟
خشت و گل کی فکر ہوتی ہے مکاں کے واسطے؟
واں بھی انساں اپنی اصليت سے بيگانے ہيں کيا؟
امتياز ملت و آئيں کے ديوانے ہيں کيا؟

واں بھی کيا فرياد بلبل پر چمن روتا نہيں؟
اس جہاں کی طرح واں بھی درد دل ہوتا نہيں؟

باغ ہے فردوس يا اک منزل آرام ہے؟
يا رخ بے پردہ حسن ازل کا نام ہے؟
کيا جہنم معصيت سوزی کی اک ترکيب ہے؟
آگ کے شعلوں ميں پنہاں مقصد تاويب ہے؟
کيا عوض رفتار کے اس ديس ميں پرواز ہے؟
موت کہتے ہيں جسے اہل زميں ، کيا راز ہے ؟
اضطراب دل کا ساماں ياں کی ہست و بود ہے
علم انساں اس ولايت ميں بھی کيا محدود ہے؟
ديد سے تسکين پاتا ہے دل مہجور بھی؟
‘لن ترانی’ کہہ رہے ہيں يا وہاں کے طور بھی؟
جستجو ميں ہے وہاں بھی روح کو آرام کيا؟
واں بھی انساں ہے قتيل ذوق استفہام کيا؟
آہ! وہ کشور بھی تاريکی سے کيا معمور ہے؟
يا محبت کی تجلی سے سراپا نور ہے؟

تم بتا دو راز جو اس گنبد گرداں ميں ہے
موت اک چبھتا ہوا کانٹا دل انساں ميں ہے

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

1 COMMENT

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)