Aftab by Allama Iqbal

0
188
Allama Iqbal Poems

 

[adsense_inserter id=”5423″]

 

Aey Aftab, Ruh-o-Ravan-e-Jahan Hey Tu
Shiraza Band-e-Daftar-e-Koun-o-Makaan Hey Tu

Baees Hey Tu Vujood-o-Adam Kee Namood Ka
Hey Sabz Taire Dum Say Chaman Hast-o-Bood Ka
Qaaim Ye Unsaron Ka Tamasha Tujhee Say Hey
Her Shey Main Zindagi Ka Taqaza Tujhee Say Hey

Her Shey Ko Tairi Jalvagari Say Sabat Hey
Taira Ye Souz-o-Saaz Sarapa Hayat Hey

voh Aftaab Jis Se Zamaane Main Noor Hey
Dil Hey, Khird Hey, Ruh-e-Ravan Hey, Shaor Hey
Aey Aftaab Ham Ko Zia-e-Shaor Day
Chashm-e-Khird Ko Apnee Tajalli Say Noor Day
Hey Mahfil-e-Vajood Ka Saman Taraz Tu
Yazdan-e-Sakeenan-e-Nasheb-o-Faraz Tu
Taira Kamal Hasti-e-Har Jandaar Main
Tairi Namood Silsila-e-Kohsar Main

Her Chiz Kee Hayaat Ka Parvardegaar Tu
Zaeydgan-e-Noor Ka Hey Taajdar Tu
Ne Ibteda Koi Na Koi entiha Tairi
Azaad-e-Qaid-e-Awwal-o-Akher Zia Tairi,,

اے آفتاب! روح و روان جہاں ہے تو
شيرازہ بند دفتر کون و مکاں ہے تو
باعث ہے تو وجود و عدم کی نمود کا
ہے سبز تيرے دم سے چمن ہست و بود کا
قائم يہ عنصروں کا تماشا تجھی سے ہے
ہر شے ميں زندگی کا تقاضا تجھی سے ہے
ہر شے کو تيری جلوہ گری سے ثبات ہے
تيرا يہ سوز و ساز سراپا حيات ہے
وہ آفتاب جس سے زمانے ميں نور ہے
دل ہے ، خرد ہے ، روح رواں ہے ، شعور ہے
اے آفتاب ، ہم کو ضيائے شعور دے
چشم خرد کو اپنی تجلی سے نور دے
ہے محفل وجود کا ساماں طراز تو
يزدان ساکنان نشيب و فراز تو
تيرا کمال ہستی ہر جاندار ميں
تيری نمود سلسلہ کوہسار ميں
ہر چيز کی حيات کا پروردگار تو
زائيدگان نور کا ہے تاجدار تو

نے ابتدا کوئی نہ کوئی انتہا تری
آزاد قيد اول و آخر ضيا تری

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)