Syed Ki Loh-e-Turbat

0
186
Allama Iqbal Poems

 

[adsense_inserter id=”5423″]

 

Ae Key Taira Murgh-e-Jaan Taar-e-Nafas Main Hey Aseer
Ae Key Tairi Ruh Ka Tayer Qafas Main Hey Aseer

Iss Chaman Kay Naghma Peraun Kee Azadee To Daikh
Shehar Jo Ujra Hova Tha, Usski Abaadi To Daikh

Fikar Raihti Thee Mujhy Jis Kee Voh Mahfil Hey Yehi
Sabar-o-Istaqlaal Kee Khety Ka Hasil Hey Yehi

Sung-e-Turbat Hey Maira Garveda-e-Taqreer Daikh
Chashm-e-Batin Sey Zara Iss Loh Kee Tehreer Daikh

Mudda Taira Ager Dunya Main Hey Talim-e-Den
Turak-e-Dunya Qoum Ko Apnee Na Sikhlana Kaheen
Va Na Kerna Firka Bandi Key Liye Apnee Zuban
Chhup Key Hey Betha Hova Hangama-e-Mahsher Yahan

Vasal Key Asbaab Peyda Hun Tairi Tahreer Sey
Daikh! Koi Dil Na Dukh Jaye Tairi Taqreer Sey

Mahfil-e-Nau Main Puraani Dastanon Ko Na Chhair
Rung Per Jo Ub Na Aayen Un Afsanun Ko Na Chhair

Tu Ager Koi Mudabbir Hey To Sun Mairi Sada
Hey Daleyri Dust-e-Arbaab-e-Siasat Ka Asa
Arz-e-Mutlab Sey Jhijhak Jana Naheen Zeyba Tujhe
Nek Hey Niyyat Ager Tairi To Kiya Parva Tujhe

Banda-e-Momin Ka Dil Beem-o-Riya Sey Pak Hey
Quvwat-e-Fermaan-Rava Key Samny Bebak Hey
Ho Ager Hathon Main Taire Khana-e-Moujiz Rakam
Shisha-e-Dil Ho Ager Taira Misal-e-Jaam-o-Jam

Pak Rakh Apnee Zuban, Talmeez-e-Rehmani Heu Tu
Ho Na Jaye Daikhna Tairi Sada Be-Aabru,,

Sonay Walon Ko Jaga Dey Shair Key Ajaz Say
Khirmaan-e-Batil Jala Dey Shoula-e-Avaaz Say

اے کہ تیرا مرغ جاں تار نفس میں ہے اسیر
اے کہ تیری روح کا طائر قفس میں ہے اسیر
اس چمن کے نغمہ پیراؤں کی آزادی تو دیکھ
شہر جو اجڑا ہوا تھا، اس کی آبادی تو دیکھ
فکر رہتی تھی مجھے جس کی وہ محفل ہے یہی
صبر و استقلال کی کھیتی کا حاصل ہے یہی
سنگ تربت ہے مرا گرویدۂ تقریر دیکھ
چشم باطن سے ذرا اس لوح کی تحریر دیکھ
مدعا تیرا اگر دنیا میں ہے تعلیم دیں
ترک دنیا قوم کو اپنی نہ سکھلانا کہیں
وا نہ کرنا فرقہ بندی کے لیے اپنی زباں
چھپ کے ہے بیٹھا ہوا ہنگامۂ محشر یہاں
وصل کے اسباب پیدا ہوں تری تحریر سے
دیکھ! کوئ دل نہ دکھ جاۓ تری تقریر سے
محفل نو میں پرانی داستانوں کو نہ چھیڑ
رنگ پر جواب نہ آئیں ان افسانوں کو نہ چھیڑ
تو اگر کوئ مدبر ہے تو سن میری صدا
ہے دلیری دست ارباب سیاست کا عصا
عرض مطلب سے جھجک جانا نہیں زیبا تجھے
نیک ہے نیت اگر تیری تو کیا پروا تجھے
بندۂ مومن کا دل بیم و ریا سے پاک ہے
قوت فرماں روا کے سامنے بے باک ہے
ہو اگر ہاتھوں میں تیرے خامۂ معجز رقم
شیشۂ دل ہو اگر تیرا مثال جام جسم
پاک رکھ اپنی زباں تلمیز رحمانی ہے تو
ہو نہ جاۓ دیکھنا تیری صدا بے آبرو!
سونے والوں کو جگا دے شعر کے اعجاز سے
خرمن باطل جلا دے شعلۂ آواز سے

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)