Aftab e Subah by Allama Iqbal

0
214
Allama Iqbal Poems

 

[adsense_inserter id=”5423″]

 

Shourish-e-Maykhana-e-Insan Sy Balater Hey Tu
Zeenat-e-Bazam-e-Faluk Ho Jis Sey voh Sagheer Hey Tu

Ho Dar-e-Gosh-e-Uroos-e-Subha Voh Gohar Hey Tu
Jis Pe Seemaye Ufaq Nazan Ho Voh Zaivar Hey Tu
Safha-e-Ayyam Sey Dagh-e-Madad-e-Shub Mita
Aasman Sey Naqsh-e-Batil Kee Tarha Koukab Mita

Husan Taira Jub Hova Bam-e-Falak Sey Julva-Ger
Aankh Sey Urta Hey Yak Dum Khauwab Kee Mai Ka Asar

Noor Sey Mamoor Ho Jata Hey Daman-e-Nazer
Kholti Hey Chasham-e-Zahir Ko Zia Tairi Mager

Dhundti Hen Jis Ko Aanken voh Tamasha Chaheye
Chashme-e-Batin Jis Sey Khul Jaey Voh Julwa Chaheye

Shouq-e-Azaadi Key Dunya Main Na Nikle Hosley
Zindagi Bhar Qaid Zanjir-e-Taalluq Main Rahey

Zair-o-Bala Ek Hen Tairi Negahon Key Liye
Aarzu Hey Kuch Issi Chashm-e-Tamasha Kee Mujhey

Aankh Mairi Or Key Ghum Main Sar Shak Abad Ho
Imtiaz-e-Millat-o-Aaeyn Sey Dil Azaad Ho

Basta-e-Rung-e-Khasusiat Na Ho Mairi Zubaan
Noo-e-Insan Koum Ho Mairi, Vatan MAIra Jahan

Degah-e-Batin Pey Raaz-e-Nazm-e-Kudrat Ho Ayan
Ho Shanasaye Faluk Shama-e-Takhiyyul Ka Duhvan

Uqda-e-Azdad Kee Kawish Na Tarpaey Mojhey
Husan-e-Ishq Angaiz Her Shey Main Nazar Aay Mojhey

Sadma Aa Jaey Hava Sey Gul Kee Patti Ko Ager
Ashak Bun Ker Mairi Aankhun Sey Tapak Jaey Aser

Dil Main Ho Souz-e-Muhabbat Ka Voh Chota Sa Sharar
Noor Sey Jis Ke Miley Raz-e-Haqiqat Kee Khaber

Shahid-e-Kudrat Ka Aaeyna Ho, Dil Maira Na Ho
Sar Main Juz Humdardi-e-Insan Koi Sauda Na Ho

Tu Ager Zahmat-Kash-e-Hangama-e-Alam Naheen
Ye Fazilat Ka Neshaan Aey Naiyyar-e-Azum Naheen

Apney Husan-e-Aalam Aara Sey Jot U Mayhram Naheen
Hamser-e-Yak Zarra-e-Khak-e-Dar-e-Aadam Naheen

Noor-e-Masjood-e-Malak Garam Tamasha Hee Raha
Or Tu Minnat Pazeer-e-Subah-e-Farda Hee Raha

Aarzu Noor-e-Haqeeqat Kee Hamary Dil Main Hey
Laila-e-Zouq-e-Talub Ka Ghar Issi Mahmil Main Hey

Kis Kadar Lazzat Kushood-e-Aaqdah-e-Mushkil Main Hey
Lutf-e-Sad Hasil Hamari Saey-e-Behasil Main Hey
Durd-e-Istafham Sey Vaqif Taira Pehlu Naheen
Justuju-e-Raz-e-Kudrat Ka Shanasa To Naheen

شورش ميخانہ انساں سے بالاتر ہے تو
زينت بزم فلک ہو جس سے وہ ساغر ہے تو
ہو دُر گوش عروس صبح وہ گوہر ہے تو
جس پہ سيمائے افق نازاں ہو وہ زيور ہے تو

صفحہ ايام سے داغ مداد شب مٹا
آسماں سے نقش باطل کی طرح کوکب مٹا

حسن تيرا جب ہوا بام فلک سے جلوہ گر
آنکھ سے اڑتا ہے يک دم خواب کی مے کا اثر
نور سے معمور ہو جاتا ہے دامان نظر
کھولتی ہے چشم ظاہر کو ضيا تيری مگر

ڈھونڈتی ہيں جس کو آنکھيں وہ تماشا چاہيے
چشم باطن جس سے کھل جائے وہ جلوا چاہيے

شوق آزادی کے دنيا ميں نہ نکلے حوصلے
زندگی بھر قيد زنجير تعلق ميں رہے
زير و بالا ايک ہيں تيری نگاہوں کے ليے
آرزو ہے کچھ اسی چشم تماشا کی مجھے

آنکھ ميری اور کے غم ميں سرشک آباد ہو
امتياز ملت و آئيں سے دل آزاد ہو

بستہ رنگ خصوصيت نہ ہو ميری زباں
نوع انساں قوم ہو ميری ، وطن ميرا جہاں
ديدہ باطن پہ راز نظم قدرت ہو عياں
ہو شناسائے فلک شمع تخيل کا دھواں

عقدہ اضداد کی کاوش نہ تڑپائے مجھے
حسن عشق انگيز ہر شے ميں نظر آئے مجھے

صدمہ آ جائے ہوا سے گل کی پتی کو اگر
اشک بن کر ميری آنکھوں سے ٹپک جائے اثر
دل ميں ہو سوز محبت کا وہ چھوٹا سا شرر
نور سے جس کے ملے راز حقيقت کی خبر

شاہد قدرت کا آئينہ ہو ، دل ميرا نہ ہو
سر ميں جز ہمدردی انساں کوئی سودا نہ ہو

تو اگر زحمت کش ہنگامہ عالم نہيں
يہ فضيلت کا نشاں اے نير اعظم نہيں
اپنے حسن عالم آرا سے جو تو محرم نہيں
ہمسر يک ذرہ خاک در آدم نہيں

نور مسجود ملک گرم تماشا ہی رہا
اور تو منت پذير صبح فردا ہی رہا

آرزو نور حقيقت کی ہمارے دل ميں ہے
ليلی ذوق طلب کا گھر اسی محمل ميں ہے
کس قدر لذت کشود عقدہ مشکل ميں ہے
لطف صد حاصل ہماری سعی بے حاصل ميں ہے

درد استفہام سے واقف ترا پہلو نہيں
جستجوئے راز قدرت کا شناسا تو نہيں

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)