Ya Sami O Ya Basir By Amjad Islam Amjad

0
138
amjad islam amjad

Ya Sami o Ya Baseer by Amjad Islam Amjad

Hujoome gham se jis dam aadmi ghabraa sa jaata he
To aise me
Use awaz pe qabu nahi rehta
Wo itne se fariyad karta, cheekhta aur bilbilata he
Ke jese wo zameen par aue khuda ho aasmano me
Magar aisa bhi hota he
Ke us ki chhekh ki awaz ke rukne se pehle hi
Khuda kuch is qadar nazdeek se aur is qadar
Rahmat bari muskaan se us ko thapakta aur us ki baat sunta he
Ke fariyadi ko apni cheekh ki shiddat
Sada ki be yaqeeni par nidamat hone lagti he

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

یا سمیع و یا بصیر

ہجوم غم سے جس دم آدمی گھبرا سا جاتا ہے
تو ایسے میں
اسے آواز پہ قابو نہیں رہتا
وہ اتنے سے فریاد کرتا، چیختا اور بلبلاتا ہے
کہ جیسے وہ زمیں پر اور خدا ہو آسمانوں میں
مگر ایسا بھی ہوتا ہے
کہ اس کی چیخ کی آواز کے رکنے سے پہلے ہی
خدا کچھ اس قدر نزدیک سے اور اس قدر
رحمت بھری مسکان سے اس کو تھپکتااور اس کی بات سنتا ہے
کہ فریادی کو اپنی چیخ کی شدت
صدا کی بے یقینی پر ندامت ہونے لگتی ہے

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)