Naseeb Aazmane Ke Din Aa Rahe Hain

0
51
faiz ahmed faiz poetry

Another beautiful ghazal by Faiz Ahmed Faiz

 

 

 

Naseeb Aazmaane Ke Din Aa Rahe Hai,
Qareeb Un Ke Aane Ke Din Aa Rahe Hai,

Jo Dil Se Kaha, Jo Dil Se Suna Hai,
Sab Un Ko Sunaane Ke Din Aa Rahe Hai,

Abhi Se Dil O Jaan Sar-E-Raah Rakh Do,
Ke Luttne Lutaane Ke Din Aa Rahe Hai,

Tapakne Lagi Un Nigaaho Se Masti,
Nigaahai Churaane Ke Din Aa Rahe Hai,

Saba Phir Hamain Poochti Phir Rahi Hai,
Chaman Ko Sajaane Ke Din Aa Rahe Hai,

Chalo Faiz Phir Se Kahin Dil Lagaai,
Suna Hai Thikaane Ke Din Aa Rahe Hai..

 

Naseeb Aazmane Ke Din Ghazal by Faiz in Urdu

[pukhto_lek]

نصیب آزمانے کے دن آ رہے ہیں
قریب ان کے آنے کے دن آرہے ہیں

جو دل سے کہا، جو دل سے سنا ہے،
سب ان کو سنانے کے دن آرہے ہیں

ابھی سے دل وجان سر عام رکھ دو
کہ لٹنے لٹانے کے دن آرہے ہیں

ٹپکنے لگی ان نگاہوں سے مستی
نگاہیں چرانے کے دن آرہے ہیں

صبا پھرہمیں پوچھتی پھر رہی ہے
چمن کو سجانے کے دن آرہے ہیں

چلوفیض پھر سے کہیں دل لگایں
سنا ہے ٹھکانے کے دن آرہے ہیں

[/pukhto_lek]

    

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)