Hasrat-e-Deed Mein Guzraan Hain Zamanay Kab Se

1
56
Faiz Ahmed Faiz Pakistani Poet

A beautiful ghazal from the poetic collection of Faiz Ahmed Faiz in Urdu.

Let’s read it and realize the beauty of poetry by Faiz.

Hasrat-e-Deed Mein Guzraan Hain Zamany Kab Se by Faiz

 

Hasrat-e-Deed Mein Guzraan Hain Zamaanay Kab Se
Dasht-e-Umeed Mei Gardaan Hain Dewaanay Kab Se

Dair Se Ankh Mei Utara Nahi Askhoo Ka Azaab
Apne Zimmay Hai Tera Qarz Najanay Kab Se

Kis Tarah Paak Ho Be-Arzoo Lamho Ka Azaab
Dard Aia Nahi Darbaar Sjanay Kab Se

Sar Karo Saaz Ke Charrei Koi Dil Soz Ghazal
Dhoondata Hai Dil-E-Shoreeda Bahaanay Kab Se

Pur Karo Jaam Ke Shaid Ho Isi Lahza Rawaa
Rok Rakha Hai Jo Ik Teer Qazaa Ne Kab Se

Faiz Phir Kab Kisi Maqtal Mei Karai Ge Abad
Lab Pe Weeraa Hai Shaheedo Ke Fasaanay Kab Se

 

 
 

 

[pukhto_lek]

حسرتِ دید میں گزراں ہیں زمانے کب سے
دشتِ اُمّید میں گرداں ہیں دِوانے کب سے
دیر سے آنکھ پہ اُترا نہیں اشکوں کا عذاب
اپنے ذمّے ہے ترا قرض، نہ جانے کب سے
کس طرح پاک ہو بے آرزو لمحوں کا حساب
درد آیا نہیں دربار سجانے کب سے
سر کرو ساز کہ چھیڑیں کوئی دل سوز غزل
“ڈھونڈتا ہے دلِ شوریدہ بہانے، کب سے”
پُر کرو جام کہ شاید ہو اِسی لحظہ رواں
روک رکھّا ہے جو اِک تیر قضا نے کب سے
فیضؔ پھر کب کسی مقتل کو کریں گے آباد
لب پہ ویراں ہیں شہیدوں کے فسانے کب سے

فیض احمد فیض

[/pukhto_lek]

 

 
 

 

1 COMMENT

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)