Chalne Ka Hausla Nahin Rukna Mohal Kar Diya

0
435
parveen shakir poetry

Chalne Ka Hosla Nahin, Rukna Muhaal Kar Diya Parveen Shakir

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

Chalne Ka Hosla Nahin, Rukna Muhaal Kar Diya
Ishq K Is Safar Ne To Mujh Ko Nihaal Kar Diya
Milte Huwe Dilon K Beech Aur Tha Faisla Koi
Us Ne Magar Bicharte Waqt Aur Sawal Kar Diya
Ae Meri Gul Zameen Tujhe Chaah Thi Ik Kitaab Ki
Ehl-E-Kitab Ne Magar Kya Tera Haal Kar Diya
Ab Ke Hawa K Saath Hay Daaman-E-Yaar Muntazir
Banu-E-Shab K Haath Main Rakhna Sambhaal Kar “Diya”
Mumkina Faislon Main Aik Hijar Ka Faisla Bhi Tha
Ham Ne To Aik Baat Ki, Us Ne Kamaal Kar Diya
Mere Labon Pe Mohar Thi Par Mere Sheesha Rooh Ne To
Shehar K Shehar Ko Mera Waqif-E-Haal Kar Diya
Chehra-O-Naam Aik Saath Aaj Na Yaad Aa Sake
Waqt Ne Kis Shabeeh Ko Khawab-O-Khayaal Kar Diya
Muddaton Baad Us Ne Aaj Mujh Se Koi Gilla Kiya
Mansab-E-Dilbari Pe Kya Mujh Ko Bahaal Kar Diya???

 

Chalne Ka Hosla Nahin Rukna Muhaal Kar Diya by Parveen Shakir in Urdu

چلنے کا حوصلہ نہیں ، رُ کنا محال کردیا
عشق کے اس سفر نے تو ، مجھ کو نڈھال کردیا

ملتے ہوئے دلوں کے بیچ اور تھا فیصلہ کوئی
اس نے مگر بچھڑتے وقت اور سوال کردیا

اے میری گل زمیں تجھے، چاہ تھی ایک کتاب کی
اہل کتاب نے مگر کیا تیرا حال کردیا

اب کے ہوا کے ساتھ ہے دامانِ یار منتظر
بانوِ شب کے ہاتھ میں رکھنا سنبھال کردیا

ممکناں فیصلوں میں ایک ہجر کا ایک فیصلہ بھی تھا
ہم نے تو ایک بات کی اس نے تو کمال کردیا

میرے لبوں پہ مُہر تھی پر میرے شیشہ رو نے تو
شہر کے شہر کو میرا واقف حال کردیا

چہرہ و نام ایک ساتھ آج نہ یاد آسکے
وقت نے کس شبیہ کو خواب و خیال کردیا

مدتوں بعد اس نے آج مجھ سے کوئی گِلا کیا
منسبِ دلبری پہ کیا مجھ کو بحال کردیا

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)