Wo Aks e Mauja e Gul Tha

0
165
parveen shakir poetry

Wo Aks e Mauja e Gul Tha Parveen Shakir

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

WO AKS-E-MAUJA-E-GUL THA, CHAMAN CHAMAN MEIN RAHA
WO RANG RANG MEIN UTRAA, KIRAN KIRAN MEIN RAHA
WO NAAM HAASIL-E-FUN HO KE MERE FUN MEIN RAHA
KE ROOH BAN KE MERI SOCH KE BADAN MEIN RAHA
SAKOON-E-DIL KE LYE MEIN KAHAN KAHAN NA GAYI
MAGAR YE DIL, KE SADAA OSKI ANJUMAN MEIN RAHA
WO SHEHER WAALON KE AAGAY KAHEEN MOHAZZIB THA
WO EK SHAKHS JO SHEHERON SE DOOR BAN MEIN RAHA
CHARAAGH BUJHTAY RAHAY AUR KHWAAB JALTAY RAHAY
AJEEB TARZ KA MAUSAM MERE WATAN MEIN RAHA

 

Wo Aks e Mauja e Gul Tha Parveen Shakir in Urdu

وہ عکس موج گل تھا ، چمن چمن میں رہا
وہ رنگ رنگ میں اُترا، کرن کرن میں رہا
وہ نام حاصلِ فن ہو کے میرے فن میں رہا
کہ رُوح بن کے مری سوچ کے بدن میں رہا
سکونِ دل کے لیے میں کہاں کہاں نہ گئی
مگر یہ دل، کہ سدا اُس کی انجمن میں رہا
وہ شہر والوں کے آگے کہیں مہذب تھا
وہ ایک شخص جو شہروں سے دُور بَن میں رہا
چراغ بجھتے رہے اور خواب جلتے رہے
عجیب طرز کا موسم مرے وطن میں رہا

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)