Kubaku Phail Gai Baat Shanasai Ki

0
365
parveen shakir poetry

Kubaku Phail Gai Baat Shanasai Ki Parveen Shakir

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

KU-BA-KU PHAIL GAI BAAT SHANASAI KI
US NE KHUSHBU KI TARAH MERI PAZIRAI KI

KAISE KEH DUN K MUJHE CHOR DIYA HAI US NE
BAAT TO SACH HAI MAGAR BAAT HAI RUSWAI KI

WO KAHIN BHI GAYA LAUTA TO MERE PAS AAYA
BASS YAHI BAAT HAI ACHI MERE HARJAI KI

TERA PEHLU TERE DIL KI TARAH ABAAD RAHE
TUJH PE GUZRE NA QAYAMAT SHAB-E-TANHAI KI

US NE JALTI HUI PESHANI PE JO HATH RAKHA
ROOH TAK AA GAI TAASIR MASIHAI KI

 

Kubaku Phail Gai Baat Shanasai Ki by Parveen Shakir in Urdu

کو بکو پھیل گئ بات شنا سائ کی
کیسے کہہ دوں کہ مُجھے چھوڑ دیا اُس نے
بات تو سچ ہے مگر بات ہے رُسوائی کی
وہ کہیں بھی گیا، لَوٹا تو مرے پاس آیا
بس یہی بات اچھی مرے ہرجائی کی
تیرا پہلو، ترے دل کی طرح آباد ہے
تجھ پہ گُزرے نہ قیامت شبِ تنہائی کی
اُس نے جلتی ہُوئی پیشانی پہ جب ہاتھ رکھا
رُوح تک آ گئی تاثیر مسیحائی کی
اب بھی برسات کی راتوں میں بدن ٹوٹتا ہے
جاگ اُٹھتی ہیں عجب خواہشیں انگڑائی کی

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)