Mirza Ghalib by Allama Iqbal

0
58
Allama Iqbal Poems

 

 

Fikar-e-insan Par Tairi Hasti Say Ye Roshan Huva
Hey Per-e-Muragh-e-Takhayul Kee Rasayi Ta Kuja

Tha Saraapa Ruh Tou, Bazam-e-Sukhan Peykar Taira
Zeb-e-Mahfil Bhee Raha, Mahfil Say Penhan Bhee Raha

Deed Tairi Aankh Ko Us Husan Kee Manzoor Hey
Ban Kay Souz e-Zindagi Har Shey Main Jo Mastoor Hey

Mahfil-e-Hasti Tairi Barbat Say Hey Sermayadar
Jis Tarha Naddy Kay Naghmon Say Sakoot-e-Kohsaar

Taire Firduos-e-Takhayul Say Hey Kudrat Kee Bahar
Tairi Kisht-e-Fiker Say Ugtey Hen Aalum Subza Var

Zindagi Muzmer Hey Tairi Shoukhi-e-Tehreer Main
Tab-e-Goyai Say Junmbish Hey Lub-e-Tasweer Main

Nutaq Ko So Naz Hen Taire Lub-e-Ajaz Par
Mehw-e-Herat He Surayya Refat-e-Perwaz Par

Shahid-e-Mazmun Tassaduk Hey Taire Andaz Par
Khandazan Hey Guncha-e-Dilli Gul-e-Sheeraz Par

Aah! Tu Ujhari Hui Dilli Main Aaramida Hey
Lutaf-e-Goyai Main Tairi Humsari Mumkin Naheen
Ho Takhayyul Ka Na Jub Tak Fikar-e-Kamil Ham Nashin

Haye! Ub Kiya Ho Gayi Hindustan Kee Sar Zamin
Ah! Ae Nazara Aamoz-e-Negah-e-Nukta Been

Gaisoay Urdu Abhee Mannat Pazir-e-Shana Hey
Shama Ye Soday-e-Dilsozi-e-Parvana Hey

Aey Jahan Abad! Aey Gahwara-e-ilam-o-Hunar
Hen Saraapa Nala-e-Khamosh Taire Baam-o-Dar

Zurre Zurre Msin Tsire Khabidah Hsin Shamas-o-Kamar
Yoon Tou Poshrrda Hen Tairi Khaak Main Lakhon Gohar

Dafan Tujh Main Koi Fakher-e-Rozgaar Aeysa Bhee Hey?
Tujh Main Pinhan Koi Moti Aab Dar Aeysa Bhee Hey?

فکرِ انساں پر تری ہستی سے يہ روشن ہوا
ہے پر مرغِ تخيّل کی رسائی تا کُجا
تھا سراپا روح تو ، بزمِ سخن پيکر ترا
زيبِ محفل بھی رہا محفل سے پنہاں بھی رہا

ديد تيری آنکھ کو اُس حسن کی منظور ہے
بن کے سوزِ زندگی ہر شے ميں جو مستور ہے

محفلِ ہستی تری بربط سے ہے سرمايہ دار
جس طرح ندّی کے نغموں سے سکوتِ کوہسار
تيرے فردوسِ تخيّل سے ہے قدرت کی بہار
تيری کشتِ فکر سے اُگتے ہيں عالم سبزہ وار

زندگی مضمر ہے تيری شوخئ تحرير ميں
تابِ گويائی سے جنبش ہے لبِ تصوير ميں

نطق کو سو ناز ہيں تيرے لبِ اعجاز پر
محوِ حيرت ہے ثريّا رفعتِ پرواز پر
شاہدِ مضموں تصدّق ہے ترے انداز پر
خندہ زن ہے غنچۂ دلّی گُلِ شيراز پر

آہ! تو اُجڑی ہوئی دلّی ميں آراميدہ ہے
گلشنِ ويمر ميں تيرا ہم نوا خوابيدہ ہے

لطفِ گويائی ميں تيری ہمسری ممکن نہيں
ہو تخيّل کا نہ جب تک فکرِ کامل ہم نشيں
!ہائے! اب کيا ہو گئی ہندوستاں کی سر زميں
آہ! اے نظّارہ آموزِ نگاہِ نکتہ بيں

گيسوئے اُردو ابھی منّت پذيرِ شانہ ہے
شمع يہ سودائی دل سوزئ پروانہ ہے

اے جہان آباد! اے گہوارۂ علم و ہنر
ہيں سراپا نالۂ خاموش تيرے بام و در
ذرّے ذرّے ميں ترے خوابيدہ ہيں شمں و قمر
يوں تو پوشيدہ ہيں تيری خاک ميں لاکھوں گُہر

دفن تجھ ميں کوئی فخرِ روزگار ايسا بھی ہے؟
تجھ ميں پنہاں کوئی موتی آبدار ايسا بھی ہے؟

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)