Jawab e Shikwa by Allama Iqbal

1
3708
jawab e shikwa allama iqbal

Jawabe Shikwa depicts the response by ALLAH to the complaints for bad condition of Muslims. Shikwa and Jawab e Shikwa are the most legendary poetry items from Poet of the East Sir Allama Iqbal.

Get Jawab e Shikwa in Urdu written form, download PDF, listen jawab e shikwa mp3 and download and watch shikwa and jawabe shikwa video by Naeem Abbas Roofi and Amjad Sabri.

Jawab e Shikwa Mp3

Download Here (Right Click and Choose Save Link As)

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

Download Jawab e Shikwa PDF

Read Shikwa in Urdu Complete

 

Shikwa Jawab e Shikwa Video

Watch Shikwa and Jawab e Shikwa by Amjad Sabri and Naeem Abbas Roofi Complete Video

Jawab_E_Shikwa

Dil se jo baat nikalti he, asar rakhti he
Par nahi, taaqat-e-parwaaz magar rakhti he

Qudsi-ul-asal he, riffat pe nazar rakhti he
Khaak se uthti he, gardoon pe guzar rakhti he

Ishq tha fitna gar-o-sarkash-o-chalaak mera
Aasman cheer gaya nala-e-bebaak mera

Peer-e-gardoon ne kaha sun ke, kahin he koi!
Bole sayyaare, sar-e-arsh-e-bareen he koi!

Chaand kehta tha, nahin, ahl-e-zameen he koi!
Kehkashaan kehti thi, poshida yahin he koi!

Kuch jo samjha to mere shikwe ko Rizwan samjha
Mujhe jannat se nikala huwa insan samjha

Thi farishton ko bhi hairat, ke yeh awaz he kya!
Arsh walon pe bhi khulta nahin yeh raaz he kya!

Taa sar-e-arsh bhi insan ki tag-o-taaz he kya?
Aa gayi khak ki chutki ko bhi parwaaz he kya?

Ghafil aadaab se yeh sukkaan-e-zameen kaise hain
Shokh-o-gustakh yeh pasti ke makeen kaise hain!

Iss qadar shokh ke Allah se bhi barham hai
Tha jo masjood-e-malaeek yeh wohi Aadam hai?

Alam-e-kaif hai, dana-e-ramooz-e-kam hai
haan, magar ijz ke asrar se namehram hai

Naaz hai taaqat-e-guftaar pe insanon ko
baat karne ka saliqa nahin nadanon ko!

Ayi aawaz ghum-angaiz hai afsana tera
ashk-e-betaab se labraiz hai paimana tera

Asmangeer huwa naara-e-mastana tera
kis qadar shokh zuban hai dil-e-diwana tera

Shukr shikwe ko kiya husn-e-ada se tu ne
hum sukhan kar diya bandon ko khuda se tu ne

Hum tau mayal ba-karam hain, koi sayal hi nahin
rah dikhlaen kise rahraw-e-manzil hi nahin

Tarbiat aam tau hai, jauhar-e-qabil hi nahin
jis se taamir ho aadam ki yeh woh gil hi nahin

Koi qabil ho tau hum shan-e-kai dete hain
dhoondne walon ko dunya bhi nai dete hain!

Hath be-zor hain, ilhaad se dil khoo-gar hain
ummati baais-e-ruswai-e-paighamber (s.a.w) hain

But-shikan uth gaye, baqi jo rahe but-gar hain
tha braheem pidar, aur pisar aazar hain

Badah aasham naye, bada naya, khum bhi naye
harm-e-kaaba naya, but bhi naye, tum bhi naye

Woh bhi din the ke yehi maya-e-raanai tha
nazish-e-mousam-e-gul lala-e-sahrai tha!

Jo musalmaan tha allah ka saudai tha
kabhi mehboob tumhara yehi harjai tha

Kisi yakjai se ab ehd-e-ghulami kar lo
millat-e-ahmad (s.a.w.) Ko maqami kar lo!

Kis qadar tum pe garan subah ki baidari hai
hum se kab pyar hai! Haan neend tumhain pyari hai

Tabaa-e-azad pe qaid-e-ramazan bhari hai
tumhi keh do, yehi aaeen-e-wafadari hai?

Qoum mazhab se hai, mazhab jo nahin, tum bhi nahin
jazb-e-baham jo nahin, mehfil-e-anjum bhi nahin

Jin ko ata nahin dunya mein koi fann, tum ho
nahin jis qoum ko parwaye nasheman, tum ho

Bijliyan jis mein hon aasudah, woh khirman tum ho
baich khate hain jo aslaaf ke madfan, tum ho

Ho niko naam jo qabaron ki tajarat kar ke
kya na baicho ge jo mil jaen sanam pathar ke

Safah-e-dehr se batil ko mitaya kis ne?
Nau-e-insan ko ghulami se chhuraya kis ne?

Mere kaabe ko jabeenon se basaya kis ne?
Mere quran ko seenon se lagaya kis ne?

The tou aaba woh tumhare hi, magar tum kya ho?
Hath par hath dhare muntazir-e-farda ho!

Kya kaha? “bahr-e-musalman hai faqt wade-e-hoor
shikwa be-ja bhi kare koi tau lazim hai shaoor!

Adal hai fatir-e-hasti ka azal se dastoor
muslim aaeen huwa kafir tau mile hoor-o-qasoor

Tum mein hooron ka koi chahne wala hi nahin
jalwa-e-toor tau maujood hai, moosa hi nahin

Manfa’at aik hai is qaum ki, nuqsan bhi aik
ek hi sab ka nabi (s.a.w), din bhi, iman bhi aik

Harm-e-paak bhi, allah bhi, quran bhi aik,
kuch bari baat thi hote jo musalmaan bhi aik!

Firqa bandi hai kahin, aur kahin zaatain hain
kya zamane mein panapne ki yehi baatain hain?

Kon hai taarik-e-aaeen-e-rasool-e-mukhtar (s.a.w.)?
Maslihat waqt ki hai kis ke amal ka maayaar?

Kis ki ankhon mein samaya hai sha’ar-e-aghyar
ho gyi kis ki nigah tarz-e-salaf se baizar?

Qalb mein souz nahin, rooh mein ehsas nahin
kuch bhi paigham-e-muhammad (s.a.w.) Ka tumhain paas nahin

Jaa ke hote hain masajid mein saf-aara, tau ghareeb
zehmat-e-roza jo karte hain gawara, tau ghareeb

Naam leta hai agar koi hamara, tau ghareeb
pardah rakhta hai agar koi tumhara, tau ghareeb

Umra nasha-e-doulat mein hain ghafil hum se
zinda hai millat-e-baiza ghurba ke dam se

Waaiz-e-qoum ki woh pukhta khayali na rahi
barq taba’ee na rahi, shaola maqali na rahi

Reh gyi rasm-e-azan, rooh-e-bilali na rahi
falsafa reh gya, talqeen-e-ghazali na rahi

Masjidain marsiya khawan hain ke namazi na rahe
yani woh sahib-e-ausaf-e-hijazi na rahe

Shor hai ho gaye dunya se musalman nabood
hum ye kehte hain ke the bhi kahin muslim maujood!

Waza mein tum ho nisara, tau tamaddun mein hanood,
yeh musalman hain! Jinhain dekh ke sharmaen yahood?

Yun to syed bhi ho, mirza bhi ho, afghan bhi ho
tum sabhi kuch ho, batao to musalman bhi ho!

Dam-e-taqreer thi muslim ki sadaqat bebak
adal uss ka tha qawi, loos-e-mara’at se pak

Shajar-e-fitrat-e-muslim tha haya se namnak
tha shujaat mein woh ek hasti-e-fouq-ul-idraak

Khud gudazi nam-e-kaifiat-e-sehbayesh bood
khali az khawaish shudan soorat-e-meenayesh bood

Har musalman rag-e-batil ke liye nashtar tha
uss ke aaeena-e-hasti mein amal jouhar tha

Jo bharosa tha usse quwwat-e-bazoo par tha
hai tumhain mout ka dar, uss ko khuda ka dar tha

Baap ka ilm na bete ko agar azbar ho
phir pisar qabil-e-miraas-e-pidar kyunkar ho!

Har koi mast-e-mai-e-zauq-e-tan asani hai,
tum musalman ho? Ye andaaz-e-musalmani hai?

Haidari faqr hai ne doulat-e-usmani hai
tum ko aslaaf se kya nisbat-e-rohani hai?

Woh zamane mein mu’azzaz the musalman ho kar
aur tum khawar huwe taarik-e-quran ho kar

Tum ho apas mein ghazabnak, woh apas mein raheem
tum khatakaar-o-khatabeen, woh khata posh-o-kareem

Chahte sub hain ke hon auj-e-surayya pe muqeem,
pehle waisa koi paida tau kare qalb-e-salim!

Takht-e-faghfoor bhi un ka tha, sareer-e-ke bhi
yunhi baatain hain ke tum mein woh hameeyyat hai bhi?

Khudkushi shewa tumhara, woh ghayoor-o-khuddar
tum akhuwat se gurezan, woh akhuwat pe nisar

Tum ho guftar sarapa, woh sarapa kirdar
tum taraste ho kali ko, woh gulistan bah kinar

Ab talak yaad hai qoumon ko hikayat un ki
naqsh hai safah-e-hasti pe sadaqat un ki

Misl-e-anjum ufaq-e-qoum pe roshan bhi huwe
but-e-hindi ki mohabbat mein barhman bhi huwe

Shauq-e-parwaz mein mehjoor-e-nasheman bhi huwe
be-amal the hi jawan, deen-e-se badzan bhi huwe

In ko tehzeeb ne har bande se azad kiya
la ke kaabe se sanamkhane mein abad kiya

Qais zehmat kash-e-tanhai-e-sehra na rahe
shehr ki khaye huwa, bad ye pema na rahe!

Woh to diwana hai, basti mein rahe ya na rahe
ye zaroori hai hijab-e-rukh-e-laila na rahe!

Gila-e-jor na ho, shikwa-e-baidad na ho
ishq azad hai, kyun husn bhi azad na ho!

Ehd-e-nau barq hai, aatish zan-e-har khirman hai
ayman is se koi sehra no koi gulshan hai

Is nayi aag ka aqwam-e-kuhan indhan hai
millat-e-khatam-e-rusal (s.a.w.) Shaola ba perahan hai

Aaj bhi jo baraheem (a.s.) Ka imaan paida
aag kar sakti hai andaz-e-gulistan paida

Dekh kar rang-e-chaman ho na pareshan mali
koukab-e-ghuncha se shakhain hain chamakne wali

Khas-o-khashaak se hota hai gulistan khali
gul bar andaaz hai khoon-e-shuhada ki laali

Rang gardoon ka zara dekh tau unnabi hai
yeh nikalte huwe suraj ki ufaq taabi hai

Ummatain gulshan-e-hasti mein samar cheeda bhi hain
aur mehroom-e-samar bhi hain, khazan didah bhi hain

Saikron nakhl hain, kaheeda bhi, baleeda bhi hain
saikron batan-e-chaman mein abhi poshida bhi hain

Nakhl-e-islam namoona hai bru-mandi ka
phal hai ye saikron saalon ki chaman bandi ka

Pak hai gard-e-watan se sirr-e-daman tera
tu woh yousaf hai ke har misr hai kinaan tera

Qafila ho na sake ga kabhi weeran tera
ghair yak bang-e-dara kuch nahin saman tera

Nakhl-e-shama asti-o-dar shaola dawad resha-e-tu
aaqbat soz bawad saya-e-andesha-e-tu

Tu na mit jaye ga iran ke mit jane se
nasha-e-mai ko ta’aluq nahin pemane se

Hai ayan yorish-e-tataar ke afsane se
pasban mil gaye kaabe ko sanam khane se

Kashti-e-haq ka zamane mein sahara tu hai
asr-e-nau raat hai, dhundla sa sitara tu hai

Hai jo hangama bipa yorish-e-balghari ka
ghafilon ke liye pegham hai baidari ka

Tu samajhta hai ye saman hai dil aazari ka
imtihan hai tere isaar ka, khud-dari ka

Kyun harasan hai saheel-e-faras-e-aada se
noor-e-haq bujh na sake ga nafs-e-aada se

Chashme-e-aqwam se makhfi hai haqiqat teri
hai abhi mehfil-e-hasti ko zaroorat teri

Zinda rakhti hai zamane ko hararat teri
koukab-e-qismat-e-imkan hai khilafat teri

Waqt-e-fursat hai kahan, kaam abhi baqi hai
noor-e-touheed ka itmam abhi baqi hai

Misl-e-bu qaid hai ghunche mein, preshan ho ja
rakht bar dosh hawaye chamanistan ho ja

Hai tunk maya to zarre se byaban ho ja
naghma-e-mouj se hangama-e-toofan ho ja!

Quwwat-e-ishq se har past ko bala kar de
dehr mein ism-e-muhammad (s.a.w.) Se ujala kar de

Ho na ye phool to bulbul ka tarannum bhi na ho
chaman-e-dehr mein kaliyon ka tabassum bhi na ho

Ye na saqi ho to phir mai bhi na ho, khum bhi na ho
bazm-e-touheed bhi dunya mein na ho, tum bhi na ho

Khema aflak ka istada issi naam se hai
nabz-e-hasti tapish aamadah issi naam se hai

Dasht mein, daman-e-kuhsar mein, maidan mein hai
behr mein, mouj ki aghosh mein, toofan mein hai

Cheen ke shehr, maraqash ke byaban mein hai
aur poshida musalman ke iman mein hai

Chashm-e-aqwam ye nazara abad tak dekhe
riffat-e-shan-e-‘rafaana la ka zikrak’ dekhe

Mardam-e-chashm-e-zameen yani woh kali dunya
woh tumhare shuhada palne wali dunya

Garmi-e-mehr ki parwarda hilali dunya
ishq wale jise kehte hain bilali dunya

Tapish andoz hai iss naam se paare ki tarah
ghouta zan noor mein hai aankh ke tare ki tarah

Aqal hai teri sipar, ishq hai shamsheer teri
mere darvaish! Khilafat hai jahangeer teri

Ma siwa allah ke liye aag hai takbeer teri
tu musalman ho to taqdeer hai tadbeer teri

Ki muhammed (s.a.w.) Se wafa tu ne tau hum tere hain
yeh jahan cheez hai kya, loh-o-qalam tere hain_________!!

 

 

 

 

 

 

 

 

Jawab e Shikwa in Urdu:

جوابِ شکوہ

دل سے جو بات نکلتی ہے اثر رکھتی ہے
پر نہیں ، طاقتِ پرواز مگر رکھتی ہے
قدسی الاصل ہے، رفعت پہ نظر رکھتی ہے
خاک سے اُٹھتی ہے ، گردُوں پہ گذر رکھتی ہے

عشق تھا فتنہ گر و سرکش و چالاک مرا
آسماں چیرگیا نالہء فریاد مرا

پیر گردُوں نے کہا سُن کے ، کہیں ہے کوئی !
بولے سیارے ، سرِ عرشِ بریں ہے کوئی !
چاند کہتا تھا ، نہیں اہلِ زمیں ہے کوئی !
کہکشاں کہتی تھی پوشیدہ یہیں ہے کوئی !

کُچھ جو سمجھا مرے شکوے کو تو رضواں سمجھا
مجھے جنت سے نکالا ہوا انساں سمجھا

تھی فرشتوں کو بھی حیرت کہ یہ آواز ہے کیا !
عرش والوں پہ بھی کھلتا نہیں یہ راز ہے کیا !
تا سرِ عرش بھی انساں کی تگ و تاز ہے کیا ؟
آگئی خاک کی چُٹکی کو بھی پرواز ہے کیا ؟

غافل آداب سے سُکانِ زمیں کیسے ہیں !
شوخ و گُستاخ یہ پستی کے مکیں کیسے ہیں !

اس قدر شوخ کہ اللہ سے بھی برہم ہے
تھا جو مسجودِ ملائک یہ وہی آدم ہے ؟
عالمِ کیف ہے دانائے رموزِکم ہے
ہاں ، مگر عجز کے اسرار سے نا محرم ہے

ناز ہے طاقتِ گُفتار پہ انسانوں کو
بات کرنے کا سلیقہ نہیں نادانوں کو

آئی آواز غم انگیز ہے افسانہ ترا
اشکِ بیتاب سے لبریز ہے پیمانہ ترا
آسماں گیر ہوا نعرہء مستانہ ترا
کس قدر شوخ زباں ہے دلِ دیوانہ ترا

شکر شکوے کو کیا حُسنِ ادا سے تُو نے
ہم سُخن کر دیا بندوں کو خدا سے تُو نے

ہم تو مائل بہ کرم ہیں کوئی سائل ہی نہیں
راہ دکھلائیں کسے؟ رہروِ منزل ہی نہیں
تربیت عام تو ہے ، جوہرِ قابل ہی نہیں
جس سے تعمیر ہو آدم کی ، یہ وہ گِل ہی نہیں

کوئی قابل ہو تو ہم شان کئی دیتے ہیں
ڈُھونڈنے والوں کو دُنیا بھی نئی دیتے ہیں

ہاتھ بے زور ہیں ، الحاد سے دل خُوگر ہیں
اُمتی باعثِ رسوائی پیغمبر ہیں
بُت شکن اُٹھ گئے ، باقی جو رہے بُت گر ہیں
تھا براہیم پدر اور پسر آذر ہیں

بادہ آشام نئے ، بادہ نیا ، خم بھی نئے
حرمِ کعبہ نیا ، بُت بھی نئے ، تم بھی نئے

وہ بھی دِن تھے کہ یہی مایہء رعنائی تھا !
نازشِ موسمِ گُل ، لالہء صحرائی تھا !
جو مُسلمان تھا اللہ کا سَودائی تھا !
کبھی محبُوب تمہارا یہی ہرجائی تھا !

کسی یکجائی سے اَب عہدِ غُلامی کر لو
ملتِ احمدِ مُرسل کو مقامی کر لو

کِس قدر تُم پہ گراں صُبح کی بیداری ہے !
ہم سے کب پیار ہے ؟ ہاں نیند تُمہیں پیاری ہے
طبع آذاد پہ قیدِ رمضاں بھاری ہے
تمہیں کہہ دو یہی آئینِ وفا داری ہے ؟

قوم مذہب سے ہے ، مذہب جو نہیں تم بھی نہیں
جذبِ باہم جو نہیں ، محفلِ انجم بھی نہیں

جن کو آتا نہیں دُنیا میں کوئی فن ، تُم ہو
نہیں جس قوم کو پروائے نشیمن ، تُم ہو
بِجلیاں جِس میں ہوں آسُودہ وہ خرمن ، تُم ہو
بیچ کھاتے ہیں جو اسلاف کے مدفن ، تُم ہو

ہو نکو نام جو قبروں کی تجارت کر کے
کیا نہ بیچو گے جو مل جائیں صنم پتھر کے ؟

صفحہء دہر سے باطل کو مٹایا کس نے ؟
نوعِ انساں کو غلامی سے چُھڑایا کس نے ؟
میرے کعبے کو جبینوں سے بسایا کس نے ؟
میرے قرآن کو سینوں سے لگایا کس نے ؟

تھے تو آباء وہ تمہارے ہی ، مگر تم کیا ہو ؟
ہاتھ پر ہاتھ دھرے منتظرِ فردا ہو !

کیا گیا ؟ بہرِ مُسلماں ہے فقط وعدہء حُور
شکوہ بیجا بھی کرے کوئی تو لازم ہے شعور !
عدل ہے فاطرِ ھستی کا اَزل سے دستور
مُسلم آئیں ہوا کافر تو ملے حُور و قصور

تُم میں حُوروں کا کوئی چاہنے والا ہی نہیں
جلوہء طُور تو موجُود ہے مُوسٰی ہی نہیں

منفعت ایک ہے اِس قوم کی ، نقصان بھی ایک
ایک ہی سب کا نبی ، دین بھی ، ایمان بھی ایک
حرمِ پاک بھی ، اللہ بھی ، قُرآن بھی ایک
کچھ بڑی بات تھی ہوتے جو مُسلمان بھی ایک؟

فرقہ بندی ہے کہیں ، اور کہیں ذاتیں ہیں !
کیا زمانے میں پنپنے کی یہی باتیں ہیں ؟

کون ہے تارک آئینِ رسول مختار؟
مصلحت وقت کی ہے کس کے عمل کا معیار؟
کس کی آنکھوں میں سمایا ہے شعارِ اغیار؟
ہو گئی کس کی نگہ طرزِ سلف سے بیزار؟

قلب میں سوز نہیں، روح میں احساس نہیں
کچھ بھی پیغام محمد (ص) کا تمہیں پاس نہیں

جا کے ہوتے ہیں مساجد میں صف آراء تو غریب
زحمتِ روزہ جو کرتے ہیں گوارا، تو غریب
نام لیتا ہے اگر کوئی ہمارا، تو غریب
پردہ رکھتا ہے اگر کوئی تمہارا، تو غریب

امراء نشۂ دولت میں ہیں غافل ہم سے
زندہ ہے ملت بیضا غربا کے دم سے

واعظ قوم کی وہ پختہ خیالی نہ رہی
برق طبعی نہ رہی، شعلہ مقالی نہ رہی
رہ گئی رسم اذان روح ہلالی نہ رہی
فلسفہ رہ گیا، تلقین غزالی نہ رہی

مسجدیں مرثیہ خوان ہیں کہ نمازی نہ رہے
یعنی وہ صاحب اوصاف حجازی نہ رہے

شور ہے، ہو گئے دنیا سے مسلماں نابود
ہم یہ کہتے ہیں کہ تھے بھی کہیں مسلم موجود!
وضع میں تم ہو نصاریٰ تو تمدن میں ہنود
یہ مسلماں ہیں! جنہیں دیکھ کر شرمائیں یہود

یوں تو سید بھی ہو، مرزا بھی ہو، افغان بھی ہو
تم سبھی کچھ ہو، بتاؤ مسلمان بھی ہو!

دم تقریر تھی مسلم کی صداقت بے باک
عدل اس کا تھا قوی، لوث مراعات سے پاک
شجر فطرت مسلم تھا حیا سے نم ناک
تھا شجاعت میں وہ اک ہستی فوق الادراک

خود گدازی نم کیفیت صہبایش بود
خالی از خویش شدن صورت مینایش بود

ہر مسلماں رگِ باطل کے لیے نشتر تھا
اس کے آئینۂِ ہستی میں عملِ جوہر تھا
جو بھروسا تھا اسے قوت بازو پر تھا
ہے تمہیں موت کا ڈر، اس کو خدا کا ڈر تھا

باپ کا علم نہ بیٹے کو اگر ازبر ہو
پھر پسر قابل میراث پدر کیونکر ہو!

ہر کوئی مست مۓ ذوق تن آسانی ہے
تم مسلماں ہو! یہ انداز مسلمانی ہے؟
حیدری فقر ہے نہ دولت عثمانی ہے
تم کو اسلاف سے کیا نسبت روحانی ہے؟

وہ زمانے میں معزز تھے مسلماں ہو کر
اور تم خوار ہوئے تارک قرآں ہو کر

تم ہو آپس میں غضبناک، وہ آپس میں رحیم
تم خطاکار و خطابیں، وہ خطا پوش و کریم
چاہتے سب ہیں کہ ہوں اوج ثریا پہ مقیم
پہلے ویسا کوئی پیدا تو کرے قلب سلیم

تخت فغور بھی ان کا تھا، سریر کے بھی
یونہی باتیں ہیں کہ تم میں وہ حمیت ہے بھی؟

خود کشی شیوہ تمہارا، وہ غیور و خوددار
تم اخوت سے گریزاں، وہ اخوت پہ نثار
تم ہو گفتار سراپا، وہ سراپا کردار
تم ترستے ہو کلی کو، وہ گلستاں بہ کنار

اب تلک یاد ہے قوموں کو حکایت ان کی
نقش ہے صفحۂ ہستی پہ صداقت ان کی

مثل انجم افق قوم پہ روشن بھی ہوئے
بت ہندی کی محبت میں برہمن بھی ہوئے
شوق پرواز میں مہجور نشیمن بھی ہوئے
بے عمل تھے ہی جواں، دین سے بدظن بھی ہوئے

ان کو تہذیب نے ہر بند سے آزاد کیا
لا کے کعبے سے صنم خانے میں آباد کیا

قیس زحمت کش تنہائی صحرا نہ رہے
شہر کی کھائے ہوا، بادیہ پیمانہ نہ رہے
وہ تو دیوانہ ہے، بستی میں رہے یا نہ رہے
یہ ضروری ہے حجاب رُخ لیلا نہ رہے

گلہ جور نہ ہو، شکوۂ بیداد نہ ہو
عشق آزاد ہے، کیوں حسن بھی آزاد نہ ہو!

عہد نو برق ہے، آتش زن ہرخرمن ہے
ایمن اس سے کوئی صحرا نہ کوئی گلشن ہے
اس نئی آگ کا اقوام کہیں ایندھن ہے
ملت ختم رسل شعلہ بہ پیراہن ہے

آج بھی ہو جو براہیم کا ایماں پیدا
آگ کر سکتی ہے انداز گلستاں پیدا

دیکھ کر رنگ چمن ہو نہ پریشاں مالی
کوکب غنچہ سے شاخیں ہیں چمکنے والی
خس و خاشاک سے ہوتا ہے گلستاں خالی
گل بر انداز ہے خون شہداء کی لالی

رنگ گردوں کا ذرا دیکھ تو عنابی ہے
یہ نکلتے ہوئے سورج کی افق تابی ہے

امتیں گلشنِ ہستی میں ثمر چیدہ بھی ہیں
اور محروم ثمر بھی ہیں، خزاں دیدہ بھی ہیں
سینکڑوں نخل ہیں ، کاہیدہ بھی ، بالیدہ بھی ہیں
سینکڑوں بطنِ چمن میں ابھی پوشیدہ بھی ہیں

نخلِ اسلام نمونہ ہے بردمندی کا
پھل ہے یہ سینکڑوں صدیوں کی چمن بندی کا

پاک ہے گرد وطن سے سرِ داماں تیرا
تو وہ یوسف ہے کہ ہر مصر ہے کنعاں تیرا
قافلہ ہو نہ سکے گا کبھی ویراں تیرا
غیر یک بانگ درا کچھ نہیں ساماں تیرا

نخل شمع استی و در شعلہ ریشۂ تو
عاقبت سوز بود سایۂ اندیشۂ تو

تو نہ مٹ جائے گا ایران کے مٹ جانے سے
نشۂ مے کو تعلق نہیں پیمانے سے
ہے عیاں یورش تاتار کے افسانے سے
پاسباں مل گئے کعبے کو صنم خانے سے

کشتی حق کا زمانے میں سہارا تو ہے
عصر نو رات ہے، دھندلا سا تارا تو ہے

ہے جو ہنگامۂ بپا یورش بلغاری کا
غافلوں کے لیے پیغام ہے بیداری کا
تو سمجھتا ہے یہ ساماں ہے دل آزاری کا
امتحاں ہے ترے ایثار کا، خود داری کا

کیوں ہراساں ہے صہیل فرس اعدا سے
نور حق بجھ نہ سکے گا نفس اعدا سے

چشم اقوام سے مخفی ہے حقیقت تیری
ہے ابھی محفل ہستی کو ضرورت تیری
زندہ رکھتی ہے زمانے کو حرارت تیری
کوکب قسمت امکاں ہے خلافت تیری

وقت فرصت ہے کہاں، کام ابھی باقی ہے
نور توحید کا اتمام ابھی باقی ہے

مثل بو قید ہے غنچے میں، پریشاں ہو جا
رخت بردوش ہوائے چمنستاں ہو جا
ہے تنک مایہ تو ذرے سے بیاباں ہو جا
نغمۂ موج سے ہنگامۂِ طوفاں ہو جا!

قوت عشق سے ہر پست کو بالا کر دے
دہر میں اسم محمد سے اجالا کر دے

ہو نہ یہ پھول تو بلبل کا ترنم بھی نہ ہو
چمن دہر میں کلیوں کا تبسم بھی نہ ہو
یہ نہ ساقی ہو تو پھر مے بھی نہ ہو، خم بھی نہ ہو
بزم توحید بھی دنیا میں نہ ہو، تم بھی نہ ہو

خیمہ افلاک کا استادہ اسی نام سے ہے
نبض ہستی تپش آمادہ اسی نام سے ہے

دشت میں، دامن کہسار میں، میدان میں ہے
بحر میں، موج کی آغوش میں، طوفان میں ہے
چین کے شہر، مراکش کے بیاباں میں ہے
اور پوشیدہ مسلماں کے ایمان میں ہے

چشم اقوام یہ نظارہ ابد تک دیکھے
رفعت شان رَفعَنَا لَکَ ذِکرَک دیکھے

مردم چشم زمین یعنی وہ کالی دنیا
وہ تمہارے شہداء پالنے والی دنیا
گرمی مہر کی پروردہ ہلالی دنیا
عشق والے جسے کہتے ہیں بلالی دنیا

تپش اندوز ہے اس نام سے پارے کی طرح
غوطہ زن نور میں ہے آنکھ کے تارے کی طرح

عقل ہے تیری سپر، عشق ہے شمشیر تری
مرے درویش! خلافت ہے جہاں گیر تری
ماسوا اللہ کے لیے آگ ہے تکبیر تری
تو مسلماں ہو تو تقدیر ہے تدبیر تری

کی محمد سے وفا تو نے تو ہم تیرے ہیں
یہ جہاں چیز ہے کیا، لوح و قلم تیرے ہیں

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

1 COMMENT

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)