Ishq Aur Maut Allama Iqbal

0
267
Allama Iqbal Poems

 

[adsense_inserter id=”5423″]

 

Suhaani Namud-e-Jahan Kee Ghari Thi
Tabbasum Feshan Zindagee Kee Kali Thi

Kaheen Mehar Ko Taaj-e-Zar Mil Raha Tha
Ata Chand Ko Chandnee Hu Rahee Thi
Seyah-e-Peyrhan Shaam Ko Day Rahey The
Sitaron Ko Talim-e-Tabindagi Thee
Kaheen Shakh-e-Hasti Ko Lagte Thay Patte
Kaheen Zindagi Kee Kali Phooti Thi
Farishty Sekhaty Thay Shabnum Ko Rona
Hansee Gul Ko Pahley Pehal Aa Rahee Thi
Ata Durd Hota Tha Shayar Kay Dil Ko
Khudi Tashna Kam-e-May-e-Bekhudee Thi
Uthi Awwal Awwal Ghata Kaali Kaali
Koi Hoor Choti Ko Kholay Khaari Thi

Zamin Ko Tha Dava Kay Men Aasman Hoon
Makan Kah Raha Tha Kay Men La-Makan Hoon

Gharaz Iss Kadar Yeh Nazara Tha Piyara
Key Nazaragi Ho Sarapa Nazaara

Malak Aazmaty Thay Perwaaz Apnee
Jabinon Sy Noor-e-Azal Aashkara

Farishta Tha aik, Ishq Tha Nam Jis Ka
Kay Thee Rahbari Uski Sab Ka Sahaara

Farishta Kay Putla Thaa Bay Tabeyon Ka
Malak Ka Malak Or PareY Ka Para

Pay-e-Sair FIrdous Ko Ja Raha Tha
Qaza Say Mela Rah Main Voh Qaza Ra
Ye Puchha Taira Nam Kiya, Kam Kiya Hey
Naheen Aankh Ko Deed Tairi Gawara
Hova Sun Kay Goya Qaza Ka Farishta
Ajal Hoon, Maira Kam Hey Aashkara

Uraati Hoon, Men Rakht-e-Hasti Kay Purzay
Bujhaati Hoon Men Zindagi Ka Sharara

Mairi Aankh Main Jadu-e-Naysti Hey
Paya-e-Fana Hey Issi Ka Ishara
Mager Ek Hasti Hey Dunya Main Aeysi
Voh Aatish Hey Men Samney Uske Para
Sharar Ban Kay Raihti Hey Insan Kay Dil Men
Voh Hey Noor-e-Mutliq Kee Aankhon Ka Tara

Tapakti Hey Aankhon Sey Ban Ban Ke Aansu
voh Aansu Kay Ho Jin Ki Talkhee Gavara
Suni Ishq Nay Guftugu Jub Qaza Kee
Hansi Uss Kay Lub Per Hovi Aashkara

Giri Uss Tabbassum Ke Bijli Ajal Per
Andhaire Ka Ho Noor Main Kiya Guzaara

Baqa Ko Jo Daikha Fana Ho Gayi Voh
Qaza Thee, Shakar-e-Kaza Ho Gayi Voh

سہانی نمود جہاں کی گھڑی تھی
تبسم فشاں زندگی کی کلی تھی
کہیں مہر کو تاج زر مل رہا تھا
عطا چاند کو چاندنی ہو رہی تھی
سیہ پیرہن شام کو دےرہے تھے
ستاروں کو تعلیم تابندگی تھی
کہیں شاخ ہستی کو لگتے تھے پتے
کہیں زندگی کی کلی پھوٹتی تھی
فرشتے سکھاتے تھے شبنم کو رونا
ہنسی گل کو پہلے پہل آرہی تھی
عطا درد ہوتا تھا شاعر کے دل کو
خودی تشنہ کام مے بے خودی تھی
اٹھی اول اول گھٹا کالی کالی
کوئ حور چوٹی کو کھولے کھڑی تھی
زمیں کو تھا دعوی کہ میں آسماں ہوں
مکاں کہہ رہا تھا کہ میں لا مکاں ہوں
غرض اس قدر یہ نظارہ تھا پیارا
کہ نظارگی ہو سراپا نظارا
ملک آزماتے تھے پرواز اپنی
جبینوں سے نور ازل آشکارا
فرشتہ تھا اک، عشق تھا نام جس کا
کہ تھی رہبری اس کی سب کا سہارا
فرشتہ کہ پتلا تھا بے تابیوں کا
ملک کا ملک اور پارے کا پارا
پے سیر فردوس کو جا رہا تھا
قضا سے ملا راہ میں وہ قضارا
یہ پو چھا ترا نام کیا، کام کیا ہے
نہیں آ نکھ کو دید تیری گوارا
ہوا سن کہ گویا قضا کا فرشتہ
اجل ہوں، مرا کام ہے آشکارا
اڑاتی ہوں میں رخت ہشتی کے پرزے
بجھاتی ہوں میں زندگی کا شرارا
مری آنکھ میں جادوۓ نیستی ہے
پیام فنا ہے اسی کا شرارا
مگر ایک ہستی ہے دنیا میں ایسی
وہ آتش ہے میں سامنے اس کے پارا
شرر بن کے رہتی ہے انساں کے دل میں
وہ ہے نور مطلق کی آنکھوں کا تارا
ٹپکتی ہے آنکھوں سے بن بن کے آنسو
وہ آنسو کہ ہو جن کی تلخی گوارا
سنی عشق نے گفتگو جب قضا کی
ہنسی اس کے لب پر ہوئ آشکارا
گری اس تبسم کی بجلی اجل پر
اندھیرے کا ہو نور میں کیا گزارا
بقا کو جو دیکھا فنا ہو گئ وہ
قضا تھی، شکار قضا ہو گئ وہ

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)