Mohabbat Poetry By Amjad Islam Amjad

0
683
amjad islam amjad

Mohabbat Oss Ki Surat Poetry Amjad Islam Amjad

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

mohabbat os ki soorat
piasi pankhari k hont ko seraab karti he
gulo ki aastino me anokhay rang bharti he
sahar k jhatpatay me gungunati muskurati he
mohabbat k dino me dasht bhi mehsoos hota he
kisi firdos ki soorat…………………..mohabbat os ki soorat
mohabbat abar ki soorat
dilo ki sarzameen pey ghir k aati aur barasti he
chaman ka zarra zarra jhoomta he muskurata he
azal ki be namoo matti main sabza sar uthata he
jo dil hian qabar ki soorat……………….mohabbat abar ki soorat
mohabbat aag ki soorat
bujhay seeno main jalti he ,to dil bedaar hotay hain
mohabbat ki tapish me kuch ajab israar hote hain
ke ..jitna ye bharakti he ,uroos-e-jan mehakti he
dilo k sahilo pe jama hoti aur bikharti he
mohabbat jhaag ki soorat…..
mohabbat khuwab ki soorat
nigaho me utarti he kisi mahtaab ki soorat
sitaaray aarzoo k is terhaa se jagmagatay hain
k pehchani nahi jati dil-e-betaab ki soorat
mohabbat k shajar par khuwab k panchi utartay hain
to shaakhain jaag uthti hain
thakey haarey sitarey jab zameen se baat kartey hain
to kab ki muntazir aankho me……..shammai jaag uthti hain
mohabbat in me jalti he charagh-e-aab ki soorat
mohabbat aag ki soorat
mohabbat dard ki soorat
guzishta mosamo ka istaaraa ban k rehti he
shabaan-e-hijar me roshan sitara ban k rehti he
mandiro par charagho ki loyai jab thartharati hain
nagar main na umeedi ki hawayai sansanati hain
gali main jab koi aahat koi saya nahi rehta
dukhei dil k liye jab koi bhi dhoka nahi rehta
ghamo k bojh se jab tootney lagtay hain shaanay to
ye un pay haath rakhti he
kisi hamdard ki soorat
guzar jatay hain saaray qaafilay jab dil ki basti se
fiza me tairti he dair tak……yeh gard ki soorat
mohabbat dard ki soorat

 

[adsense_inserter id=”5423″]

 

Mohabbat Poetry Amjad Islam Amjad in Urdu Written:

محبت اوس کی صورت
پیاسی پنکھڑی کے ہونٹ کو سیراب کرتی ہے
گلوں کی آستینوں میں انوکھے رنگ بھرتی ہے
سحر کے جھٹپٹے میں گنگناتی، مسکراتی جگمگاتی ہے
محبت کے دنوں میں دشت بھی محسوس ہوتا ہے
کسی فردوس کی صورت
محبت اوس کی صورت

محبت ابر کی صورت
دلوں کی سر زمیں پہ گھر کے آتی ہے اور برستی ہے
چمن کا ذرہ زرہ جھومتا ہے مسکراتا ہے
ازل کی بے نمو مٹی میں سبزہ سر اُٹھاتا ہے
محبت اُن کو بھی آباد اور شاداب کرتی ہے
جو دل ہیں قبر کی صورت
محبت ابر کی صورت

محبت آگ کی صورت
بجھے سینوں میں جلتی ہے تودل بیدار ہوتے ہیں
محبت کی تپش میں کچھ عجب اسرار ہوتے ہیں
کہ جتنا یہ بھڑکتی ہے عروسِ جاں مہکتی ہے
دلوں کے ساحلوں پہ جمع ہوتی اور بکھرتی ہے
محبت جھاگ کی صورت
محبت آگ کی صورت

محبت خواب کی صورت
نگاہوں میں اُترتی ہے کسی مہتاب کی صورت
ستارے آرزو کے اس طرح سے جگمگاتے ہیں
کہ پہچانی نہیں جاتی دلِ بے تاب کی صورت
محبت کے شجر پرخواب کے پنچھی اُترتے ہیں
تو شاخیں جاگ اُٹھتی ہیں
تھکے ہارے ستارے جب زمیں سے بات کرتے ہیں
تو کب کی منتظر آنکھوں میں شمعیں جاگ اُٹھتی ہیں
محبت ان میں جلتی ہے چراغِ آب کی صورت
محبت خواب کی صورت

محبت درد کی صورت
گزشتہ موسموں کا استعارہ بن کے رہتی ہے
شبانِ ہجر میںروشن ستارہ بن کے رہتی ہے
منڈیروں پر چراغوں کی لوئیں جب تھرتھر اتی ہیں
نگر میں نا امیدی کی ہوئیں سنسناتی ہیں
گلی جب کوئی آہٹ کوئی سایہ نہیں رہتا
دکھے دل کے لئے جب کوئی دھوکا نہیں رہتا
غموں کے بوجھ سے جب ٹوٹنے لگتے ہیں شانے تو
یہ اُن پہ ہاتھ رکھتی ہے
کسی ہمدرد کی صورت
گزر جاتے ہیں سارے قافلے جب دل کی بستی سے
فضا میں تیرتی ہے دیر تک یہ
گرد کی صورت
محبت درد کی صورت

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)