Kisi Ki Aankh Jo Purnam Nahi Hai

0
36
amjad islam amjad

kisi ki aankh jo purnam nahi hai
na samajho ye ke us ko gham nahi hai

sawaad-e-dard me tanha kharaa hoo
palat jaaoo magar mausam nahi hai

samajh me kuch nahi aata kisi ke
agarche guftagoo mubaham nahi hai

sulagta kyoo nahi taareek jangal
talab ki lau agar maddham nahi hai

ye basti hai sitam parawar digaan ki
yahaa koi kisi se kam nahi hai

kinaara doosra dariya ka jaise
wo saathi hai magar mahram nahi hai

dilo ki raushni bujhane na dena
wajuud-e-teeragi mahkam nahi hai

mai tum ko chaah kar pachhta raha hoo
koi is zaKhm ka maraham nahi hai

jo koi sun sake ‘Amjad’ to suna dena
ba-juz ek baaz gasht-e-gham nahi hai

Amjad Islam Amjad

In Urdu Written:

کسی کی آنکھ جو پر نم نہیں ہے
نہ سمجھو یہ کہ اس کو غم نہیں ہے
سواد درد میں تنہا کھڑا ہوں
پلٹ جاؤں مگر موسم نہیں ہے
سمجھ میں کچھ نہیں آتا کسی کی
اگر چہ گفتگو مبہم نہیں ہے
سلگتا کیوں نہیں تاریک جنگل
طلب کی لو اگر مدھم نہبي ہے
یہ بستی ہے ستم پرور دگان کی
یہاں کوئ کسی سے کم نہیں ہے
کنارہ دوسرے دریا کا جیسے
وہ ساتھی ہے مگر محرم نہیں ہے
دلوں کی روشنی بجھنے نہ دینا
وجود تیرگی محکم نہیں ہے
میں تم کو چاہ کر پچھتا رہا ہوں
کوئ اس زخم کا مرحم نہیں ہے
جو کوئ سن سکے امجد تو سنا دینا
بے جز اک بازگشت غم نہیں ہے

امجد اسلام امجد

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)