Tumhe Mujhse Mohabbat Hai Poetry

0
507
amjad islam amjad

Tumhain Mujhse Muhabbat Hai Poetry by Amjad Islam Amjad

Mohabbat ki tabiyat me
Ye kaisa bachpana qudrat ne rakkha hai

Ke jitni purani jitni bhi mazboot ho jaaye
Ise taaeed-e-taaza ki zaroorat phir bhi rahti hai
Yaqeen ki aakhri had tak dilo me lahlahaati ho
Nigaaho se tapakati ho lahoo me jagmagaati ho
Hazaaro tarah se dilkash haseen haale banaati ho
Use izhaar ke lafzo ki haajat phir bhi rahti hai

Mohabbat maangati hai yoon gawaahi apne hone ki
Ke jaise tifl-e-saadaa shaam ko ik beej boye
Aur shab me bauraa uthe
Zameen ko khod kar dekhe
Ke pauda ab kahaa tak hai

Mohabbat ki tabiyat me ajab takraar ki khoo hai
Ke ye iqraar ke lafzo ko sunane se nahi thakti
Bichharne ki ghari ho yaa koi milne ki sa’at ho
Ise bas ek hi dhun hai
Kaho mujh se mohabbat hai
Kaho mujh se mohabbat hai

Kuchh aisi besakooni hai wafa ki sarzameeno me
Ke jo ahal-e-mohabbat ko sadaa bechain rakhti hai
Ke jaise phool me khushboo ke jaise haath me taaraa
Ke jaise shaam ka taaraa
Mohabbat karne waalo ki sahar raato me rahti hai
Gumnaam ke shaakhcho me aashiyaa banataa hai ulfat ka
Ye ain wisaal me bhi hijr ke khadsho me rahti hai

Mohabbat ke musaafir zindagi jab kaat chukate hai
Thakan ki kirchiyaa chunte wafaa ki ajrake pahane
Samay ki rahguzar ki aakhri sarhad pe rukte hai
To koi doobti saanso ki dori thaam ker
Dheere se kahtaa hai
Ke ye sach hai na
Hamaari zindagi ik doosre ke naam likhi thi
Dhundhalka saa jo aankho ke qareeb-o-door phaila hai
Isi ka naam chaahat hai
Tumhe mujh se mohabbat thi
Tumhe mujh se mohabbat hai

Mohabbat ki tabiyat me
Ye kaisa bachpanaa qudrat ne rakkha hai

Amjad Islam Amjad

تمہیں مجھ سے محبت ہے

محبت کی طبیعت میں
یہ کیسا بچپنا قدرت نے رکھا ہے
کہ جتنی بھی پرانی جتنی بھی مظبوط ہو جاۓ
اسے تائید تازہ کی ضرورت پھر بھی رہتی ہے
یقین کی آخری حد تک دلوں میں لہلہاتی ہو
نگاہوں سے ٹپکتی ہولہو میں جگمگاتی ہو
ہزاروں طرح سے دلکش حسین ہالے بناتی ہو
اسے اظہار کے لفظوں کی حاجت پھر بھی رہتی ہے
محبت مانگتی ہے یوں گواہی اپنے ہونے کی
کہ جیسے طفل سادہ شام کو ایک بیج بوۓ
اور شب میں بورا اٹھے
زمین کو کھود کر دیکھے
کہ پودا اب کہاں تک ہے
محبت کی طبیعت میں عجب تکرار کی خو ہے
کہ یہ اقرار کے لفظوں کو سنانے سے نہیں تھکتی
بچھڑنے کی گھڑی ہو یا کوئ ملنے کی ساعت ہو
اسے بس ایک ہی دھن ہے
کہو مبھ سے محبت ہے
کہو مبھ سے محبت ہے
کچھ ایسی بے سکونی ہےوفا کی سر زمینوں میں
کہ جو اہل محبت کوسدا بے چین رکھتی ہے
کہ جیسے پھول میںخوشبو کہ جیسے ہاتھ میں تارا
کہ جیسے شام کا تارا
محبت کرنے والوں کیسحر راتوں میں رہتی ہے
گمنام کے شاخچوں میںآشیاں بناتا ہے الفت کا
یہ عین وصال میں بھی ہجرکے خدشوں میں رہتی ہے
محبت کے مسافرزندگی جب کاٹ چکتے ہیں
تھکن کی کرچیاں چنتے وفا کی اجرکیں پہنے
سمے کی راہ گزر کی آخری سرحد پہ رکتی ہیں
تو کوئ ڈوبتی سانسوں کی ڈوری تھام کر
دھیرے سے کہتا ہے
کہ یہ سچ ہے نہ
ہماری زندگی ایک دوسرے کے نام لکھی تھی
دھندلکا سا جو آنکھوں کے قریب و دور پھیلا ہے
اسی کا نام چاہت ہے
تمہیں مجھ سے محبت تھی
تمہیں مجھ سے محبت ہے
محبت کی طبیعت میں
یہ کیسا بچپنا قدرت نے رکھا ہے

امجد اسلام امجد

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)