Sach He Hamee Ko Aap Ke

0
115

sach he hamee ko aap ke shikway bajaa na they
beshak sitam janaab ke sab dostaana they
haa jo jafaa bhi aap ne ki qa’idey se ki
haa ham hi kaar band-e-asool-e-wafa na they
aaye to yoo ke jaisey hamesha they meharbaa
bhooley to yoo ke goia kabhi aashna na they
kiu daad-e-gham ham ne talab ki buraa kia
ham se jahaa me kushta-e-gham aur kia na they
gar fikar-e-zakham ki to khatawaar hai ke ham
kiu mahw-e-madh-e-khoobi-e-teg-e-adaa na they
har chaaragar ko chaaragari se gurez tha
warna hamai jo dukh they bohat la-dawa na they
lab per he talkhi-e-mei-e-ayaam warna faiz
ham talkhi-e-kalaam pe maail zara na they

سچ ہے ہمیں کو آپ کے شکوے بجا نہ تھے
بے شک ستم جناب کے سب دوستانہ تھے

ہاں، جو جفا بھی آپ نے کی قاعدے سے کی
ہاں، ہم ہی کاربندِ اُصولِ وفا نہ تھے

آئے تو یوں کہ جیسے ہمیشہ تھے مہرباں
بُھولے تو یوں کہ گویا کبھی آشنا نہ تھے

کیوں دادِ غم ہمیں نے طلب کی، بُرا کیا
ہم سے جہاں میں کشتۂ غم اور کیا نہ تھے

گر فکرِ زخم کی تو خطاوار ہیں کہ ہم
کیوں محوِ مدح خوبیِ تیغِ ادا نہ تھے

ہر چارہ گر کو چارہ گری سے گریز تھا
ورنہ ہمیں جو دکھ تھے ، بہت لادوا نہ تھے

لب پر ہے تلخیِ مئے ایّام، ورنہ فیض
ہم تلخیِ کلام پہ مائل ذرا نہ تھے

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)