Ab Bhala Ghar Chor Ke Kiya Karte

0
45
parveen shakir poetry

Ab Bhala Ghar Chor Ke Kiya Karte Parveen Shakir

 

 

AB BHALA CHORH KE GHAR KIA KARTAY
SHAAM KE WAQT SAFAR KIA KARTAY
TERI MASROOFIATAIN JAANTAY HAIN
APNE AANAY KI KHABAR KIA KARTAY
JAB SITAARAY HEE NAHI MIL PAAYE
LE KE HAM SHAMS-O-QAMAR KIA KARTAY
WO MUSAAFIR HEE KHULI DHOOP KA THA
SAAYE PHAILA KE SHAJAR KIA KARTAY
KHAAK HEE AWWAL-O-AAKHIR THEHRI
KAR KE ZARRAY KO GOHAR KIA KARTAY
RAAYE PHELE SE BANA LI TU NE
DIL MEIN AB HAM TERE GHAR KIA KARTAY
ISHQ NE SAARAY SALEEQAY BAKHSHAY
HUSN SE KASB-E-HUNAR KIA KARTAY

 

Ab Bhala Ghar Chor Ke Kiya Karte by Parveen Shakir in Urdu

اب بھلا چھوڑ کے گھر کیا کرتے
شام کے وقت سفر کیا کرتے

تیری مصروفیتیں جانتے ہیں
اپنے آنے کی خبر کیا کرتے

جب ستارے ہی نہیں مل پائے
لے کے ہم شمس و قمر کیا کرتے

وہ مسافر ہی کھلی دھوپ کا تھا
سائے پھیلا کے شجر کیا کرتے

خاک ہی اوّل و آخر ٹھہری
کر کے ذرّے کو گہر کیا کرتے

رائے پہلے سے بنا لی تو نے
دل میں اب ہم تیرے گھر کیا کرتے

عشق نے سارے سلیقے بخشے
حسن سے کسبِ ہنر کیا کرتے

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)