Apne Seene Se Lagai Hui Umeed Ki Laash

0
53
sahir ludhiyanvi poetry

 

 

Apne Sine Se Lagaye Huye Ummid Ki Laash
Muddato Zeest Ko Naashaad Kiya Hai Mai Ne
Tu Ne To Ek Hi Sadme Se Kiya Tha Do Chaar
Dil Ko Har Tarah Se Barbaad Kiyaa Hai Mai Ne
Jab Bhi Raaho Me Nazar Aaye Hariri Malboos
Sard Aaho Se Tujhe Yaad Kiya Hai Mai Ne

Aur Ab Jab Ke Meri Rooh Ki Pahnaai Me
Ek Sunsaan Si Maghmoom Ghata Chhaai He
Tu Damakate Huey Aariz Ki Shuaayen Lekar
Gul_Shuda Shammain Jalane Ko Chali Aaai He

Meri Mahaboob Ye Hangaamaa-e-Tajdid-e-Wafaa
Meri Afsurda Jawani Ke Liye Raas Nahi
Mai Ne Jo Phool Chune The Tere Qadamo Ke Liye
Un Ka Dhundhla-Saa Tasawwur Bhi Mere Paas Nahi

Ek Yakh_Basta Udasi He Dil-O-Jaa Pe Muhit
Ab Meri Rooh Me Baaqi He Na Ummid Na Josh
Reh Gaya Dab Ke Giraa_Baar Salaasil Ke Tale
Meri Darmaandaa Jawani Ki Umango Ka Kharosh

 

 


اپنے سینے سے لگاۓ ہو ۓ امید کی لاش

مدتوں زیست کو ناشاد کیا ہے میں نے

تو نے تو ایک ہی صدمے سے کیا تھا دو چار

دل کو ہر طرح سے برباد کیا ہے میں نے

جب بھی راہوں میں نظر آۓ ہریری ملبوس

سرد آہوں سے تجھے یاد کیا ہے میں نے

اور اب جبکہ میری روح کی پہنائ میں

ایک سنسان سی مغموم گھٹا چھائ ہے

تو دمکتے ہوۓ آرز کی شعاعیں لے کر

گل شدہ شمعیں جلانے کو چلے آۓ ہیں

میرے محبوب یہ ہنگامۂ تجدید وفا

میری افسردہ جوانی کے لیۓ راس نہیں

میں نے جو پھول چنے تھے تیرے قدموں کے لیۓ

ان کا دھندھلا سا تصور بھی میرے پاس نہیں

اک یخ بستہ اداسی ہے دل و جاں پہ محیط

اب میری روح میں باقی ہے نہ امید نہ جوش

رہ گیا دب کے گراں بار سلاسل کے تلے

میری درماندہ جوانی کی امنگوں کا خروش

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)