Woh Subah Kabhi To Aayegi Poem

0
64
sahir ludhiyanvi poetry

 

 

Wo Subha Kabhi to Aayegi Lyrics

Wo Subah Kabhi To Aayegi
In Kaali Sadiyo Ke Sar Se Jab Raat Ka Aanchal Dhalakega
Jab Dukh Ke Baadal Pighalege Jab Sukh Ka Saagar Jhalakega
Jab Ambar Jhoom Ke Naachega Jab Dharati Nagme Gaayegi

Wo Subah Kabhi To Aayegi
Jis Subah Ki Khaatir Jug Jug Se Ham Sab Mar Mar Ke Jeete Hai
Jis Subah Ke Amrit Ki Dhun Me Ham Zahar Ke Pyaale Peete Hai
In Bhooki Pyaasi Rooho Par Ik Din To Karam Faramaayegi

Wo Subah Kabhi To Aayegi
Maana Ke Abhi Tere Mere Aramaano Ki Qeemat Kuch Bhi Nahi
Mitti Ka Bhi Hai Kuch Mol Magar Insaano Ki Qeemat Kuch Bhi Nahi
Insaano Ki Izzat Jab Jhoothe Sikko Me Na Toli Jaayegi

Wo Subah Kabhi To Aayegi
Daulat Ke Liye Jab Aurat Ki Ismat Ko Na Becha Jaayega
Chaahat Ko Na Kuchlaa Jaayega, Izzat Ko Na Becha Jaayega
Apani Kaali Karatooto Par Jab Ye Duniya Sharmaayegi

Wo Subah Kabhi To Aayegi
Beetenge Kabhi To Din Aakhir Ye Bhook Ke Aur Bekaari Ke
Tuutenge Kabhi To But Aakhir Daulat Ki Ijaaraadaari Ke
Jab Ek Anokhi Duniya Ki Buniyaad Uthaai Jaayegi

Wo Subah Kabhi To Aayegi
Majaboor Burhaapa Jab Sooni Raaho Ki Dhool Na Phankega
Masoom Larakpan Jab Gandi Galiyo Me Bheek Na Maangega
Haq Maangane Waalo Ko Jis Din Sulii Na Dikhaai Jaayegi

Wo Subah Kabhi To Aayegi
Faaaqo Ki Chitaao Par Jis Din Insaan Na Jalaaye Jaayenge
Siine Ke Dahakate Dozakh Me Aramaan Na Jalaaye Jaayenge
Ye Narak Se Bhi Gandii Duniyaa, Jab Swarg Banaai Jaayegi

Wo Subah Kabhi To Aayegi
Jis Subah Ki Khaatir Jug Jug Se Ham Sab Mar Mar Ke Jeete Hai
Jis Subah Ke Amrit Ki Dhun Me Ham Zahar Ke Pyaale Peete Hai
Wo Subah Na Aaye Aaj Magar, Wo Subah Kabhi To Aayegi
Wo Subah Kabhi To Aayegi

 

 

وہ صبح کبھی تو آے گی
ان کالی صدیوں کے سر سے جب رات کا آنچل ڈھلکے گا
جب دکھ کےبادل پگھلیں گیں جب سکھ کا ساگر جھلکے گا
جب امبر جھوم کے ناچے گا جب دھرتی نغمے گاۓ گی

وہ صبح کبھی تو آے گی
جس صبح کی خاطر جگ جگ سے ہم سب مر مر کے جیتے ہیں
جس صبح کی امرت کی دھن میں ہم زہر کے پیالے پیتے ہیں
ان بھوکی پیاسی روحوں پر اک دن تو کرم فرماۓ گی

وہ صبح کبھی تو آے گی
مانا کہ ابھی تیرے میرے ارمانوں کی قیمت کچھ بھی نہیں
مٹی کا بھی ہے کچھ مول مگر انسانوں کی قیمت کچھ بھی نہیں
انسانوں کی عزت جب جھوٹے سکوں میں نہ تولی جاۓ گی

وہ صبح کبھی تو آے گی
دولت کے لیۓ جب عورت کی عصمت کو نہ بیچا جاۓ گا
چاہت کو نہ کچلا جاۓ گا، عزت کو نہ بیچا جاۓ گا
اپنی کالی کرتوتوں پر جب یہ دنیا شرماۓ گی

وہ صبح کبھی تو آے گی
بیتے کیں کبھی تو دن یہ بھوک کے اور بھکاری کے
ٹوٹیں گے کبھی تو بت آخردولت کی اجارہ داری کے
جب اک انوکھی دنیا کی بنیاد اٹھائ جاۓ گی

وہ صبح کبھی تو آے گی
مجبور بڑھاپا جب سونی راہوں کی دھول نہ پھانکے گا
معصوم لڑکپن جب گندی گلیوں میں بھیک نہ مانگے گا
حق مانگنے والوں کو جس دن سولی نہ دکھائ جاۓ گی

وہ صبح کبھی تو آے گی
فاقوں کی چتاؤں پر جس دن انسان نہ جلاۓ جائں گے
سینے کے دھڑکتے دوزخ میں ارماں نہ جلاۓ جائں گے
یہ نرک سے بھی گندی دنیا، جب سورگ بنائ جاۓ گی

وہ صبح کبھی تو آے گی
جس صبح کی خاطر جگ جگ سے ہم سب مر مر کے جیتے ہیں
جس صبح کی امرت کی دھن میں ہم زہر کے پیالے پیتے ہیں
وہ صبح نہ آۓ آج مگر، وہ صبح کبھی تو آۓ گی

وہ صبح کبھی تو آے گی

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)