Jab Kabhi Unki Tawajjuh Mein Kami Payi Gai

0
220
sahir ludhiyanvi poetry

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

Jab kabhi un ki Tawajjuh mei kami pai gai,
Az-sar-e-nau Dastan-e-shauq dohraai gai,
Bik gaye Jab taire lab Phir tujh ko kia Shikwa agar,
Zindgaani baada o Saaghar Se behlaai gai,
Ae gham-e-dunia tujhe Ka iilm taire Wastay,
Kin bahaano Se tabiat raah main lai Gai,
Hum karain Tark-e-wafa acha Chalo yun hi Sahi,
Aur agar Tark-e-wafa se bhi na Ruswaai gai,
Keise keise Chasm o Aariz gard-e-gham Se bujh gai,
Keise keise Pekaron ki shaan-e-Zebaai gai,
Dil ki Dharkan me Tawazun aa Chala hai Khair ho,
Meri nazrain bujh gaiin ya Teri ranaai Gai,
Un ka Gham un ka Tasawur un ke Shikwe ab kahan,
Ab to ye Baatain bhi ae Dil ho gain aai gai,
Jurrat-e-insan pe go Tadeeb Ke pehrai Rahai,
Fitrat-e-insaan ko Kab zanjir pehnaai gai,
Arsaa-e-hasti mei ab Teesha-Zanon ka daor hai,
Rasm-e-changaizi uthi tauqer-e-daraai gai..

 

[adsense_inserter id=”5423″]

 

جب کبھی ان کی توجہ میں کمی پائ گئ
از سرنوداستان شوق دہرائ گئ
بک گۓ جب تیرے لب پھر تجھ کو کیا شکوہ اگر
زندگی بادہ و ساغر سے بہلائ گئ
اے عم دنیا تجھے کیا علم تیرے واسطے
کن بہانوں سے طبیعت راہ میں لائ گئ
ہم کریں ترک وفا اچھا چلو یوں ہی سہی
اور اگر ترک وفا سے بھی نہ رسوائ گئ
کیسے کیسے چشم و عارض گرد غم سے بجھ گۓ
کیسے کیسے پیکروں کی شان زیبائ گئ
دل کی دھڑکن میں توازن آ چلا ہے خیر ہو
میری نظریں بجھ گئیں یا تیری رعنائ گئ
ان کا غم ان کا تصور ان کے شکوے اب کہاں
اب تو یہ باتیں بھی اے دل ہو گئیں آئ گئ
جرات انسان پہ گو تادیب کی پہرائ رہی
فطرت انسان کو کب زنجیر پہنائ گئ
عرصہ ہستی میں اب تیشہ زنوں کا دور ہے
رسم چنگیزی اٹھی توقیر دارائ گئ

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)