Chalo Ek Baar Phir Se Ajnabi Ban Jaye Hum Dono

0
2180
sahir ludhiyanvi poetry

 

[adsense_inserter id=”5423″]

 

Chalo Ek Baar Phir Se Ajnabi Ban Jaein Hum Dono
Na Mein Tum Se Koi Umeed Rakhon Dil Nawazi Ki

Na Tum Meri Taraf Dekho Ghalat Andaz Nazron Se
Na Mere Dil Ki Dharkan Larkharae Meri Baton Se

Na Zahir Ho Tumhari Kas-ma-Kash Ka Raaz Nazron Se
Tumhein Bhi Koi Uljhan Rokti Hai Pesh-Qadmi Se

Mujhe Bhi Log Kehte Hein Ke Ye Jalwe Parae Hein
Mere Hum-Rah Bhi Ruswaiyan Hein Mere Mazi Ki

Tumhare Sath Bhi Guzri Hoi Raton Ke Saein Hein
Taaruf Rog Ban Jae To Us Ka Bholna Behtar

Taluq Bojh Ban Jae To Us Ka Torna Acha
Woh Afsana Jise Anjam Tak Lana Na-Mumkin Ho

Use Ek Khubsorat Mor De Kar Chorna Acha
Chalo Ek Baar Phir Se Ajnabi Ban Jaein Hum Dono

 

In Urdu Written:
چلو ایک بار پھر سے اجنبی بن جايئں ہم دونوں
نہ میں تم سے کوئ امید رکھوں دل نوازی کی
نہ تم میری طرف دیکھو غلط انداز نظروں سے
نہ میرے دل کی دھڑکن لڑکھڑا‎‎ۓ میری باتوں سے
نہ ظاہر ہو تمہاری کشمکش کا راز نظروں سے
تمہیں بھی کوئ الجھن روکتی ہے پیش قدمی سے
مجھے بھی لوگ کہتے ہیں کہ یہ جلوے پراۓ ہیں
میرے ہم راہ بھی رسوائیاں ہیں میرے ماضی کی
تمہارے ساتھ بھی گزری ہوئ راتوں کے ساۓ ہیں
تعارف روگ بن جاۓ تو اس کو بھولنا بہتر
تعلق بوجھ بن جاۓ تو توڑنا اچھا
وہ افسانہ جس انجام تک لانا نا ممکن ہو
اسے ایک خوبصورت موڑ دے کر چھوڑنا اچھا
چلو ایک بار پھر سے اجنبی بن جايئں ہم دونوں

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)