Taj Mahal By Sahir Ludhianvi

0
931
sahir ludhiyanvi poetry

Taaj tere liay aik mazahar-e-ulfat hi sahi
Tum ko is waadi-e-rangeen se aqeedat hi sahi

Mere mehboob kaheen or mila kar mujh se!
Bazam-e-shaahi me ghareebo ka guzar kia maani
Sabt jis raah pe ho satawat-e-shaahi ke nishaan
Us pe ulfat bhari rooho ka safar kia maani

Mere mehboob pas-e-pardaa-e-tasheer-e-wafa
Tuu ne satawat ke nishaano ko to dekha hota
Murda shaaho ke maqaabir se bahlewaali
Apne taareek makaano ko to dekha hota

Anginat logo ne dunia me muhabbat ki he
kon kehta hai k saadiq na the jazbe un ke
lekin un ke liye tashheer ka saamaan nahi
kyu ke wo log bhi apni hi tarah muflis the

Ye imaaraat-o-maqaabir ye faseelai, ye hisaar
mutal-qulhukm shahnshaaho ki azmat ke sutoon
daaman-e-dahar pe us rang ki gulkaari hai
jis me shaamil hai tere or mere ajdaad ka khoon

Mere mehboob! unhe bhi to muhabbat hogi
jinki sannaai ne bakhshi hai ise shakl-e-jameel
un ke pyaaro ke maqaabir rahe benaam-o-namood
aaj tak un pe jalaai na kisi ne qandeel

Ye chamanzaar ye jamna ka kinaaraa ye mahal
ye munaqqash dar-o-deewaar, ye mahraab ye taaq
ik shahanashaah ne dolat ka sahaaraa le kar
ham ghareebo ki muhabbat ka uraaya hai mazaak

Mere mehboob kahee aur milaa kar mujhse!

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

Taj Mahal by Sahir Ludhiyanvi in Urdu Written:

تاج تیرے لیے مظہر الفت ہی سہی

تم کو اس وادئ رنگین سے عقیدت ہی سہی

میرے محبوب کہیں اور ملا کر مجھ سے!

بزم شاہی میں غریبوں کا گزر کیا معنی

ثبت جس راہ پر ہو سطاوت شاہی کے نشان

اس پہ الفت بھری راہوں کا سفر کیا معنی

میرے محبوب پس پردہ تشہیر وفا

تو نے سطوت کے نشانوں کو دیکھا ہوتا

مردہ شاہوں کے مقابر سے بہنے والی

اپنے تاریک مکانوں کو تو دیکھا ہوتا

انگنت لوگوں نے دنیا میں محبت کی ہے

کون کہتا ہے کہ صادق نہ تھے جذبے ان کے

لیکن ان کے لیۓ تشہیر کا سامان نہیں

کیوں کہ وہ لوگ بھی اپنی ہی طرح مفلس تھے

یہ عمارات و مقابر یہ فصیلیں، یہ حصار

معطل کالحکم شہنشاہوں کی عظمت کے ستون

دامن دہر پہ اس رنگ کی گل کاری ہے

جس میں شامل ہے تیرے اور میرے اجداد کا خون

میرے محبوب! انہیں بھی تو محبت ہو گی

جس کی صنائ نے بخشی ہے اسے شکل جمیل

ان کے پیاروں کے مقابر رہے بے نام و نمود

آج تک ان پہ جلائ نہ کسی نے قندیل

یہ چمن زار، یہ جمنا کا کنارہ، یہ محل

یہ منقش درو دیوار، یہ محراب، یہ طاق

اک شہنشاہ نے دولت کا سہارا لے کر

ہم غریبوں کی محبت کا اڑایا ہے مزاق

میرے محبوب کہیں اور ملا کر مجھ سے!

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)