Mere Geet By Sahir Ludhianvi

0
84
sahir ludhiyanvi poetry

 

 
 

 

Mere Sarkash Taraane Sun Ke Duniya Ye Samajhti He
Ke Shayaid Mere Dil Ko Ishq Ke Nagmo Se Nafrat He
Mujhe Hangama-E-Jang-O-Jadal Me Kaif Milta He
Meri Fitrat Ko Khoon rezi Ke Afsaano Se Raghbat He
Meri Duniya Me Kuch Wuqat Nahi He Raqs-O-Naghme Ki
Mera Mahboob Naghma Shor-E-Aahang-E-Baghawat He
Magar Ai Kaash! Dekhe Wo Meri Pursoz Raato Ko
Mai Jab Taaro Pe Nazare Gaar kar Aansu Bahata Hu
Tasawur Banke Bhuli Waardate Yaad Aati He
To Soz-O-Dard Ki Shiddat Se Paharo Tilmilata Hu
Koi Khuwaabo Me Khuwabida Umango Ko Jagati He
To Apanii Zindagi Ko Maut Ke Pahalu Me Paata Hu
Mai Shaair Huu Mujhe Fitarat Ke Nazaro Se Ulfat He
Mera Dil Dushman-E-Naghma-Sarai Ho Nahi Sakta
Mujhe Insaaniyat Ka Dard Bhi Bakhsha He Qudrat Ne
Mera Maqsad Faqat Shola Navaai Ho Nahi Saktaa
Jawaa Hoo Mai Jawani Lagzisho Ka Ek Tufaan He
Meri Baato Me Rang-E-Paarsaai Ho Nahii Saktaa
Mere Sarkash Taraano Ki Haqiqat He To Itni He
K Jab Mai Dekhtaa Hoo Bhook Ke Maare Kisaano Ko
Garibo Ko, Mufliso Ko, Bekaso Ko, Besahaaro Ko
Sisakati Naaznino Ko, Tarapte Naujawaano Ko
Hakumat Ke Tashaddud Ko, Amaarat Ke Takabbur Ko
Kisi Ke Chitharo Ko Aur Shahanshaahi Khazaano Ko
To Dil Taab-E-Nishaat-E-Bazm-E-Ishrat La Nahi Saktaa
Mai Chahu Bhi To Khuwab-Aavaar Taraane Ga Nahi Sakta


میرے سر کش ترانے سن کے دنیا یہ سمجھتی ہے
کہ شاید میرے دل کو عشق کے نغموں سے نفرت ہے

مجھے ہنگامہ جنگ و جدل میں کیف ملتا ہے
میری فطرت کو خوںریزی کے افسانوں سے رغبت ہے

میری دنیا میں کچھ وقعت نہیں ہے رقص و نغمے کی
میرا محبوب نغمہ شور آہنگ بغاوت ہے

مگر اے کاش! دیکھے وہ میری پر سوز راتوں کو
میں جب تاروں پہ نظریں گاڑ کر آنسو بہاتا ہوں

تصور بن کے بھولی وارداتیں یاد آتی ہیں
تو سوز و درد کی شدت سے پہروں تلملاتا ہوں

کوئ خوابوں میں خوابیدہ امنگوں کو جگاتی ہیں
تو اپنی زندگی کو موت کے پہلو میں پاتا ہوں

میں شاعر ہوں مجھے فطرت کے نظاروں سے الفت ہے
میرا دل دشمن نغمہ سرائ ہو نہیں سکتا

مجھے انسانیت کا درد بھی بخشا ہے قدرت نے
میرا مقصد فقط شعلہ نوائ ہو نہیں سکتا

جواں ہوں میں جوانی لغزشوں کا ایک طوفان ہے
میری باتوں میں رنگ پارسائ ہو نہیں سکتا

میری سر کش ترانوں کی حقیقت ہے تو اتنی ہے
کہ جب میں دیکھتا ہوں بھوک کے مارے کسانوں کو

غریبوں کو، مفلسوں کو، بے کسوں کو، بے سہاروں کو
سسکتی نازنینوں کو، تڑپتے نوجوانوں کو

حکومت کے تشدد کو، امارت کے تکبر کو
کسی کے چیتھڑوں کو اور شہنشاہی خزانوں کو

تو دل تاب نشاط بزم عشرت لا نہیں سکتا
میں چاہوں بھی تو خواب آور ترانے گا نہیں سکتا

ساحر لدھیانوی

 

 

 
 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)