Sochta Hoon Ki Mohabbat Se Kinara Kar Loon

0
264
sahir ludhiyanvi poetry

sochta hoon ke mohabbat se kinaaraa kar loo
dil ko begaanaa-e-targheeb-o-tamanna kar loo
sochtaa hoo ke muhabbat hai junoon-e-raswaa
chand bekaar-se behoodaa khayaalo kaa hujoom
ek aazaad ko paaband banaane ki hawas
ek begaane ko apanaane ki saii-e-mauhuum
sochtaa hoo k muhabbat hai suroor-e-masti
iski tanweer me raushan hai fazaa-e-hasti
sochtaa hoo k muhabbat hai bashar ki fitrat
iska mit jaana, mitaa denaa bohat mushkil hai
sochtaa hoo k muhabbat se hai taabindaa hayaat
aap ye shama bujha dena bohat mushkil hai
sochataa hoo k muhabbat pe kari shartein hai
ik tamaddun mein musarrat pe bari shartien hai
sochataa hoo k muhabbat hai ik afasurdaa si laash
chaadar-e-izzat-o-naamuus mein kafnaai hui
daur-e-sarmaayaa ki raundi hui ruswaa hasti
dargah-e-mazahab-o-ikhlaaq se thukaraai hui
sochtaa hoo k bashar aur muhabbat ka junuu
aisi boseedaa tamaddun se hai ik kaar-e-zaboo
sochtaa hoo k muhabbat na bachegi zindaa
pesh-az-waqt k sar jaaye ye galati hui laash
yahi behtar hai k begaanaa-e-ulfat hokar
apane seene mein karoo jazb-e-nafrat ki talaash
aur saudaa-e-muhabbat se kinaaraa kar loo
dil ko begaanaa-e-taragheeb-o-tamannaa kar loo

 

[adsense_inserter d=”3100″]

 
سوچتا ہوں کہ محبت سے کنارہ کر لوں
دل کو بےگانۂ ترغیب و تمنا کر لوں
سوچتا ہوں کہ محبت ہے جنون رسوا
چند بے کار بے ہودہ خیالوں کا ہجوم
اک آ‍ذاد کو پابند بنانے کی ہوس
اک بے گانے کو اپنانے کی سعی موہوم
سوچتا ہوں کہ محبت ہے سرور مستی
اس کی تنوبر میں روشن ہے فضاۓ ہستی
سوچتا ہوں کہ محبت ہے بشر کی فطرت
اس کا مث جانا، مثا دینا بہت مشکل ہے
سوچتا ہوں کہ محبت سے ہے تابندہ حیات
آپ یہ شمع بجھا دینا بہت مشکل ہے
سوچتا ہوں کہ محبت پہ کڑی شرطیں ہیں
اک تمدن میں مسرت پہ بڑی شرطیں ہیں
سوچتا ہوں کہ محبت ہے اک افسردہ سی لاش
چادر عزت و ناموس میں کفنائ ہوئ
دور سرمایہ کی روندی ہوئ رسوا ہستی
درگاہ مذہب و اخلاق سے ثھکرائ ہوئ
سوچتا ہوں کہ بشر اور محبت کا جنوں
ایسے بوسیدہ تمدن سے ہے اک کار زبوں
سوچتا ہوں کہ محبت نہ بچے گی زندہ
پیش از وقت کہ سڑ جاۓ یہ گلتی ہوئ لاش
یہی بہتر ہے کہ بے گانۂ الفت ہو کر
اپنے سبنے میں کروں جذب نفرت کی تلاش
اور سوداۓ محبت سے کنارہ کر لوں
دل کو بےگانۂ ترغیب و تمنا کر لوں

 

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)