Noor Jahan Ke Mazar Par

0
57
sahir ludhiyanvi poetry

 

 

pahlu-e-shah me ye duKhtar-e-jamhur ki qabar
kitne gum_gushta fasaano ka pata deti he
kitne Khurez haqayq se uthati he naqaab
kitni kuchli hui jaano ka pata deti he

kaise maghrur shahanshaho ki taskin ke liye
saal_ha_saal hasinaao ke bazaar lage
kaise bahki hui nazaro ki taaish ke liye
surKh mahalo me jawaan jismo ke anbaar lage

sahmi sahmi si fizaao me ye wiraan marqad
itana Khaamosh he fariyad_kuna ho jaise
sard shaamo me hawa chiKh rahi he aise
rooh-e-taqadis-o-vafaa marsiya Khuwaa ho jaise

tu meri jaa hairat-o-hasarat se na daikh
ham me koi bhi jahaa noor-o-jahaangir nahi
tu mujhe chhor ke thukra ke bhi ja sakti he
tere hatho me mera sath he zanjir nahi

 


پہلوء شاہ میں یہ دختر جمہور کی قبر
کتنے گم گشتہ فسانوں کا پتا دیتی ہے
کتنے خونریز حقائق سے اٹھاتی ہے نقاب
کتنی کچلی ہوئ جانوں کا پتا دیتی ہے

کیسے مغرور شہنشاہوں کی تسکیں کے لئے
سال ہا سال حسیناؤں کے بازار لگے
کیسے بہکی ہوئ نظروں کی تائش کے لیۓ
سرخ محلوں میں جواں جسموں کے انبار لگے

سہمی سہمی سی فضاؤں میں یہ ویراں مرقد
اتنا خاموش ہے فریاد کنا ہو جیسے
سرد شاموں میں ہوا چیخ رہی ہے ایسے
روح تقدیس وفا مرثیہ خواں ہو جیسے

تو میری جاں حیرت و حسرت سے نہ دیکھ
ہم میں کوئ بھی جہاں نور و جہانگیر نہیں
تو مجھے چھوڑ کے ٹھکرا کے بھی جا سکتی ہے
تیرے ہاتھوں میں میرا ساتھ ہے زنجیر نہیں

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)