Ek Arzoo by Allama Iqbal

0
82
Allama Iqbal Poems

 

 

Dunya Kee Mahfilon Sey Ukta Gaya Hoon Ya Rub!
Kiya Lutf Anjuman Ka Jub Dil Hee Bhujh Gaya Ho

Sourish Sey Bhagta Hoon, Dil Dhundta Hey Maira
Aysa Sukoot Jis Per Taqreer Bhee Fida Ho

Merta Hun Khamshi Per, Ye Arzu Hey Mairi
Daman Main Koh k aik Chota Sa Jhonpara Ho

Azaad Fikar Sey Hun, Uzlat Main Din Guzaron
Duniya Key Ghum Ka Dil Sey Kanta Nikal Gaya Ho

Lazzat Surood Kee Ho Chiryon Key Chehchahon Main
Chashmey Kee Shourishon Main Baja Sa Baj Raha Ho

Gul Kee Kali Chatak Ker Peygham Dey Kisi Ka
Sagheer Zara Sa Goya Mujh Ko Jahan Numa Ho

Ho Hath Ka Sarhana, Sabzey Ka Ho Bechona
Sharmaye Jis Sey Jalvat, Khalvat Main Voh Ada Hee

Manoos Iss kadar Surat Sey Mairi Bulbul
Nanhe Sey Dil Main Uske Khatka Na Kuch Maira Ho

Sift Bandhe Dono Janib Boote Hrey Hrey Hon
Nadi Ka Saaf Paani Tasvir Ley Raha Ho

Ho Dil Fareb Aeysa Kuhsar Ka Nazara
Pani Bhee Mouj Bun Ker, Uth Uth Key Daikhta Ho

Aaghosh Main Zamin Kee Soya Hova Ho Sabza
Phir Phir Key Jhaareyon Main Pani Chamak Raha Ho

Pani Ko Chhu Rahi Ho Jhuk Jhuk Key Gul Kee Taihni
Jesey Hasin Koi Aaeyna Daikhta Ho

Mehndi Lagey Sooraj Jub Shaam Kee Dulhan Ko
Surkhee Liye Sunaihri Har Phool Ki Qaba Ho

Raaton Ko Chalny Waley Rah Jaeyn Thak Key Jis Dum
Umeed Unki Maira Toota Hova Deya Ho
Bijli Chamak Key Unko Kutiya Mairi Dikha Dey
Jub Aasman Pey Her Soo Badal Gheera Hova Ho
Pichle Pehar Kee Koeel, Voh Subah Ki Mouzan
Men Uska Hamnava Hoon, voh Mairi Humnava Ho

Kanon Pey Ho Na Maire Dair-o-Harum Ka Ehsan
Rozan Hee Jhonpari Ka Mujh Ko Sehar Numa Ho
Phuloun Ko Aaye Jis Dum Shabnam Vazoo Kerne
Rona Maira Vazoo Ho, Nala Mairi Dua Ho

Iss Khamashi Main Jaeyn Itne Buland Naaley
Taron Ke Qaafley Ko Mairi Sada Dra Ho

Her Dardmand Dil Ko Rona Maira Rula Dey
Behosh Jo Parey Hen, Shayad inhen Jaga Dey

دنيا کی محفلوں سے اکتا گيا ہوں يا رب
کيا لطف انجمن کا جب دل ہی بجھ گيا ہو
شورش سے بھاگتا ہوں ، دل ڈھونڈتا ہے ميرا
ايسا سکوت جس پر تقرير بھی فدا ہو
مرتا ہوں خامشی پر ، يہ آرزو ہے ميری
دامن ميں کوہ کے اک چھوٹا سا جھونپڑا ہو
آزاد فکر سے ہوں ، عزلت ميں دن گزاروں
دنيا کے غم کا دل سے کانٹا نکل گيا ہو
لذت سرود کی ہو چڑيوں کے چہچہوں ميں
چشمے کی شورشوں ميں باجا سا بج رہا ہو
گل کی کلی چٹک کر پيغام دے کسی کا
ساغر ذرا سا گويا مجھ کو جہاں نما ہو
ہو ہاتھ کا سرھانا سبزے کا ہو بچھونا
شرمائے جس سے جلوت ، خلوت ميں وہ ادا ہو
مانوس اس قدر ہو صورت سے ميری بلبل
ننھے سے دل ميں اس کے کھٹکا نہ کچھ مرا ہو
صف باندھے دونوں جانب بوٹے ہرے ہرے ہوں
ندی کا صاف پانی تصوير لے رہا ہو
ہو دل فريب ايسا کہسار کا نظارہ
پانی بھی موج بن کر اٹھ اٹھ کے ديکھتا ہو
آغوش ميں زميں کی سويا ہوا ہو سبزہ
پھر پھر کے جھاڑيوں ميں پانی چمک رہا ہو
پانی کو چھو رہی ہو جھک جھک کے گل کی ٹہنی
جيسے حسين کوئی آئينہ ديکھتا ہو
مہندی لگائے سورج جب شام کی دلھن کو
سرخی ليے سنہری ہر پھول کی قبا ہو
راتوں کو چلنے والے رہ جائيں تھک کے جس دم
اميد ان کی ميرا ٹوٹا ہوا ديا ہو
بجلی چمک کے ان کو کٹيا مری دکھا دے
جب آسماں پہ ہر سو بادل گھرا ہوا ہو
پچھلے پہر کی کوئل ، وہ صبح کی مؤذن
ميں اس کا ہم نوا ہوں ، وہ ميری ہم نوا ہو
کانوں پہ ہو نہ ميرے دير وحرم کا احساں
روزن ہی جھونپڑی کا مجھ کو سحر نما ہو
پھولوں کو آئے جس دم شبنم وضو کرانے
رونا مرا وضو ہو ، نالہ مری دعا ہو
اس خامشی ميں جائيں اتنے بلند نالے
تاروں کے قافلے کو ميری صدا درا ہو

ہر دردمند دل کو رونا مرا رلا دے
بے ہوش جو پڑے ہيں ، شايد انھيں جگا دے

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)