Shama by Allama Iqbal

0
51
Allama Iqbal Poems

 

 

Bazm-e-Jahan Men Main Bhee Hun Aey Shama! Dardmund
Feryaad Dar Gira Siftay Daana-e-Sapand

Di Eshq Nay Hararat-e-Sauz-e-Duron Tujhay
Or Gul Farosh-e-Ashk-e-Shafaq-Goon Keya Mojhay

Ho Shama-e-Bazam-e-Aysh Kay Shama-e-Mazar Tu
Her Haal Ashak-e-Ghum Say Rahee Hamkinar Tu
Yak Been Tairi Nazar Sift-e-Asheqan-e-Raz
Mairi Negah Maya-e-Ashoub-e-emtiaz

Kabhi Main, But kade Main Hey Yaksaan Tairi Zia
Men imtiaz-e-Dair-o-Harum Main Phansa Hova
Hey Shaan Aah Kee Taire Dood-e-Seyah Main
Posheeda Koi Dil Hey Tairi Jalwagah Main?
Julti Hey Tu Ke Bark-e-Tajjalli Say Door Hey
Bay-Durd Taire Souz Ko Samjhay Kay Noor Hey
Tu Jul Rahee Hey Or Tujhay Kuch Khaber Naheen
Beena Hey Or Souz-e-Darun Per Nazer Naheen

Men Josh-e-eztirab Say Seemabder Bhee
Agah-e-eztirab-e-Dil-e-Beqarar Bhee

Tha Ye Bhee Koi Naz Kisi Bay Niaz Ka
Ahsas Day Deya Mojhey Apney Gudaz Ka

Ye Agahee Mairi Mojhe Rakhti Hey By-Qarar
Khauwabida Iss Sherar Main Hen Aatish Kade Hazar

Ye Imtiaz-e-Riffat-o-Pasti Issi Say Hey
Gul Main Mahek, Sharab Main Musti Issi Say Hey

Bustaan-o-Bulbul-o-Gul-o-Boo Hey Ye Aagahi
Asul-e-Kashakash-e-Man-o-Tu Hey Ye Aagahi

Subha-e-Azul Jo Husan Hova Dilstan-e-ishq
Avaz-e-‘KUN’ Hovi Tapish Aamoz-e-Jan-e-Ishq
Ye Hukum Tha Kay Gulshan-e-‘KUN’ Kee Bahar Daikh
Ek Aankh Lay Ky Khauwab-e-Pareshan Hazar Daikh

Mujse Khaber Na Pooch Hejab-e-Wajood Kee
Sham-e-Firak Subah Thee Mairi Namood Kee

Voh Din Gaye Kay Qaid Sey Men Aashna Na Tha
Ziab-e-Darakht-e-Toor Maira Asheyaana Tha

Qaidi Hoon Or Qafas Ko Chaman Janta Hoon Men
Ghurbat Key Ghumkade Ko Vatan Janta HOOn Men

Yaad-e-Vatan Fasurdagi-e-Bey-Sabub Banee
Shouq-e-Nazer Kabhee, Kabhee Zouq-e-Talub Banee

Aey Shama! entihaye Fareb-e-Kheyal Daikh
Masjood-e-Sakinan-e-Faluk Ka Maal Daikh

Mazmoon Feraq Ka Hoon, Suraiya Nishan Hoon Men
Ahang-e-Taba-e-Nazim-e-Koun-o-Makan Hoon Men

Baandha Mojhey Jo Uss Ney To Chahi Mairi Namood
Tehreer Ker Deya Sir-e-Dewaan-e-Hast-o-Bood

Gohar Ko Musht-e-Khaak Main Raihna Pasand Hey
Bandish Agarchy Sust Hey, Mazmoon Buland Hey

Chashm-e-Ghalat Negar Kay Ye Sara Qasoor Hey
Aalam-e-Zahoor-e-Jalva-e-Zouq-e-Shaor Hey

Yeh Selsila Zaman-o-Makaan Ka, Kumand Hey
Touq-e-Gulooye Husan-e-Tamasha Pasand Hey

Manzil Ka Ishtiaq Hey, Gum Karda Rah Hoon
Aey Shama! Men Aseer-e-Faraib-e-Negah Hoon

Sayyaad Aap, Halqa-e-Daam-e-Sitam Bhee Aap
Baam-e-Harum Bhee, Taeer-e-Baam-e-Harum Bhee Aap!

Men Husan Key Ishq-e-Sarapa Gudaz Hoon
Khulta Naheen Key Naz Hoon Men Ya Niaz Hoon

Han, Aashnaey Lub Ho Na Raz-e-Kuhan Kaheen
Pher Chhirr Na Jaey Qissa-e-Dar-o-Rasan Kaheen,,

بزم جہاں ميں ميں بھی ہوں اے شمع! دردمند
فرياد در گرہ صفت دانہ سپند
دی عشق نے حرارت سوز دروں تجھے
اور گل فروش اشک شفق گوں کيا مجھے

ہو شمع بزم عيش کہ شمع مزار تو
ہر حال اشک غم سے رہی ہمکنار تو

يک بيں تری نظر صفت عاشقان راز
ميری نگاہ مايہ آشوب امتياز
کعبے ميں ، بت کدے ميں ہے يکساں تری ضيا
ميں امتياز دير و حرم ميں پھنسا ہوا

ہے شان آہ کی ترے دود سياہ ميں
پوشيدہ کوئی دل ہے تری جلوہ گاہ ميں؟

جلتی ہے تو کہ برق تجلی سے دور ہے
بے درد تيرے سوز کو سمجھے کہ نور ہے
تو جل رہی ہے اور تجھے کچھ خبر نہيں
بينا ہے اور سوز دروں پر نظر نہيں
ميں جوش اضطراب سے سيماب وار بھی
آگاہ اضطراب دل بے قرار بھی

تھا يہ بھی کوئی ناز کسی بے نياز کا
احساس دے ديا مجھے اپنے گداز کا

يہ آگہی مری مجھے رکھتی ہے بے قرار
خوابيدہ اس شرر ميں ہيں آتش کدے ہزار
يہ امتياز رفعت و پستی اسی سے ہے
گل ميں مہک ، شراب ميں مستی اسی سے ہے

بستان و بلبل و گل و بو ہے يہ آگہی
اصل کشاکش من و تو ہے يہ آگہی

صبح ازل جو حسن ہوا دلستان عشق
آواز ‘کن’ ہوئی تپش آموز جان عشق
يہ حکم تھا کہ گلشن ‘کن’ کی بہار ديکھ
ايک آنکھ لے کے خواب پريشاں ہزار ديکھ
مجھ سے خبر نہ پوچھ حجاب وجود کی
شام فراق صبح تھی ميری نمود کی
وہ دن گئے کہ قيد سے ميں آشنا نہ تھا
زيب درخت طور مرا آشيانہ تھا
قيدی ہوں اور قفس کو چمن جانتا ہوں ميں
غربت کے غم کدے کو وطن جانتا ہوں ميں

ياد وطن فسردگی بے سبب بنی
شوق نظر کبھی ، کبھی ذوق طلب بنی

اے شمع! انتہائے فريب خيال ديکھ
مسجود ساکنان فلک کا مآل ديکھ
مضموں فراق کا ہوں ، ثريا نشاں ہوں ميں
آہنگ طبع ناظم کون و مکاں ہوں ميں
باندھا مجھے جو اس نے تو چاہی مری نمود
تحرير کر ديا سر ديوان ہست و بود
گوہر کو مشت خاک ميں رہنا پسند ہے
بندش اگرچہ سست ہے ، مضموں بلند ہے
چشم غلط نگر کا يہ سارا قصور ہے
عالم ظہور جلوہ ذوق شعور ہے
يہ سلسلہ زمان و مکاں کا ، کمند ہے
طوق گلوئے حسن تماشا پسند ہے
منزل کا اشتياق ہے ، گم کردہ راہ ہوں
اے شمع ! ميں اسير فريب نگاہ ہوں
صياد آپ ، حلقہ دام ستم بھی آپ
بام حرم بھی ، طائر بام حرم بھی آپ!
ميں حسن ہوں کہ عشق سراپا گداز ہوں
کھلتا نہيں کہ ناز ہوں ميں يا نياز ہوں

ہاں ، آشنائے لب ہو نہ راز کہن کہيں
پھر چھڑ نہ جائے قصہ دار و رسن کہيں

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)