Gul-e-Rangeen by Allama Iqbal

0
264
Allama Iqbal Poems

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

tu shanasa e kharash e aukda mushkil naheen
aey gul e rangin taire pahlu main shayad dil naheen
zeb e mahfil hey, shareek e shorish e mahfil naheen
yeh faraghat bazm e hasti main mujhay hasil naheen
is chaman main main sarapa souz o saz -e- aarzoo
Or tairi zendagani by gudaz e aarzoo
torh laina shakh say tujh ko maira aaeyn naheen
ye nazer gher az nagah e chasm e soorat bin naheen
ah! yeh dast e jafa ju aey gul e rangin naheen
kis tarha tujh ko yeh samjhaun kay men gulcheen naheen
kam mujhko didah e hikmat ke uljhairon say kiya
didah e bulbul say men karta hoon nazara taira
so zubanon per bhee khamoshee tuhjay manzoor hey
raaz voh keya hey taire seene main jo mastoor hey
mairi soorat tu bhee aik barg e riyaz e toor hey
main chaman say door hoon, tu bhee chaman say door hey
matmaen hey tu, preshan misal e boo rahta hoon mein
zakhmi e shamsheer e zouq justuju raihta hoon mein
ye preshaani mairi saman e jamiat na hu
ye jigar souzi chiragh e khana e hikmat na hu

natawani hee mairi sermaya e quwwat na hu
rashk e jam e jim maira aaeyna e herat na hu

ye talash e muttasil shama e jehan afroz hey
toseen e idrak e insan ko kharam aamuz hey

تُو شناسائے خراشِ عقدۂ مشکِل نہيں
اے گلِ رنگيں ترے پہلو ميں شايد دل نہيں
زيبِ محفل ہے ، شريکِ شورشِ محفل نہيں
يہ فراغت بزمِ ہستی ميں مجھے حاصل نہيں

اس چمن ميں ميں سراپا سوز و سازِ آرزو
اور تيری زندگانی بے گدازِ آرزو

توڑ لينا شاخ سے تجھ کو مرا آئيں نہيں
يہ نظر غير از نگاہِ چشمِ صورت بيں نہيں
آہ! يہ دستِ جفا جُو اے گلِ رنگيں نہيں
کس طرح تجھ کو يہ سمجھاؤں کہ ميں گلچيں نہيں

کام مجھ کو ديدۂ حکمت کے اُلجھيڑوں سے کيا
ديدۂ بلبل سے ميں کرتا ہوں نظّارہ ترا

سَو زبانوں پر بھی خاموشی تجھے منظور ہے
راز وہ کيا ہے ترے سينے ميں جو مستور ہے
ميری صورت تو بھی اک برگِ رياضِ ُطور ہے
مَيں چمن سے دور ہوں تُو بھی چمن سے دور ہے

مطمئن ہے تو ، پريشاں مثلِ بُو رہتا ہوں مَيں
زخمئ شمشيرِ ذوقِ جستجو رہتا ہوں مَيں

يہ پريشانی مری سامانِ جمعيّت نہ ہو
يہ جگر سوزی چراغِ خانۂ حِکمت نہ ہو
ناتوانی ہی مری سرمايۂ قوّت نہ ہو
رشکِ جامِ جم مرا آ ينۂ حيرت نہ ہو

يہ تلاشِ متّصل شمعِ جہاں افروز ہے

توسنِ ادراکِ انساں کو خرام آموز ہے

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)