Jo Utar Ke Zeena Shaam Mein Teri Chashm E Khush Mein Sama Gaye

0
59
amjad islam amjad

Jo Utar Ke Zeena e Sham Main Amjad Islam Amjad

 

jo utar ke ziina-e-sham se teri chashm-e-khush me sama gaye
wahii jalte bujhte se mahar-o-maah mere baam-o-dar ko saja gaye

ye ajeeb khail he ishq ka me ne aap dekha ye mojza
wo jo lafz mere gumaan me the wo teri zabaa par aa gaye

wo jo geet tum ne suna nahi meri umar bhar ka riyaz tha
mere dard ki thi daastaa jse tum hansi me ura gaye

wo charaag-e-jaa kabhi jis ki lau na kisi hawaa se nigoon hui
teri bewafai ke waswasai use chupke chupke bujha gaye

wo tha chand sham-e-wisal ka ke tha roop tere jamaal ka
meri rooh se meri aankh tak kisi roshni me naha gaye

ye jo bandgaan-e-niyaaz he ye tamaam he wo lash_kari
jinhen zindagii ne aman na di to tere huzoor me aa gaye

teri berukhi ke dayaar me mai hawa ke saath hawa hua
tere aaine ki talaash me mere khwaab chehraa ganwa gaye

tere waswason ke fishar me tera sharar-e-rang ujar gaya
meri khuwaahisho ke gubaar me mere maah-o-saal-e-wafaa gaye

wo ajeeb phool se lafz the tere honth jin se mehak uthe
mere dasht-e-khuwab me door tak koi bagh jaise lagaa gaye

meri umar se na simat sake mere dil me itne sawal the
tere paas jitne jawab the teri ik nigaah me aa gaye

 

Jo Utar Ke Zeena Shaam Ghazal in Urdu Font:

جو اتر کہ زینۂ شام سے تیری چشم خوش میں سما گۓ
وہیں جلتے بجھتے سے مہر و ماہ میرے بام و در کو سجا گۓ
یہ عجیب کھیل ہے عشق کا میں نےآپ دیکھا یہ معجزہ
وہ جو لفظ میرے گماں میں تھے وہ تیری زباں پر آ گۓ
وہ جو گیت تم نے سنا نہیں وہ میری عمر بھر کاریاض تھا
میرے درد کی تھی داستاں جسے تم ہنسی میں اڑا گۓ
وہ چراغ جاں کبھی جس کی لونہ کسی ہوا سے نگوں ہوئ
تیری بے وفائ کے وسوسے اسے چپکے چپکے بجھا گۓ
وہ تھا چاند شام وصال کا کہ تھا روپ تیرے جمال کا
میری روح سے میری آنکھ تک کسی روشنی میں نہا گئ
یہ جو بندگان نیاز ہے یہ تمام ہے وہ لشکری
جنہیں زندگی نے اماں نہ دی تو تیرے حضور میں آ گۓ
تیری بے رخی کے دیار میں میں ہوا کے ساتھ ہوا ہوا
تیرے آئنے کی تلاش میں میرے خواب چہرہ گنوا گۓ
تیرے وسوسوں کے فشار میں تیرا شرر رنگ اجاڑ گۓ
میری خواہشوں کے غبار میں میرےماہ و سال وفا گۓ
وہ عجیب پھول سے لفظ تھے تیرے جن سےمہک اٹھے
میرے دشت خواب میں دور تک کوئ باغ جیسے لگا گۓ
میری عمر سے نہ سمٹ سکے میرے دل میں اتنے سوال تھے
تیرے پاس جتنے جواب تھے تیری اک نگاہ میں آ گۓ

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)