Khud Apne Liye Baith Ke Sochenge Kisi Din

0
71
amjad islam amjad

Khud Apne Liye – Amjad Islam Amjad

 
 

Khud apne liye baith ke sochenge kisi din
Yoon hai ke tujhe bhool ke dekheinge kisi din

Bhatke hue phirte hai kai lafz jo dil me
Duniya ne diya waqt to likheinge kisii din

Hil jaayeinge ik baar to arsho ke dar-o-baam
Ye Khaak_nashi log jo boleinge kisi din

Aapas ki kisi baat ka milta hi nahi waqt
Har baar ye kahte hai ke baitheinge kisi din

Ai jaan teri yaad ke be-naam parinde
Shaakho pe mere dard ki utareinge kisi din

Jaati hai kisi jheel ki gahraai kaha tak
Aankho me teri Doob ke dekheinge kisi din

Khushboo se bhari shaam me jugnoo ke qalam se
Ik nazm tere waaste likkheinge kisi din

Soyeinge teri aankh ki Khilwat me kisi raat
Saaye me teri zulf ke jaageinge kisi din

Khushboo ki tarah ,asl-e-sabaa Khaak numaa se
Galiyo se tere shahar ki guzareinge kisi din

‘Amjad’ hai yahi ab ke kafan baandh ke sar se
Us shahar-e-sitam_gaar me jaayeinge kisi din

 

Khud Apne Liye Ghazal in Urdu Font:

[pukhto_lek]

خود اپنے لیۓ بیٹھ کہ سوچیں گے کسی دن
یوں ہے کہ تجھے بھول کہ دیکھیں گے کسی دن
بھٹکے ہوۓ پھرتے ہیں کئ لفظ جو دل میں
دنیا نے دیا وقت تو لکھیں گے کسی دن
ہل جائں گے اک بار تو عرشوں کے در و بام
یہ خاک نشیں لوگ جو بولیں گے کسی دن
آپس کی کسی بات کا ملتا ہی نہیں وقت
ہر بار یہ کہتے ہیں کہ بیٹھیں گے کسی دن
اے جان تیری یاد کے بے نام پرندے
شاخوں پہ میرے درد کی اتاریں گے کسی دن
جاتی ہیں کسی جھیل کی گہرائ کہاں تک
آنکھوں میں تیری ڈوب کہ دیکھیں گے کسی دن
خوشبو سے بھری شام میں جگنو کے قلم سے
اک نظم تیرے واسطے لکھیں گے کسی دن
سویئں گے تیری آنکھ کی خلوت میں کسی رات
ساۓ میں تیری زلف کے جاگیں گے کسی دن
خوشبو کی طرح اصل صبا خاک نما سے
گلیوں سے تیرے شہر کی گزریں گے کسی دن
امجد ہے یہی اب کہ کفن باندھ کہ سر سے
اس شہر ستم میں جایئں گے کسی دن

[/pukhto_lek]

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)