Un Jheel Si Gehri Aankhon Mein

0
21
amjad islam amjad

Un Jheel Si Gehri Aankhon Mein by Amjad Islam Amjad

 

 

Un Jheel Si Gahri Aankho Me
Ik Shaam Kabhi Abaad To Ho
Us Jheel Kinare Pal Do Pal
Ik Khuwab Ka Neela Phool Khile
Wo Phool Baha Dai Lehron Me
Ik Roz Kabhi Hum
Shaam Dhale

Phir Us Phool Ke
Bahte Rango Me
Jis Waqt Larazta Chaand Chale
Us Waqt Kahi Un Aankhon Me
Us Basre Pal Ki Yaad To Ho
Un Jheel Si Gahri Aankhon Me
Ik Shaam
Kahi Aabaad To Ho
Phir Chahe Umar-E-Samandar Ki
Har Moj
Pareshan Ho Jaae
Phir Chahe Ankh Ke Dareecho Se
Har Khuwab
Gureza Ho Jaae
Phir Chahe Phool Ke Chahre Ka
Har Dard
Numaaya Ho Jaae
Us Jheel Kinare Pal Do Pal Wo Roop Nagar
Ijaad To Ho
Din Raat Ke Is Aaine Se Wo Aks
Kabhi Aazaad To Ho
Un Jheel Si Gehri Aankhon Me
Ik Shaam
Kabhi Aabaad To Ho

Amjad Islam Amjad

 

Ghazal In Urdu Written:

ان جھیل سی گہری آنکھوں میں اک شام کہیں آباد تو ہو

اس جھیل کنارے پل دو پل
اک خواب کا نیلا پھول کھلے
وہ پھول بہا دیں لہروں میں
اک روز کبھی ہم شام ڈھلے
اس پھول کے بہتے رنگوں میں
جس وقت لرزتا چاند چلے
اس وقت کہیں ان آنکھوں میں اس بسرے پل کی یاد تو ہو

ان جھیل سی گہری آنکھوں میں اک شام کہیں آباد تو ہو

پھر چاھے عمر سمندر کی
ہر موج پریشان ہو جائے
پھر چاھے آنکھ دریچے سے
ہر خواب گریزاں ہو جائے
پھر چاھے پھول کے چہرے کا
ہر درد نمایاں ہو جائے
اس جھیل کنارے پل دو پل وہ روپ نگر ایجاد تو ہو
دن رات کے اس آئینے سے وہ عکس کبھی آذاد تو ہو
ان جھیل سی گہری آنکھوں میں اک شام کہیں آباد تو ہو . . . !

امجد اسلام امجد

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)