Ab Aur Jeene Ki Soorat Nazar Nahi Aati

0
103
parveen shakir poetry

 

[adsense_inserter id=”3100″]

 

AB AUR JEENEY KI SURAT NAZAR NAHIN ATI,
KISI TARAH BHI ACHI KHABAR NAZAR NAHIN ATI,
USSI KE AAS MAIN HAI DIL KA HUJRAA TAREEK,
WOH ROSHNI JO KABHI MERE GHAR MEIN NAHIN ATI,
WOH MEHERBAAN HAI TO MEHRAAB-O-BAAM TAK NA RAHE,
YEH DHOOP KYON PAS-EY DAR O DEEWAR NAHIN ATI,
HAYAAT MEIN AB KOI AESA MORR NAHIN,
KE JIS KE BAAD TERI RAHGUZAR NAZAR NAHIN ATI,
QABOOLIYAT KI HAI GHARRI TO US KO MAANG HI LOON,
KE YEH GHARRI KABHI BAAR-E-DAGAR NAHIN ATI,
SARAAYE KHAANA DUNYIYAA MAIN SHAAM HOTI HAI,
MUSAAFIRON KO NAVEED-E-SAFAR NAZAR NAHIN ATI..

Ab Aur Jeene Ki Soorat Nazar Nahi Aati Parveen Shakir In Urdu:

اب اور جینے کی صورت نظر نہیں آتی
کسی طرف سے بھی اچھی خبر نہیں آتی

اسی کی آس میں ہے دل کا حجرہ تاریک
وہ روشنی جو کبھی میرے گھر نہیں آتی

وہ مہربان ہے تو مہراب بام تک
وہ دھوپ کیوں واپس دیوار و در نہیں آتی

راہ حیات میں اب کوئی ایسا موڑ نہیں
کے جس کے بعد تیری رہگزر نہیں آتی

قبولیت کی ہے سات تو اسکو مانگ ہے لے
کے یہ گھڑی کبھی بار بار نہیں آتی

سر خانہ دنیا میں شام ہوتی ہے
مسافروں کو نوید سفر نہیں آتی

 

[adsense_inserter id=”3414″]

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

:bye: 
:good: 
:negative: 
:scratch: 
:wacko: 
:yahoo: 
B-) 
:heart: 
:rose: 
:-) 
:whistle: 
:yes: 
:cry: 
:mail: 
:-( 
:unsure: 
;-)